உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کام کی بات : دن یا ہفتہ میں کتنی مرتبہ سیکس کریں گے تو سیکس لائف مانی جائے گی نارمل ، پڑھیں یہ خبر

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    بہت سے لوگ سیکس کے بارے میں کھل کر بات کرتے ہوئے شرم محسوس کرتے ہیں ۔ یہ جھجھک عام بات ہے ۔

    • Share this:

      سوال : سیکس کو لے کر کئی تصورات ہیں کہ روز یا ہفتہ میں اتنی مرتبہ سیکس کرنا چاہئے ، تبھی سیکس لائف نارمل تسلیم کی جائے گی، اس میں کتنی سچائی ہے ؟
      ڈاکٹر پارس شاہ
      جواب : بہت سے لوگ سیکس کے بارے میں کھل کر بات کرتے ہوئے شرم محسوس کرتے ہیں ۔ یہ جھجھک عام بات ہے ۔ سیکس لائف انتہائی پرائیویٹ معاملہ ہے ، جس پر بات کرنے میں کم ہی لوگ خود کو آرام دہ محسوس کرتے ہیں ۔ حالانکہ بات نہ کرنے کی وجہ سے کئی غلط تصورات بھی پائے جاتے ہیں ، جیسے ایکٹو سیکس لائف کے معنی لوگ یہ نکالتے ہیں کہ اس میں روز سیکس ہونا ضروری ہے ۔ یہ نہیں ہے تو زندگی اور رشتوں سے کچھ غائب ہے ۔ اس بات میں کوئی دم نہیں ۔
      صحت مند سیکس ، جس سے دونوں ہی خود بہتر اور تروتازہ محسوس کریں ، وہی سیکس لائف ہے ۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ یہ دن میں کتنی مرتبہ کیا گیا یا ہفتہ میں ایک یا دو بار۔ جنسی تعلقات قائم ہونے کے بعد دونوں کو لذت کی انتہا تک پہنچنا چاہئے ۔ یہی سیکس کے اصلی معنی ہیں۔ مردوں اور خواتین میں انتہا تک پہنچنے کے طریقے الگ الگ ہوتے ہیں ۔ عام طور پر مرد لمس ، بو اور ساتھی کیسی نظر آرہی ہے ، اس کے ساتھ انتہا تک پہنچتے ہیں جبکہ خواتین کیلئے یہ سیکس کے دوران ساتھی کی سنجیدگی بھی ہوسکتی ہے ، جو انہیں انتہا تک پہنچائے ۔
      اچھی سیکس لائف کیلئے انتہائی ضروری ہے کہ دونوں آپس میں کھل کر اس بابت بات کریں۔ اپنی ضرورتیں بتائیں ۔ گفتگو کو ، نہیں ، کبھی نہیں ، میں تبدیل نہ کریں ، اس کا خیال رکھیں ۔ اگر ساتھ گزارنے کیلئے وقت نہیں ملتا ، تو الگ سے منصوبہ بنائیں۔ ویک اینڈس پر باضابطہ تیاری کے ساتھ ملیں ۔ اگر ساتھی سیکس کیلئے راضی نہیں تو اسے پابند نہ بنائیں ۔ یہ بھی صحت مند سیکس لائف کا اہم حصہ ہے۔ اختصار کے طور پر کتنی مرتبہ سیکس نارمل ہے ، جیسی باتیں اور ڈر بے بنیاد ہے۔ دونوں راضی ہوں تو ہر دن کئی مرتبہ سیکس کیا جاسکتا ہے اور دونوں راضی نہ ہو تو ہفتہ میں ایک مرتبہ سیکس کرنا بھی کافی ہے۔
      ۔(ڈاکٹر پارس شاہ ساندھیہ ملٹی اسپشلیٹی ہاسپیٹل احمد آباد ، گجرات میں چیف کنسلٹنٹ سیکسولاجسٹ ہیں)۔
      اگر آپ کے دل میں کوئی بھی سوال یا تجسس ہے تو آپ اس ای میل پر ہمیں میل بھیج سکتے ہیں۔ ڈاکٹر شاہ آپ کے سبھی سوالوں کا جواب دیں گے۔
      Ask.life@nw18.com

      First published: