உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    hijab row: کرناٹک میں طالبات نے حجاب اتارنے سے کیا انکار تو کالج نے کردیا چھٹی کا اعلان

    کرناٹک میں طالبات حجاب اتارنے کو تیار نہیں ہیں۔

    کرناٹک میں طالبات حجاب اتارنے کو تیار نہیں ہیں۔

    Hijab Controversy: کرناٹک (Karnataka) ریاست کے کئی علاقوں میں حجاب (Hijab Controversy) سے متعلق کشیدگی میں اضافہ ہوگیا ہے۔ ایسے وقت، ہبلی کے ایس جے ایم وی وومین کالج میں حجاب کو لے کر تنازعہ بڑھا تو کالج انتظامیہ نے کالج ہی بند کرنے کا فیصلہ لے لیا ہے۔

    • Share this:
      بنگلورو: کرناٹک (Karnataka) ریاست کے کئی علاقوں میں حجاب (hijab controversy) کو لے کرکشیدگی میں اضافہ ہوگیا ہے۔ ایسے وقت میں، ہبلی کے ایس جے ایم وی ویمن کالج میں حجاب کو لے کر تنازعہ بڑھا تو مینجمنٹ نے کالج ہی بند کرنے کا فیصلہ لے لیا ہے۔ ریاست میں ہائی کورٹ کی طرف سے اسکولوں اور کالجوں میں ڈریس کوڈ پر عمل کرنے کا عبوری حکم حکم دیا گیا ہے، لیکن کئی مقامات پر طالبات حجاب اور برقع پہن کر پہنچیں۔ لڑکیاں حجاب نہیں ہٹانے پر ڈٹی ہوئی ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ ہر حال میں حجاب پہنیں گی۔

      خبروں کے مطابق، ہبلی کے ایس جے ایم وی وویمن کالج میں بھی مسلم طالبات، حجاب اور برقع پہن کر پہنچی تھیں، جب کالج انتظامیہ نے انہیں ہائی کورٹ کے حکم کے بارے میں بتایا۔ اس کے بعد بھی لڑکیوں نے حجاب اتارنے سے واضح طور پر انکار کردیا۔ انتظامیہ نے کافی دیر تک طالبات کو سمجھانے کی کوشش کی اور جب پایا کہ طالبات ماننے کے لئے راضی نہیں ہیں تو پھر کالج انتظامیہ نے کالج میں چھٹی کا اعلان کردیا۔ انہوں نے کہا کہ کالج میں داخلہ تو ضوابط کے مطابق ہی ہوگا۔ دوسری جانب طالبات کا کہنا ہے کہ ہم برقع تو ہٹا سکتے ہیں، لیکن حجاب نہیں ہٹائیں گی۔ طالبات کی ضد پر کالج انتظامیہ نے کالج میں چھٹی کا اعلان کردیا۔

      کالج کے انتظامی افسر لنگ راج انگاڑی نے کہا کہ سبھی طالبات کو اسکولوں اور کالجوں میں ڈریس کوڈ پر عمل کرنا ہوگا، اس کے لئے ہائی کورٹ نے حکم دیا ہے اور اس پر مکمل طور پر عمل کیا جانا ہے۔ اس درمیان کرناٹک ہائی کورٹ میں حجاب تنازعہ پر پھر سے سماعت ہونے جا رہی ہے۔ اس معاملے میں منگل کو طالبات کے وکیل نے کہا تھا کہ حجاب اسلام کا حصہ ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: