ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

18 سال کے لڑکے سے شادی کرنے جارہی تھی 24 سالہ لڑکی ، مگر آدھی رات کو ہوا کچھ ایسا کہ روکنی پڑگئی شادی

چائلڈ لائن ٹیم نے لڑکی کے والدین سے عمر کا سرٹیفکیٹ مانگا ، جس میں لڑکے کی عمر 18 سال پائی گئی ، جس کے بعد اہل خانہ کو چائلڈ میرج ایکٹ سے واقف کرایا گیا ۔

  • UNI
  • Last Updated: Feb 06, 2020 06:04 PM IST
  • Share this:
18 سال کے لڑکے سے شادی کرنے جارہی تھی 24 سالہ لڑکی ، مگر آدھی رات کو ہوا کچھ ایسا کہ روکنی پڑگئی شادی
علامتی تصویر

ہماچل پردیش کے ضلع سرمور میں نابالغ لڑکے کی شادی کروانے کی کوشش کی گئی ۔ چائلڈ ہیلپ لائن کی چوکسی کی وجہ سے عین وقت پر شادی روک دی گئی ۔ چائلڈ ہیلپ لائن نے جب اہل خانہ سے سوال و جواب کیا تو انہوں نے نابالغ کی شادی پر روک ہونے سے ناواقفیت کا اظہار کیا ۔ فی الحال رینوجی پولیس تھانہ میں شکایت درج کرادی گئی ہے ۔


اطلاعات کے مطابق سرمور ضلع میں یہ واقعہ پیش آیا ہے ۔ کوٹی دھیمان پنچایت میں گزشتہ رات 1098 کے ذریعہ چائلڈ لائن کو اطلاع ملی تھی  کہ پنچایت میں ایک نابالغ لڑکے کی شادی ہورہی ہے ۔ شکایت کی بنیاد پر آدھی رات کو ہی چائلڈ لائن کی ٹیم نے گھر پر دبش دی ۔


چائلڈ لائن کی ٹیم نے جائے واقعہ پر جاکر دیکھا تو لڑکا بارات لے کر تیار ہوچکا تھا ۔ چائلڈ لائن ٹیم نے لڑکی کے والدین سے عمر کا سرٹیفکیٹ مانگا ، جس میں لڑکے کی عمر 18 سال پائی گئی ، جس کے بعد اہل خانہ کو چائلڈ میرج ایکٹ سے واقف کرایا گیا ۔ ساتھ ہی اطلاع ملتے ہی ٹیم نے شری رینوکا جی تھانہ میں ڈی ڈی آر انٹری کروائی ۔


چائلڈ ہیلپ لائن کی ٹیم نے بتایا کہ شادی کیلئے لڑکے کی عمر 21 سال ہونی چاہئے تھی ۔ وہیں دلہن بنی لڑکی کی عمر 24 سال پائی گئی ، جو بالغ تھی ۔ نابالغ لڑکے کو چائلڈ ویلفیئر کمیٹی کے سامنے بھی پیش کیا گیا ۔ چائلڈ لائن کی ٹیم میں کاونسلر بنیتا ٹھاکر ، سندر اور رام لال شامل تھے ۔
First published: Feb 06, 2020 06:04 PM IST