اپنا ضلع منتخب کریں۔

    ہند-فرانس دفاعی مذاکرات کا آج سے آغاز، راجناتھ سنگھ ہوں گے شریک چیئرمین

    ہند-فرانس دفاعی مذاکرات کا آج سے آغاز، راجناتھ سنگھ ہوں گے شریک چیئرمین۔ فائل فوٹو ۔

    ہند-فرانس دفاعی مذاکرات کا آج سے آغاز، راجناتھ سنگھ ہوں گے شریک چیئرمین۔ فائل فوٹو ۔

    وزیر دفاع نے کہا کہ اب ہمیں اجتماعی سلامتی کے دائرہ کار سے اوپر اٹھ کر مشترکہ مفاد اور مشترکہ سلامتی کی سطح پر جانے کی ضرورت ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • New Delhi, India
    • Share this:
      وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ اپنے فرانسیسی ہم منصب سبیسٹین لیکارنو کے ساتھ ہند-فرانس سالانہ دفاعی مذاکرات کے شریک چیئرمین ہوں گے۔ اہم بات چیت 26 سے 28 نومبر کے دوران دہلی میں ہوگی۔ اس دوران رافیل کے مستقبل کے سودے ، اس دوران رافیل کے مستقبل کے سودے، اسٹریٹجک پارٹنرشپ اور دو طرفہ تعلقات سمیت کئی اہم معاملات پر فیصلے کیے جائیں گے۔

      وزارت دفاع کے مطابق فرانسیسی وزیر دفاع لیکارنے کا یہ پہلا ہندوستان دورہ ہے۔ وزیرخارجہ ایس جئے شنکر، قومی سلامتی مشیر (این ایس اے) اجیت ڈوبھال سے بھی وہ الگ سے ملاقات کریںگے۔ فرانس نے ہندوستان کے پہلے دیسی ساختہ طیارہ بردار بحری جہاز آئی این اے وکرانت میں گہری دلچسپی ظاہر کی ہے۔ لیکورنو وکرانت کا دورہ کرنے کے لیے کوچی میں سدرن نیول کمانڈ بھی جائیں گے۔ فرانس 1998 سے ہندوستان کے ساتھ اسٹریٹجک پارٹنر ہے۔ دونوں ممالک دفاع اور ہتھیاروں اور ساز و سامان میں بھی تعاون کر رہے ہیں۔

      دنیا سبھی کے لیے محفوظ اور انصاف پسند ہو
      دہلی میں انڈو پیسفک ریجنل ڈائیلاگ 2022 کے دوران جمعہ کو وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے کہا، یہ ہماری اخلاقی ذمہ داری ہے کہ ہم ایک بہتر دنیا کی تعمیر کریں۔ یہ دنیا بسھی کے لیے محفوظ اور انصاف والی ہو۔ راجناتھ سنگھ نے کہا، ہندوستانی فلسفیوں نے ہمیشہ انسانی برادری کو سیاسی حدود سے ماورا سمجھا ہے۔

      انہوں نے کہا، میرا یقین ہے کہ محفوظ دنیا ایک اجتماعی کوشش بن جاتی ہے تو ہم ایک ایسے عالمی صورتحال بنانے کے بارے میں سوچ سکتے ہیں، جو سبھی کے لیے سودمند ہو۔ راجناتھ سنگھ نے کہا، کئی پلیٹ فارموں اور ایجنسیوں کے ذریعے عالمی طبقہ اس سمت میں کام کررہا ہے اور آگے بڑھ رہا ہے۔ اس میں اقوام متحدہ سلامتی کونسل سب سے آگے ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      15سال پرانی گاڑیوں کو لیکر گڈکری سخت، کہا۔ حکومت گاڑیوں کو بھی کباڑ میں بدلیں گے

      یہ بھی پڑھیں:
      منی لانڈرنگ کیس میں Yes Bank کے شریک بانی رانا کپور کو راحت، ہائی کورٹ سے ملی ضمانت

      خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق، انہوں نے کہا کہ میرا پختہ یقین ہے کہ اگر سیکورٹی ایک حقیقی اجتماعی ادارہ بن جاتا ہے، تو ہم ایک ایسا عالمی نظام بنانے کے بارے میں سوچ سکتے ہیں جو ہم سب کے لیے فائدہ مند ہو۔ وزیر دفاع نے کہا کہ اب ہمیں اجتماعی سلامتی کے دائرہ کار سے اوپر اٹھ کر مشترکہ مفاد اور مشترکہ سلامتی کی سطح پر جانے کی ضرورت ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: