ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

رانچی میں 400 دوکانداروں نے کی بھوک ہڑتال، تھالی اور برتن بجاکر کی حکومت اور انتظامیہ کو جگانے کی کوشش

جھارکھنڈ کے دارالحکومت رانچی واقع اٹل اسمرتی وینڈر مارکیٹ سے جڑے قریب چار سو دکانداروں نے آج مارکیٹ احاطہ میں بھوک ہڑتال پر بیٹھ گئے۔ دکانداروں نے تھالی اور برتن بجاکر حکومت اور انتظامیہ کو جگانے کی کوشش کی۔

  • Share this:
رانچی میں 400 دوکانداروں نے کی بھوک ہڑتال، تھالی اور برتن بجاکر کی حکومت اور انتظامیہ کو جگانے کی کوشش
رانچی میں 400 دوکانداروں نے کی بھوک ہڑتال، تھالی اور برتن بجاکر کی حکومت اور انتظامیہ کو جگانے کی کوشش

رانچی: جھارکھنڈ کے دارالحکومت رانچی واقع اٹل اسمرتی وینڈر مارکیٹ سے جڑے قریب چار سو دکانداروں نے آج مارکیٹ احاطہ میں بھوک ہڑتال پر بیٹھ گئے۔ دکانداروں نے تھالی اور برتن بجاکر حکومت اور انتظامیہ کو جگانے کی کوشش کی۔ وینڈر مارکیٹ کے دکانداروں کا کہنا ہے کہ گذشتہ پانچ ماہ سے لاک ڈاؤن کے سبب انکے مارکیٹ کھولنے کی اجازت نہیں دی گئی ہے جس وجہ کر وہ مالی بہران کے شکار ہوگئے ہیں۔ ان کی شکایت ہے کہ حالات اتنے خراب ہو گئے ہیں کہ قرض لیکر اپنے اور اہل خانہ کے لئے کھانے پینے کا انتظام کرنے کو مجبور ہیں۔ ان کا کہنا ہےکہ مارکیٹ کھولنےکی اجازت دیئے جانے کے مطالبہ کو لیکر کئی بار انتظامیہ اور ارباب اقتدار سے ملاقات کی گئی لیکن اب تک انہیں اجازت نہیں دی گئی ہے ۔ انکی دلیل ہے کہ ریاست کے سب سے بڑے اس وینڈر مارکیٹ میں سوشل ڈسٹنسنگ کے تحت خرید فروخت ہو سکتی ہے لیکن لاک ڈاؤن کے شروعات سے ہی ان کی مارکیٹ بند ہے۔‌


رانچی واقع اٹل اسمرتی وینڈر مارکیٹ سے جڑے قریب چار سو دکانداروں نے آج مارکیٹ احاطہ میں بھوک ہڑتال پر بیٹھ گئے۔ دکانداروں نے تھالی اور برتن بجاکر حکومت اور انتظامیہ کو جگانے کی کوشش کی۔
رانچی واقع اٹل اسمرتی وینڈر مارکیٹ سے جڑے قریب چار سو دکانداروں نے آج مارکیٹ احاطہ میں بھوک ہڑتال پر بیٹھ گئے۔ دکانداروں نے تھالی اور برتن بجاکر حکومت اور انتظامیہ کو جگانے کی کوشش کی۔


اٹل اسمرتی وینڈر مارکیٹ کے دکاندار ناگیندر پنڈت کا کہنا ہے کہ اس مارکیٹ کے تمام دوکاندار یومیہ آمدنی کے ذریعہ گھر چلاتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ انکے پاس جمع پونجی نہیں ہے باوجود اسکے حکومت نے انکے مسائل دور کرنے کی کوشش نہیں کی۔ جبکہ مال اور ہوٹل کو چھوڑ کر تمام تجارتی مراکز کو کھولنے کی اجازت دی گئی ہے۔


وینڈر مارکیٹ میں دارلحکومت رانچی کے فوٹ پاتھ دکانداروں کو روزگار کے لئے جگہ دی گئی ہے تاکہ سڑک پر بھیڑ اور جام کے مسائل کو دور کیا جاسکے، لیکن گذشتہ پانچ ماہ سے مارکیٹ بند رہنے سے ان کی مالی حالت بے حد خستہ ہو گئی ہے۔
وینڈر مارکیٹ میں دارلحکومت رانچی کے فوٹ پاتھ دکانداروں کو روزگار کے لئے جگہ دی گئی ہے تاکہ سڑک پر بھیڑ اور جام کے مسائل کو دور کیا جاسکے، لیکن گذشتہ پانچ ماہ سے مارکیٹ بند رہنے سے ان کی مالی حالت بے حد خستہ ہو گئی ہے۔


دراصل وینڈر مارکیٹ میں دارلحکومت رانچی کے فوٹ پاتھ دکانداروں کو روزگار کے لئے جگہ دی گئی ہے۔ تاکہ سڑک پر بھیڑ اور جام کے مسائل کو دور کیا جاسکے، لیکن گذشتہ پانچ ماہ سے مارکیٹ بند رہنے سے ان کی مالی حالت بے حد خستہ ہو گئی ہے۔ اس میں کپڑے اور جوتے، چپل، بیگ و دیگر اشیاء کے فوٹ پاتھ دکاندار دکان چلا کر اپنی زندگی گذارتے ہیں۔ آخرکار مجبور ہو کر یہ دکاندار بھوک ہڑتال پر بیٹھنے اور تھالی۔برتن بجا کر انتظامیہ اور حکومت تک اپنا درد پہنچانے کی کوشش کی۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Aug 25, 2020 11:48 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading