مہاراشٹر: این سی پی کو دیئے وقت سے قبل کیوں نافذ کیا گیا صدرراج؟ وزارت داخلہ نے دیا یہ جواب

وزارت داخلہ نے صدرراج نافذ ہونے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ یہ اعلان آئین کے آرٹیکل 356 (1) کے تحت کیا گیا ہے۔ مہاراشٹر میں اب صدرراج نافذ ہوگا۔

Nov 12, 2019 08:16 PM IST | Updated on: Nov 12, 2019 08:22 PM IST
مہاراشٹر: این سی پی کو دیئے وقت سے قبل کیوں نافذ کیا گیا صدرراج؟ وزارت داخلہ نے دیا یہ جواب

مہاراشٹر میں صدر راج نافذ کرنے سے متعلق وزارت داخلہ نے دیا یہ جواب

نئی دہلی: تقریباً 15 روزسے زیادہ کا وقت گزرجانےکے بعد بھی جب مہاراشٹر میں حکومت کی تشکیل نہیں ہوپائی توگورنر بھگت سنگھ کوشیاری کی سفارش کے بعد منگل کو صدر راج کومنظوری مل گئی۔ وزارت داخلہ نے صدرراج نافذ ہونے کی تصدیق کرتے ہوئےکہا کہ یہ اعلان آئین کےآرٹیکل 356 (1) کے تحت کیا گیا ہے۔ مہاراشٹرمیں اب صدرراج نافذ ہوگا۔ یہ فیصلہ تب لیا گیا جب گورنربھگت سنگھ کوشیاری نے مرکزی حکومت کورپورٹ بھیجی کہ کوئی بھی پارٹی اوراتحاد ریاست میں حکومت بنانےکی پوزیشن میں نہیں ہے۔

وزارت داخلہ کےترجمان نے سی این این نیوز18 سے بات چیت میں کہا 'گورنرنےحکومت بنانےکی سبھی کوشش کی، لیکن کسی کوبھی کامیابی نہیں ملی۔ اس کے بعد جب یہ لگا کہ ریاست میں مستحکم حکومت بنانےمیں کوئی کامیاب نہیں ہوگا، تب صدرراج کی سفارش کی گئی۔ دوسری جانب شیوسینا، این سی پی اورکانگریس نےاس قدم کےلئےگورنرکی تنقید کی ہے۔ وہیں دوسری طرف این سی پی کے پاس منگل شام 8:30 بجے تک کا وقت تھا، اس کے باوجود گورنرنے پہلے ہی یہ قدم اٹھایا۔

Loading...

گورنرکی تنقید پروزارت داخلہ نے دیا جواب

کانگریس لیڈراوروکیل ابھیشیک منوسنگھوی نےکہا 'صدرراج آخری متبادل ہوتا ہے۔ انہوں نےکہا کہ اس میں بہت فرق ہوتا جب ایک پارٹی کہتی ہےکہ ہم حکومت نہیں بناسکتےاور دوسری کہتی ہےکہ ہم بنا سکتے ہیں، لیکن ہمیں وقت چاہئے۔ گورنرکی چوطرفہ تنقید پر وزارت داخلہ نےکہا 'گورنرنے صدرراج کی سفارش تب کی جب منگل کو این سی پی لیڈروں نے حکومت کی تشکیل کےلئےتین دن کا مزید وقت مانگا۔ گورنرکا خط ملنے کے بعد کابینہ کی میٹنگ ہوئی، اس میں صدرراج نافذ کرنے کی سفارش کی گئی۔

وزارت داخلہ کے افسران کے مطابق گورنر بھگت سنگھ کوشیاری نےتبھی صدرراج نافذ کرنےکی سفارش کی، جب انہوں نےدیکھا کہ مہاراشٹرمیں کوئی بھی پارٹی یا اتحاد حکومت بنانے کی پوزیشن میں نہیں ہے۔ صدرراج پراس وقت غورکیا جائےگا جب کوئی پارٹی پورے نمبرلےکرسامنےآئے گی۔ حالانکہ شیوسینا اس موضوع پرسپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹانے کا ارادہ کرچکی ہے۔

Loading...