ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ہاتھرس سانحہ پر سیاسی گھمسان جاری، آر ایل ڈی - سماجوادی کارکنان پر پولیس کا لاٹھی چارج

اجتماعی آبروریزی دلت متاثرہ فیملی سے ملنے جا رہے آر ایل ڈی کے نائب صدر جینت چودھری اور سماجوادی پارٹی کےکارکنان پر اتوار کو پولیس نے جم کر لاٹھیاں چلائیں۔ دوسری جانب رینکا گاندھی نے یوپی کی یوگی حکومت پر نشانہ سادھا۔

  • Share this:
ہاتھرس سانحہ پر سیاسی گھمسان جاری،  آر ایل ڈی - سماجوادی کارکنان پر پولیس کا لاٹھی چارج
ہاتھرس سانحہ پر سیاسی گھمسان جاری، آر ایل ڈی - سماجوادی کارکنان پر پولیس کا لاٹھی چارج

لکھنو: ہاتھرس اجتماعی آبروریزی دلت متاثرہ فیملی سے ملنے جا رہے آر ایل ڈی کے نائب صدر جینت چودھری اور سماجوادی پارٹی کےکارکنان پر اتوار کو پولیس نے جم کر لاٹھیاں چلائیں۔ دراصل، ضلع انتظامیہ نے یہ کہا تھا کہ کسی کو بھی متاثرہ کےگھرجاکر احتجاج کرنےکی اجازت نہیں ہے۔ کیونکہ کورونا وبا کی وجہ سے دفعہ 144 نافذ ہے۔ ساتھ ہی لا اینڈ آرڈر کو دیکھتے ہوئے بھی یہ فیصلہ لیا ہے، لیکن سیاسی لیڈروں کو اجازت لینے اور محدود تعداد کے ساتھ متاثرہ فیملی سے ملنے کی اجازت دی جائے گی۔ اسی ضمن میں آج جینت چودھری متاثرہ فیملی سے ملنے جا رہے تھے۔


اس سے قبل راشٹریہ لوک دل (آرایل ڈی) کے نائب صدر جینت چودھری متاثرہ خاندان سے ملاقات کرنے کے لئے روانہ ہوئے۔ جینت چودھری نے حکومت کے کام کرنے کے طریقہ کار پر سوال اٹھائے۔ یمنا ایکسپریس وے رایا کٹ پر کارکنان سے انہوں نے ملاقات کی۔ وہیں دوسری طرف ہاتھرس میں اجتماعی آبروریزی متارہ کے گاوں میں سیاسی جماعتوں کا تانتا لگا ہوا ہے۔ آج متاثرہ کے گاوں کے باہر سماجوادی پارٹی کے کارکنان نے نعرے بازی کی۔ اس کے بعد پولیس نے جم کر ان کے اوپر لاٹھیاں برسائیں۔ وہیں  ڈی ایم پروین کمار پر اب تک کارروائی نہ ہونے سے بی ایس پی سربراہ اور سابق وزیر اعلیٰ مایاوتی نے بھی سوال کھڑے کئے ہیں۔




دوسری جانب کانگریس کی قومی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے یوپی کی یوگی حکومت پر نشانہ سادھا۔ متاثرہ فیملی سے ملاقات کے دوسرے دن اتوار کو پرینکا گاندھی نے ٹوئٹ کرکے کہا، ہاتھرس کی متاثرہ فیملی کے مطابق سب سے برا برتاو ڈی ایم کا تھا۔ انہیں کون بچا رہا ہے؟ انہیں فوراً برخاست کرکے پورے معاملے میں ان کے رول کی جانچ ہو’۔ فیملی عدالتی جانچ کا مطالبہ کر رہا ہے تب کیوں سی بی آئی جانچ کا شور کرکے ایس آئی ٹی کی جانچ جاری ہے۔ کانگریس کی قومی جنرل سکریٹری نے کہا کہ یوپی حکومت اگر ذرا بھی نیند سے بیدار ہوئی ہے تو اسےفیملی کی بات سننی چاہئے۔



حادثہ کے بعد متاثرہ فیملی سے ملاقات کرنے پہنچے سماجود پارٹی کے نائب صدر نظام ملک کے ذریعہ ملزمین کے سر کاٹنے پر ایک کروڑ کی رقم دینے کی بات کو لے کر اعلیٰ طبقے میں مخالفت ہے۔ دراصل، مسلسل ملزمین کے خلاف ہوئی کارروائی کو لے کر اعلیٰ طبقے کے لوگوں کا احتجاجی مظاہرہ جاری ہے۔ متاثرہ خاندان پر لگائے گئے سنگین الزام کے بعد میڈیا کےخلاف بھی اعلیٰ طبقے میں ناراضگی دیکھی گئی۔ گاوں میں پولیس کا سخت پہرہ ہے۔ اب ہاتھرس سانحہ کی جانچ سی بی آئی کے حوالے کرنے کی تیاری ہے۔ یوگی حکومت نے مرکزی حکومت سے اس بات کی سفارش کی ہے، لیکن متاثرہ فیملی سی بی آئی جانچ کی سفارش سے مطمئن نہیں نظر آئی۔

ہاتھرس اجتماعی آبروریزی (Hathras Gang Rape) کی لڑائی سی بی آئی تک آگئی، لیکن انصاف کی جنگ ابھی جاری ہے۔ اتوار کو ہاتھرس کے بسنت باغ واقع سابق رکن اسمبلی راجویر پہلوان کی رہائش گاہ پر پہلے سے طے پنچایت شروع ہوئی۔ پنچایت میں کئی لوگ جمع ہوئے۔ سابق رکن اسمبلی کی رہائش گاہ پر شروع ہوئی اس پنچایت میں ہاتھرس معاملے کو لے کر کئی اہم باتیں رکھی گئیں۔ پنچایت میں علاقے کے اعلی ذات (Swarn Samaj) کے لوگوں نے پولیس کے ذریعہ گرفتار کئے گئے لوگوں کو بے قصور بتایا ہے۔ وہیں وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کے سی بی آئی جانچ کی سفارش والے فیصلے کا اعلیٰ طبقے کے لوگوں نے استقبال بھی کیا۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Oct 04, 2020 04:37 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading