உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اروناچل پردیش میں آرمی ایوی ایشن بریگیڈ کا قیام، چین کی ہر نقل و حرکت پر رکھی جائے گی نظر

    اروناچل میں آرمی ایوی ایشن بریگیڈ کا قیام، چین کی ہر نقل و حرکت پر رکھی جائے گی نظر

    اروناچل میں آرمی ایوی ایشن بریگیڈ کا قیام، چین کی ہر نقل و حرکت پر رکھی جائے گی نظر

    چین کے ہیلی کاپٹروں (Chinese Helicopters) کے مسلسل ہندوستانی ایئر اسپیس خلاف ورزی کی خبریں آتی رہتی ہیں۔ کسی بھی طرح کی خلاف ورزی کو روکنے کا ذمہ بھی اب ایوی ایشن بریگیڈ کے پاس ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: اروناچل پردیش (Arunachal Pradesh) میں ہندوستانی فوج نے اپنی پہلی ایوی ایشن بریگیڈ (Aviation Brigade) کا قیام کردیا ہے۔ اس ایوی ایشن بریگیڈ کا کام صرف فارورڈ بیس پر فوجی سازوسامان پہنچانا اور بچاو کاموں تک ہی محدود نہیں ہے۔ بلکہ یہ بریگیڈ حقیقی کنٹرول لائن (ایل اے سی) کے ایئر اسپیس کی نگرانی بھی کرتی ہے۔ ساتھ ہی یہ چین کے ایئر اسپیس پر بھی باریکی سے نظر رکھتی ہے۔

      چین کے ہیلی کاپٹروں کے مسلسل ہندوستانی ایئر اسپیس وائلیشن کی خبریں آتی رہتی ہیں۔ کسی بھی طرح کے وائیلیشن کو روکنے کا ذمہ بھی اب ایوی ایشن بریگیڈ کے پاس ہے۔ اروناچل کے روپا میں اسی کام کے لئے ایک ایئر اسپیس کنٹرول سینٹر بنایا گیا ہے۔ یہاں سے مسلسل چینی ایئر اسپیس پر نظر رکھی جاتی ہے۔ چین کا جو بھی ایئر کرافٹ، ہیلی کاپٹر یا پھر ڈرون ایل اے سی کے قریب آتا ہے تو اسے ٹریک کیا جاتا ہے اور پھر اس کے خلاف ضروری کارروائی کے لئے فارورڈ فارمیشنس کو الرٹ کر دیا جاتا ہے۔

      کیسے کام کرتی ہے یہ بریگیڈ، کرنل نے بتایا

      نیوز 18 انڈیا کی ٹیم جب اس سینٹر پر پہنچی تو وہاں پر مسلسل چینی حرکتوں پر نظر رکھی جارہی تھی۔ اس سینٹر کو ہیڈ کرنے والے کرنل نونیت چیل نے بتایا کہ ہماری کوشش ہے کہ کسی بھی چینی ایئر کرافٹ کو ہندوستانی سرحد میں داخل نہ ہونے دیں۔ اگر کوئی چینی فائٹر ایل اے سی پر ایل اسپیس کی خلاف ورزی کرتی ہوئی دکھے گی تو فوراً ہندوستانی فضائیہ کو مطلع کیا جائے گا۔ اس صورت میں ہندوستانی فضائیہ کے فائٹر طیارے فوراً اڑان بھر کر انہیں ایسا کرنے سے روکیں گے۔ اگر کوئی اٹیک ہیلی کاپٹر کی خلاف ورزی کرتا پایا گیا تو اس بریگیڈ میں تعینات اٹیک ہیلی کاپٹر کو فوراً روانہ کر دیا جائے گا۔ اس ایوی ایشن بریگیڈ کو قائم ہوئے محض 6 ماہ ہی ہوئے ہیں۔ 6 ماہ میں ہی اس بریگیڈ نے اس علاقے میں چینی حماقت کو روکنے کی سبھی کوشش کئے ہیں۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: