پاکستانی دہشت گردی سے نمٹنےکےلئےسرحد پربنائے جائیں گے وارگروپ

رپورٹ کے مطابق ایک بریگیڈ میں تین چاریونٹ ہوتی ہے۔ ہریونٹ میں تقریباً 800 جوان ہوتے ہیں۔ ہرآئی بی جی میں پانچ ہزارجوان شامل ہوں گے، جسے میجرجنرل رینک کا افسرلیڈ کرے گا۔

Jun 19, 2019 11:04 PM IST | Updated on: Jun 19, 2019 11:05 PM IST
پاکستانی دہشت گردی سے نمٹنےکےلئےسرحد پربنائے جائیں گے وارگروپ

ہندوستانی فوج پاکستان سے منسلک سرحد پرنئے انٹگریٹیڈ بیٹل گروپس قائم کرے گی۔ (علامتی تصویر)۔

ہندوستانی فوج پاکستان سے منسلک سرحد پرنئےانٹیگریٹیڈ بیٹل گروپس (آئی بی جی یا وار گروپس) قائم کرنے جارہی ہے۔ ان کا مقصد جنگ کےدوران فوج کی صلاحیت کومزید مضبوط کرنا ہے۔ یہ عمل اکتوبرتک مکمل ہوجائے گا۔ پاکستان کے بعد چین کی سرحد پربھی وارگروپس بنائے جائیں گے۔

رپورٹ کے مطابق ایک بریگیڈ میں تین چاریونٹ ہوتی ہے۔ ہریونٹ میں تقریباً 800 جوان ہوتے ہیں۔ ہرآئی بی جی میں پانچ ہزارجوان شامل ہوں گے، جسےمیجرجنرل رینک کا افسر لیڈ کرے گا۔ فوجی ذرائع نےبتایا کہ مغربی کمانڈ میں انٹیگریٹیڈ بیٹل گروپ کی صلاحیت جانچنے کے لئےایک ٹریننگ کی گئی تھی، جسے لےکراعلیٰ افسران کا فیڈ بیک مثبت رہا اورجلد ہی دوسے تین آئی بی جی کی تعمیرکی جائے گی۔

Loading...

پاکستانی دہشت گردی سے ایسے نمٹے گی فوج

آئی بی جی کے لئے دو طرح کے گروپوں کی ٹریننگ کی گئی۔ ایک گروپ کو حملے کے دوران فوج پارہونے والی سرگرمیوں کے علاوہ جنگ سے متعلق کاموں کی ذمہ داری دی گئی جبکہ دوسرے کودشمن کےحملے کا سامنا کرنے کا ذمہ سونپا گیا۔ اس ٹریننگ میں بریگیڈ کے بجائےآئی بی جی کا استعمال کیا گیا۔ واضح رہےکہ کافی وقت سے فوج کی جدید کاری کی ضرورت محسوس کی جارہی ہے۔ وزیردفاع راجناتھ سنگھ نےفوج کی جدید کاری میں پوری مدد کرنے کا وعدہ کیا ہے۔

Loading...