بہار میں ایم آئی ایم کی جیت پر گری راج نے سادھا نشانہ ، کہا : اویسی کی جناح والی سوچ ، کانگریس نے کہی یہ بات

اویسی کی پارٹی کی جیت سیمانچل کی سیاست میں بڑی تبدیلی کا اشارہ ہے ۔ اب اس کو جہاں بی جے پی بہار میں سماجی ہم آہنگی کیلئے خطرہ بتارہی ہے تو وہیں جے ڈی یو بہار میں سیکولر سیاست کیلئے اس کو اچھا نہیں مان رہی ہیں ۔

Oct 25, 2019 06:33 PM IST | Updated on: Oct 25, 2019 06:33 PM IST
بہار میں ایم آئی ایم کی جیت پر گری راج نے سادھا نشانہ ، کہا : اویسی کی جناح والی سوچ ، کانگریس نے کہی یہ بات

بہار میں ایم آئی ایم کی جیت پر گری راج نے سادھا نشانہ ، کہا : اویسی کی جناح والی سوچ

بہار میں کوئی ایک سیٹ کانگریس کیلئے سب سے زیادہ محفوظ مانی جاتی تھی ، تو وہ کشن گنج کی سیٹ تھی ۔ یہی نہیں سیکولر ہونے کا دعوی کرنے والی کوئی بھی سیاسی پارٹی اپنے لئے اس سیٹ کو سب سے محفوظ مانتی تھی ، لیکن بہار میں ہوئے ضمنی انتخابات کے نتیجہ نے سبھی سیاسی جوڑ توڑ کو ختم کردیا اور اسد الدین اویسی کی پارٹی آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین نے اس مرتبہ شاندار جیت حاصل کی ۔ اس انتخابی نتیجہ کی سب سے خاص بات یہ رہی کہ اس سیٹ پر آر جے ڈی اور کانگریس ایک ساتھ تھی تو بی جے پی اور جے ڈی یو نے بھی مشترکہ طور پر زور آزمائی کی تھی ، اس کے باوجود اکیلے ایم آئی ایم نے دونوں اتحاد کو جھٹکا دیدیا ۔

ظاہر ہے کہ یہ سیمانچل کی سیاست میں بڑی تبدیلی کا اشارہ ہے ۔ اب اس کو جہاں بی جے پی بہار میں سماجی ہم آہنگی کیلئے خطرہ بتارہی ہے تو وہیں جے ڈی یو بہار میں سیکولر سیاست کیلئے اس کو اچھا نہیں مان رہی ہیں ۔

بی جے پی لیڈر گری راج سنگھ نے ٹویٹ کرکے اس پر اپنا رد عمل ظاہر کیا ۔ انہوں نے لکھا کہ بہار کے ضمنی الیکشن میں سب سے خطرناک نتیجہ کشن گنج سے آیا ہے ۔ اویسی کی پارٹی ایم آئی ایم جناح کی سوچ والی ہے ، یہ وندے ماترم سے نفرت کرتی ہے ، اس سے بہار کی ہم آہنگی کو خطرہ ہے ، باشندگان بہار کو اپنے مستقبل کے بارے میں سوچنا چاہئے ۔

ادھر کانگریس نے اس کو بی جے پی اور اویسی کی ملی بھگت قرار دیا ہے ۔ پارٹی کے ترجمان پریم چندر مشر نے کہا کہ گری راج اور اویسی دونوں میں مفاہمت ہے ۔ دونوں ہی زہریلی تقریر کرتے ہیں ۔ وہیں جے ڈی یو کے چیف سکریٹری کے سی تیاگی نے کشن گنج میں ایم آئی ایم کی جیت پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ اویسی کی پارٹی انتہا پسندانہ نظریات کیلئے جانی جاتی ہے ، اس کا جیتنا سیکولر پارٹیوں کی غلط سیاست کا نتیجہ ہے اور بہار کی سیکولر سیاست کیلئے یہ صحیح نہیں ہے ۔

Loading...