مشن پانی: یہاں ایسے جمع کرتے ہیں پانی، مانسون کی بارش سے سال بھر بجھتی ہے پیاس

یہاں گھروں میں بارش کا پانی اکھٹا کرنے کے لئے ٹانکے( حوض) بنائے جاتے ہیں جس میں بارش کا پانی اکھٹا کیا جاتا ہے۔

Jul 04, 2019 06:55 PM IST | Updated on: Jul 04, 2019 06:55 PM IST
مشن پانی: یہاں ایسے جمع کرتے ہیں پانی، مانسون کی بارش سے سال بھر بجھتی ہے پیاس

علامتی تصویر

راجستھان میں پانی کی قلت اور پینے کے پانی کے بحران کی کہانی سے کوئی انجان نہیں ہے۔ یہاں کے لوگوں نے قحط اور خشک سالی کا ایک طویل دور دیکھا ہے اور یہی وجہ ہے کہ پانی کی اہمیت کیا ہوتی ہے، مردھرا کے لوگوں سے زیادہ بھلا کون جان سکتا ہے۔ تبھی تو یہاں مانسون کی بارش کے پانی کو ایسے جمع کیا جاتا ہے کہ سال بھر پیاس اسی سے بجھائی جا سکے۔ یہاں گھروں میں بارش کا پانی اکھٹا کرنے کے لئے ٹانکے( حوض) بنائے جاتے ہیں جس میں بارش کا پانی اکھٹا کیا جاتا ہے۔ کئی علاقوں میں تو یہی ٹانکے پینے کے لائق پانی کا واحد ذریعہ ہوتے ہیں اور کنبوں کی سال بھر پیاس بجھاتے ہیں۔

یہاں ہم بات کر رہے ہیں جھنجھنو ضلع کے السیسر علاقہ کی۔ اس پورے علاقہ میں کھارا پانی ہونے کی وجہ سے وہ پینے کے لائق نہیں ہے۔ اس لئے اس پورے علاقہ میں پینے کے پانی کے لئے برسات کے پانی کا استعمال کیا جاتا ہے۔ برسات کا پانی بچانے کے لئے پورے علاقہ میں یہ کہیں کہ گاؤں کے ہر ایک گھر میں ایک ایک ٹانکا بنا ہوا ہے۔ ان ٹانکوں میں برسات کا پانی جمع کیا جاتا ہے اور اس کو ہر سال پینے کے پانی کی شکل میں استعمال کیا جاتا ہے۔

Loading...

یہ بھی کہا جا سکتا ہے کہ علاقے میں پینے کے لئے پانی کی کمی کی وجہ سے لوگ بارش پر مکمل طور پر منحصر ہیں۔ لہذا ہر گھر میں برسوں سے پانی بچانا اور بارش کا پانی جمع کرنا ان کی عادت بن گئی ہے۔ لوگ اپنے دادا۔ پردادا کی باتوں کو یاد کر کے بتاتے ہیں کہ کس طرح سے نسلوں سے ان کے پانی بچانے اور بارش کا پانی جمع کرنے کا سلسلہ جاری ہے۔

گھر میں بارش کا پانی جمع کرنے کے لئے بنا حوض گھر میں بارش کا پانی جمع کرنے کے لئے بنا حوض

گووند پورا گاؤں کے سابق سرپنچ یاسین خان چائل کہتے ہیں کہ علاقہ میں 100 سال سے زائد مدت سے ہی لوگ برسات کا پانی ہی اکھٹا کرتے آئے ہیں۔ اور اس کا استعمال پینے کے لئے کیا جاتا ہے۔ ہم نے پوری زندگی برسات کے پانی کو ہی پیا ہے۔

Loading...