உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Delhi Crime News: نوکری دلانے کے نام پر خاتون سے شوہر کے دوستوں نے ہی کی اجتماعی آبروریزی، تین نابالغ بیٹیوں کا بھی اغوا کیا

    نوکری دلانے کے نام پر خاتون سے شوہر کے دوستوں نے ہی کی اجتماعی آبروریزی

    نوکری دلانے کے نام پر خاتون سے شوہر کے دوستوں نے ہی کی اجتماعی آبروریزی

    Delhi Crime News: دہلی کے سیماپوری (Seemapuri) علاقے میں ایک 40 سال کی خاتون (40 Year Old Woman) کے ساتھ اجتماعی آبروریزی (Gangraped) کے حادثہ کو انجام دیا گیا ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ اس کے شوہر (Husbaned) کے دوستوں نے ہی اس کی اجتماعی آبروریزی کی ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ اجتماعی آبروریزی کے بعد اس کی تین نابالغ بیٹیوں (Three Minor Daughters kidnapped) کا بھی اغوا کرلیا گیا ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: دہلی کے سیما پوری (Seemapuri) علاقے میں ایک 40 سال کی خاتون (40 Year Old Woman) کے ساتھ اجتماعی آبروریزی (Gangraped) کے حادثے کو انجام دیا گیا ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ اس کے شوہر (Husbaned) کے دوستوں نے ہی اس کے ساتھ آبروریزی کی ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ اجتماعی آبروریزی کے بعد اس کے تین نابالغ بیٹیوں (Three Minor Daughters kidnapped) کا بھی اٖغوا کرلیا گیا ہے۔ خاتون کا الزام ہے کہ اس حادثہ کی شکایت کرنے جب وہ تھانے پہنچی تو اسے وہاں سے بھگا دیاگیا۔ حالانکہ جب معاملہ میڈیا میں سامنے آیا تو دہلی پولیس نے اجتماعی آبروریزی، اغوا اور دھمکی دینے کا معاملہ درج کرکے جانچ شروع کردی ہے۔ 15 اپریل کو دہلی پولیس نے معاملہ درج کیا ہے۔ خاتون کا کہنا ہے کہ 25 مارچ سے وہ مسلسل دوڑ رہی تھی، لیکن 15 اپریل کو اس کی شکایت درج کی گئی ہے۔

      متاثرہ نے دہلی پولیس کو دیئے شکایت میں ذکر کیا ہے کہ وہ شوہر اور تین بیٹیوں کے ساتھ غازی آباد کے اندرا پورم میں رہتی تھی۔ تقریباً 5 ماہ پہلے ہی شوہر سے تنازعہ کے بعد وہ بیٹیوں کے ساتھ دہلی کے لکشمی نگر میں ایک دوست کے گھر پر رہنے لگی۔

      40 سال کی خاتون کے ساتھ اجتماعی آبروریزی

      اس درمیان اس کے شوہر کا ایک اور دوست ملا اور خاتون کو غازی آباد میں ہی شہید نگر میں کرائے کا کمرہ اور نوکری دونوں دلانے کی یقین دہانی کرائی۔ شخص نے کچھ دن بعد خاتون کو شہید نگر میں کمرہ بھی دلا دیا۔ اس درمیان گزشتہ 4 مارچ کو نوکری دلانے کے نام پر پرانی سیما پوری میں بلایا۔ خاتون کو وہ ایک کمرے میں لے کر گیا، جہاں شخص کے ساتھ دو اور لوگ موجود تھے۔ خاتون نے الزام لگایا ہے کہ اس دن تینوں نے کمرہ بند کرکے اس کے ساتھ آبروریزی کی اور اس کا ویڈیو بھی بنا لیا۔

      خاتون کی تین نابالغ بیٹیاں بھی ہوئیں اغوا

      خاتون کا الزام ہے کہ تینوں شخص نے شکایت کرنے پر ویڈیو وائرل کرنے کی دھمکی دی۔ خاتون نے اپنی شکایت میں بتایا ہے کہ وہ اپنی تینوں بیٹیوں کے ساتھ نریلا میں آکر رہنے لگی، لیکن ملزم اسے کال کرکے مسلسل دھمکا رہا ہے۔

      شوہر نے دوست کے گھر بلایا تھا

      خاتون کے مطابق، تینوں ملزمین میں سے ایک شخص انعام نے 24 مارچ کو فون کرکے ویڈیو ڈیلیٹ کرانے کے نام پر سیما پوری بلایا۔ 25 مارچ کو خاتون اپنی تینوں بیٹیوں کے ساتھ سیماپوری پہنچی، جہان ملزمین نے تینوں بیٹیوں کو کار میں بٹھا لیا اور خاتون کو نیچے پھینک دیا۔

      دہلی پولیس پر معاملہ درج کرنے میں تاخیر کرنے کا الزام

      متاثرہ نے الزام لگایا ہے کہ اپنی تینوں بیٹیوں کے اغوا ہونے کے بعد اس نے دہلی پولیس کو اس کی اطلاع دی۔ پولیس موقع پر پہنچی بھی، لیکن معاملے کو سنجیدگی سے نہیں لیا۔ خاتون نے کئی بار اس معاملے کو لے کر سیما پوری پولیس اسٹیشن گئی، لیکن ہر بار اسے وہاں سے بھگا دیا گیا۔ دہلی پولیس نے معاملے کی سنجیدگی کو سمجھتے ہوئے جانچ شروع کردی ہے۔ دہلی پولیس کے مطابق، خاتون کی تحریری شکایت پر جانچ چل رہی ہے۔ حالانکہ خاتون واردات کے بارے میں صحیح صحیح جانکاری نہیں دے رہی ہے۔ تینوں بچیاں اس خاتون کی ہیں، یہ بھی پتہ کیا جا رہا ہے۔ خاتون نے جن تین لوگوں کے بارے میں شکایت درج کی ہے، اس میں سے ایک کی موت کافی پہلے ہی ہوچکی ہے۔ ایسے میں بہت جلد ہی جانچ پوری کرلی جائے گی۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: