ایودھیا معاملہ: سپریم کورٹ میں مسلم فریق نے کہا۔ مان لیتے ہیں بھگوان رام کا جنم وہاں ہوا، لیکن...۔

راجیو دھون نے کہا کہ تنازعہ تو رام کی پیدائش کی جگہ کے سلسلے میں ہے کہ وہ کہاں ہے؟ انہوں نے کہا کہ پوری متنازعہ زمین جائے پیدائش نہیں ہوسکتی۔ جیسا کہ ہندو فریق دعوی کرتے ہیں۔

Sep 23, 2019 04:59 PM IST | Updated on: Sep 23, 2019 05:17 PM IST
ایودھیا معاملہ: سپریم کورٹ میں مسلم فریق نے کہا۔ مان لیتے ہیں بھگوان رام کا جنم وہاں ہوا، لیکن...۔

فائل فوٹو

نئی دہلی۔ سپریم کورٹ میں پیر کو ایودھیا تنازعہ کے 29ویں دن کی سماعت کے دوران مسلم فریق نے کہا ہے کہ تنازعہ تو رام کی پیدائش کی جگہ کے سلسلے میں ہے کہ وہ ہے کہاں۔ مسلم فریق کی جانب سے پیش راجیو دھون نے دلیل دی کہ ’’ہم رام کی عزت کرتے ہیں، پیدائش کے مقام کی بھی عزت کرتے ہیں۔ اس ملک میں اگر رام اور اللہ کی عزت نہیں ہوگی تو ملک ختم ہوجائے گا۔

راجیو دھون نے کہا کہ تنازعہ تو رام کی پیدائش کی جگہ کے سلسلے میں ہے کہ وہ کہاں ہے؟ انہوں نے کہا کہ پوری متنازعہ زمین جائے پیدائش نہیں ہوسکتی۔ جیسا کہ ہندو فریق دعوی کرتے ہیں۔ کچھ تو متعینہ مقام ہوگا۔ پورا علاقہ جائے پیدائش نہیں ہوسکتا ہے۔

Loading...

دھون نے ہندو فریق کے ذریعہ پریکرما کے سلسلے میں گواہوں کے ذریعہ دی گئیں گواہیاں اس کے حق میں رکھیں۔ انہوں نے ہندو فریق کے گواہوں کی گواہی پڑھتے ہوئے بتایا کہ پریکرما کے بارے میں سبھی گواہوں نے مختلف بات کہی ہے۔ کچھ نے کہا ہےکہ رام چبوترے پریکرما ہوتی تھی، کچھ نے کہا کہ جنوب میں پریکرما ہوتی تھی۔

Loading...