உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ایل اے سی پر اب نہیں چلے گی چین کی دھمکی! 2022 تک ہندوستان تعینات کرے گا 2 S-400 میزائل سسٹم

    ایل اے سی پر اب نہیں چلے گی چین کی دھمکی! 2022 تک ہندوستان تعینات کرے گا 2 S-400 میزائل سسٹم

    ایل اے سی پر اب نہیں چلے گی چین کی دھمکی! 2022 تک ہندوستان تعینات کرے گا 2 S-400 میزائل سسٹم

    India-China LAC Update: رپورٹ کے مطابق، ماسکو میں ڈپلومیٹس کے مطابق، S-400 سسٹم کے ایڈوانس ایلیمنٹس ہندوستان کو ملنا شروع ہوگئے ہیں۔ وہیں گہرائی تک کام کرنے کے اہل رڈار بھی آئندہ ماہ ڈیلیور ہونے جا رہے ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: ہندوستان سال 2022 تک شمالی اور مشرقی سرحد پر S-400 میزائل سسٹم کے کم ازکم دو فوجی ٹیم تعینات کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔ جدید میزائل سسٹم کے ذریعہ ہندوستانی فوج (Indian Army) سرحد پرچینی فوج (Chinese Army) کی صلاحیت کی برابری کرسکے گی۔ کہا جا رہا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی (PM Narendra Modi) اور روسی صدر ولادیمیر پتن (Vladimir Putin) کے قریبی تعلقات کے سبب ہندوستان کو دو S-400 میزائل سسٹم کم وقت میں مل گئے ہیں۔ وہیں ولادیمیر پتن بھی 6 دسمبر کو ہندوستان کا دورہ کر رہے ہیں۔ اس دوران وہ وزیر اعظم مودی سے ملاقات کریں گے۔

      چین کے خلاف قدم اٹھائے گا ہندوستان

      ہندوستان ٹائمس کی رپورٹ کے مطابق، ماسکو میں ڈپلومیٹس کے مطابق، S-400 سسٹم کے ایڈوانس ایلیمنٹس ہندوستان کو ملنا شروع ہوگئے ہیں۔ وہیں گہرائی تک کام کرنے کے اہل رڈار بھی آئندہ ماہ ڈیلیور ہونے جا رہے ہیں۔ دراصل، چین کی فوج نے لداخ اور اروناچل پردیش میں حقیقی کنٹرول لائن کے پاس اسی روسی تکنیک سے لیس میزائل سسٹم کو تعینات کیا ہے۔ ایسے میں ہندوستان سرحد پر اپنی فوجی طاقت میں توازن بناسکے گا۔ رپورٹ کے مطابق، دو S-400 سسٹم 2022 کی شروعات تک آپریٹ ہوسکیں گے۔ روس میں ٹریننگ حاصل کرنے والی ہندوستانی فوج کی دو ٹیمیں S-400 سسٹم کی ٹریننگ کے لئے تیار ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      Lakhimpur Case: پرینکا گاندھی نے کہا- وزیر داخلہ کے اسٹیج شیئر نہ کریں، انہیں برخاست کریں وزیر اعظم مودی


      خاص بات یہ ہے کہ یہ دشمن کے علاقے میں 400 کلو میٹر تک مار کرسکتا ہے۔ ہندوستانی سرزمین پر S-400 سسٹم کے تعینات ہونے کے ساتھ ہی مودی حکومت بھی چینی میزائل اور فضائیہ کو جواب دینے کے لئے تیار ہے۔ ایک سسٹم کو اترپردیش میں تعینات کیا جائے گا، جو لداخ میں دو محاذ پر کام کرے گا۔ کیونکہ گہرائی تک کام کرنے والے رڈار پر ہندوستان کو ہدف بناکر داغی گئی میزائل یا حملے کا جواب دینے کے لئے تیار رہیں گے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: