உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جہانگیر پوری میں دوفرقوں میں Violence، پتھراو میں 6 پولیس اہلکار زخمی، کئی دفعات میں کیس درج

    جہانگیر پوری میں دوفرقوں میں کشیدگی، پتھراو میں 6 پولیس اہلکار زخمی

    جہانگیر پوری میں دوفرقوں میں کشیدگی، پتھراو میں 6 پولیس اہلکار زخمی

    Jahangirpuri Hanuman Jayanti: راجدھانی دہلی کے جہانگیر پوری علاقے میں دو گروپوں کے درمیان ہفتہ کے روز شام ہوتے ہوتے جم کر ہنگامہ ہوا۔ خبر کے مطابق، ہنومان جنموتسو کے دوران شوبھا یاترا کے دوران کئے گئے پتھراو میں پولیس اہلکاروں سمیت کئی لوگ زخمی ہوگئے۔ زخمیوں کو علاج کے لئے جہانگیر پوری کے بابو جگجیون رام اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔

    • Share this:
      آنند تیواری، انل اتری اور امت پانڈے کی رپورٹ

      نئی دہلی: راجدھانی دہلی کے جہانگیر پوری علاقے میں دو گروپوں کے درمیان ہفتہ کے روز شام ہوتے ہوتے جم کر ہنگامہ ہوا۔ خبر کے مطابق، ہنومان جنموتسو کے دوران شوبھا یاترا کے دوران کئے گئے پتھراو میں پولیس اہلکاروں سمیت کئی لوگ زخمی ہوگئے۔ زخمیوں کو علاج کے لئے جہانگیر پوری کے بابو جگجیون رام اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔ وہیں، پولیس کا کہنا ہے کہ علاقے میں صورتحال فی الحال کنٹرول میں ہے۔

      دہلی پولیس میں رابطہ افسر کا کام دیکھ رہے ڈی سی پی انویس رائے کا کہنا ہے کہ جہانگیر پوری میں شوبھا یاترا کے دوران ہنگامہ ہوا ہے۔ انہوں نے کہا، ’ہندومان جینتی شوبھا یاترا میں چل رہے لوگوں کے اوپر پتھر بازی اور ہلکی پھلکی آگ زنی کی بات سامنے آئی ہے۔ ہمارے سبھی اعلیٰ افسران موقع پر موجود ہیں۔ صورتحال کنٹرول میں ہے اور معاملے کی سنجیدگی کو دیکھتے ہوئے علاقے میں اضافی اہلکاروں کی تعیناتی کی گئی ہے‘۔

      انہوں نے بتایا کہ پتھراو کے دوران جن پولیس اہلکاروں کو چوٹ آئی ہے، ان کی پہچان کی جا رہی ہے۔ آگ زنی کے حادثات کو دیکھتے ہوئے دہلی فائر سروس کی بھی دو گاڑیاں موقع پر پہنچی تھیں۔ حالانکہ، دہلی فائر سروس کے ڈائریکٹر اتل گرگ کا کہنا ہے کہ حادثات کافی کم تھی، اس لئے وہاں پر آپریشن ختم کردیا گیا ہے اورگاڑیوں کو واپس بلا لیا گیا ہے۔

      دیپیندر پاٹھک نے کہا، ’ہماری اولین ترجیح حالات کو کنٹرول کرنا ہے اور وہ ہم کر رہے ہیں۔ پولیس اہلکار تعینات ہیں اور ساری چیزیں کنٹرول میں ہیں‘۔ انہوں نے بتایا کہ اس حادثہ کے متعلق دہلی پولیس تعزیرات ہند (آئی پی سی) کی کئی دفعات میں مقدمہ درج کر رہی ہے اور شرپسندوں کی تلاش میں تقریباً 10 ٹیموں کو لگایا گیا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      چار ریاستوں کی 5 سیٹوں پر ہوئے ضمنی الیکشن میں بی جے پی کو جھٹکا، شتروگھن سنہا جیتے 

      جہانگیر ہوری میں صورتحال کنٹرول میں

      جائے حادثہ پر موجود اسپیشل سی پی لا اینڈ آرڈر دیپیندر پاٹھک نے کہا، ’ہماری اولین ترجیح حالات کو کنٹرول کرنا اور وہ ہم کر رہے ہیں۔ پولیس اہلکار ہے اور ساری چیزیں کنٹرول میں ہیں‘۔ انہوں نے بتایا کہ اس حادثہ کے متعلق دہلی پولیس آئی پی سی کی کئی دفعات میں مقدمہ درج کر رہی ہے اور شرپسندوں کی تلاش میں تقریباً 10 ٹیموں کو لگایا گیا ہے۔

      6 پولیس اہلکار زخمی، ایک سب انسپکٹر کو لگی گولی

      دہلی پولیس کے ذرائع کے حوالے سے خبر ہے کہ پتھراو کے حادثہ میں 6 پولیس اہلکار زخمی ہوئے ہیں اور ان میں سے ایک سب انسپکٹر کے ہاتھ میں گولی بھی لگی ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ کسی باہری شخص نے گولی ماری ہے اور پولیس کی طرف سے کوئی فائرنگ نہیں کی گئی۔ حادثہ کے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے ذرائع نے کہا، حالات کو قابو میں کرنے کے لئے پولیس کی طرف سے آنسو گیس کے گولے چھوڑے گئے۔ شرارتی عناصر میں شامل ایک باہری آدمی زخمی ہوا ہے۔ ایک بائیک جلائی گئی ہے اور کچھ گاڑیوں کے شیشے فسادیوں نے توڑے ہیں‘۔ ذرائع نے بتایا کہ تقریباً 40 سے 50 پولیس والے شوبھا یاترا کے ساتھ موجود تھے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: