ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

دہشت گردوں کا خواب بن کر رہ جائے گا ڈرون حملہ ، جانئے ہندوستان کیسے کررہا تیاری

ڈرون کی آسان دستیابی کی وجہ سے سیکورٹی ایجنسیوں کو پہلے ہی کسی 'آسمانی آفت' کا اندیشہ ہوگیا تھا ۔ یہی وجہ ہے کہ ہندوستان کی طرف سے اینٹی ڈرون سسٹم پر کام شروع کردیا گیا تھا ۔

  • Share this:
دہشت گردوں کا خواب بن کر رہ جائے گا ڈرون حملہ ، جانئے ہندوستان کیسے کررہا تیاری
دہشت گردوں کا خواب بن کر رہ جائے گا ڈرون حملہ ، جانئے ہندوستان کیسے کررہا تیاری

نئی دہلی : ہندوستان ۔ پاکستان سرحد پر جنگ بندی کے بعد اب ڈرون کی شکل میں نئی مشکلات سامنے آنے لگی ہیں ۔ پاکستان اس کا استعمال کرکے ہتھیار ، پیسہ اور نشیلی اشیا ہندوستان میں بھیجنے کے کام میں پہلے سے مصروف تھا ۔ اب اسی تکنیک کا استعمال کرکے اس نے ہندوستان میں پہلے ڈرون حملے کو جموں کے ایئرفورس اسٹیشن پر انجام دیا ۔ عام طور پر اس طرح کے حملے کو داعش ملک شام میں ناٹو فورس پر کرتا رہا ہے ۔ کواڈ کاپٹر میں گرینیڈ باندھ کر وہ اس کو فوجیوں پر کریش کرادیتے تھے ۔ اب پاکستان اسی تکنیک پر عمل کرتے ہوئے ہندوستان میں دہشت گرانہ حملوں کو انجام دینے لگا ہے ۔


ڈرون کی آسان دستیابی کی وجہ سے سیکورٹی ایجنسیوں کو پہلے ہی کسی آسمانی آفت کا اندیشہ ہوگیا تھا ۔ یہی وجہ ہے کہ ہندوستان کی طرف سے اینٹی ڈرون سسٹم پر کام شروع کردیا گیا تھا ۔ ڈی آر ڈی او ، ڈرون اور اینٹی ڈرون دونوں ہی تکنیک پر کافی پہلے سے کام شروع کرچکا تھا اور اس کی تعیناتی بھی کئی فوجی تنصیبات میں کی جاچکی ہے ۔ پہلی مرتبہ ڈی آر ڈی او کے اس اینٹی ڈرون کی جانکاری اس وقت عام ہوئی تھی جب 74 یوم آزادی تقریب کے دوران لال قلعہ پر کسی بھی ڈرون حملے کے اندیشہ کے پیش نظر اینٹی ڈرون سسٹم تعینات کیا تھا ۔ اس سسٹم کا نام لیزر بیسڈ ڈائریکٹیڈ اینرجی ویپن تھا ۔


یہ سسٹم کسی بھی چھوٹے سے چھوٹے ڈرون کو لیزر بیم کے ذریعہ گرا سکتا ہے ۔ ایک اور سسٹم ہے جو کہ ڈی آر ڈی او کے لگاتار ٹرائل پر ہے کہ کیسے مائیکروویو کے ذریعہ ڈرون کے گرایا جاسکے ۔ اس کو جیمنگ سسٹم بھی کہا جاتا ہے ۔ دراصل ڈرون کسی نہ کسی کمیونیکیشن سسٹم کے ذریعہ ہی آپریٹ ہوتا ہے اور اس کمیونیکیشن کو جام کرنے پر ڈرون اپنے آپ نیچے آجاتا ہے ۔


تینوں افواج میں اینٹی ڈرون سسٹم پر کام جاری

خود سی ڈی ایس بپن راوت نے مانا ہے کہ مستقبل میں جنگ کیلئے خود کو تیار رکھنا ہوگا ۔ جموں میں ہوا ڈرون حملہ تشویشناک ضرور ہے ، مگر ہمیں اس بات کا اندیشہ تھا اور اسی کے پیش نظر ہندوستان نے بھی اپنی تیاریاں تیز کردی تھیں ۔ ڈی آر ڈی او کے پاس یہ تکنیک موجود ہے ۔ ڈرون کے خطرے کو دیکھتے ہوئے ہندوستان کی تینوں افواج کی طرف سے اینٹی ڈرون تکنیک لینے کی قواعد بھی تیز کردی گئی ہے ۔

اس کے پیش نظر ہندوستانی بحریہ نے گزشتہ سال دشمن کے چھوٹے ڈرون سے نمٹنے کیلئے اسرائیل سے اینٹی ڈرون سسٹم اسمیش 2000 پلس کا آرڈر کیا ۔ یہ اینٹی ڈرون ہتھیار کمپیوٹرائزڈ فائر کنٹرول اور الیکٹرو آپٹک سائٹ سسٹم ہے ۔ اس کو رائفل کے اوپر فٹ کیا جاسکتا ہے اور ہتھیار پر لگانے کے بعد اس کی مدد سے چھوٹے ڈرون کو ہوا میں مار گرایا جاسکتا ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Jun 29, 2021 12:05 AM IST