உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ہندوستان نے پھر بے نقاب کیا’پاکستان‘ کا چہرہ،ٹیکساس واقعہ کی دی مثال، خارجہ سکریٹری نے کہا-پڑوس میں ہے دہشت کا مرکز

    سیکرٹری خارجہ ہرش وردھن شرنگلا نے بتایا کہ پاکستان کس طرح دہشت گردی پھیلا رہا ہے۔

    سیکرٹری خارجہ ہرش وردھن شرنگلا نے بتایا کہ پاکستان کس طرح دہشت گردی پھیلا رہا ہے۔

    ہندوستان کے خارجہ سکریٹری ہرش وردھن شرنگلا (Foreign Secretary Harshvardhan Shringla) نے کہا ہے، ’تیکساس میں حال ہی میں ہوئے واقعے نےیہ بتادیا ہے کہ بین الاقوامی دہشت گردی کا نیٹ ورک کتنا سرگرم ہے، جس کا مرکز ہندوستان کے پڑوس (پاکستان) میں ہے اور اس کے دوررس اثرات ہیں۔ یہ ایک عالمی خطرہ ہے، جس سے نمٹنے کے لئے واضح، اثردار اور اجتماعی قدم اٹھانے کی ضرورت ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:امریکہ کے ٹیکساس میں ہوئے یرغمال والے واقعے (Texas Synagogue Hostage) کے بعد ایک بار پھر پوری دنیا کا دھیان پاکستان میں سرگرم دہشت گردی پر گیا ہے۔ یہاں ایک یہودی عبادت گاہ میں پاکستانی نژاد کے شخص نے چار لوگوں کو یرغمال بنالیا تھا اور انہیں چھوڑنے کے بدلے پاکستان (Pakistan) کی لیڈی القاعدہ سائنسداں عافیہ صدیقی کی رہائی کی مانگ کی تھی۔ اس واقعے کو امریکہ نے دہشت گردانہ واقعہ قرار دیا ہے۔ اب ہندوستان نے ٹیکساس واقعے کی مثال دیتے ہوئے بتایا ہے کہ کیسے پاکستان پوری دنیا کےلئے ایک بڑا خطرہ ہے۔

      ہندوستان کے خارجہ سکریٹری ہرش وردھن شرنگلا (Foreign Secretary Harshvardhan Shringla) نے کہا ہے، ’تیکساس میں حال ہی میں ہوئے واقعے نےیہ بتادیا ہے کہ بین الاقوامی دہشت گردی کا نیٹ ورک کتنا سرگرم ہے، جس کا مرکز ہندوستان کے پڑوس (پاکستان) میں ہے اور اس کے دوررس اثرات ہیں۔ یہ ایک عالمی خطرہ ہے، جس سے نمٹنے کے لئے واضح، اثردار اور اجتماعی قدم اٹھانے کی ضرورت ہے۔ سبھی ملکوں کو ایک دوسرے کے تعاون سے دہشت گردی کا مقابلہ کرنا چاہیے۔ تعاون کرنے میں ناکامی صرف دہشت گردوں کو مزید جرات مندی کے لئے راغب کرسکتی ہے۔‘ شرنگلا نے ’بحر ہند میں ہندوستانی یوروپی/جرمنی کے تعاون کے امکانات‘ کے موضوع پر منعقدہ ایک سیمینار میں یہ باتیں کہی ہیں۔

      پاکستانی دہشت گرد نے پھیلائی دہشت
      برطانوی شہری ملک فیصل اکرم کو ایف بی آئی نے ٹیکساس میں یہودی عبادت گاہ کا حالیہ محاصرہ ختم کرنے کے لیے قتل کر دیا تھا۔ سیکورٹی فورسز نے گزشتہ ہفتے کی رات عبادت گاہ میں یرغمال بنائے گئے چار افراد کو رہا کرالیا تھا۔ اکرم نے نیورو سائنسدان عافیہ صدیقی کی رہائی کا مطالبہ کیا تھا، جن پر القاعدہ (Pakistani Terrorist in US) سے تعلق کا شبہ ہے۔ وہ اسے اپنی بہن بتا رہا ہے۔ اکرم کے بارے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ وہ پاکستانی نژاد برطانوی شہری تھا۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: