اپنا ضلع منتخب کریں۔

    'انشاء اللہ ایک دن پاکستان کی پارلیمنٹ پر لہرائیں گے ترنگا'، کون ہیں ایسا کہنے والے پروفیسر شیخ صادق؟

    'انشاء اللہ ایک دن پاکستان کی پارلیمنٹ پر لہرائیں گے ترنگا'، کون ہیں ایسا کہنے والے پروفیسر شیخ صادق؟

    'انشاء اللہ ایک دن پاکستان کی پارلیمنٹ پر لہرائیں گے ترنگا'، کون ہیں ایسا کہنے والے پروفیسر شیخ صادق؟

    India-Pakistan Rift : پاکستان کے نئے فوجی سربراہ عاصم منیر احمد نے حال ہی میں اپنی ذمہ داریاں سنبھالی ہیں ۔ دوسرے فوجی سربراہوں کی طرح عاصم منیر نے بھی عہد سنبھالتے ہی کشمیر پر قبضہ کرنے کا راگ الاپنا شروع کردیا ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | New Delhi
    • Share this:
      نئی دہلی : پاکستان کے نئے فوجی سربراہ عاصم منیر احمد نے حال ہی میں اپنی ذمہ داریاں سنبھالی ہیں ۔ دوسرے فوجی سربراہوں کی طرح عاصم منیر نے بھی عہد سنبھالتے ہی کشمیر پر قبضہ کرنے کا راگ الاپنا شروع کردیا ۔ انہوں نے پاکستان مقبوضہ کشمیر میں کنٹرول لائن کا دورہ کیا ۔ اس دوران انہوں نے کہا کہ پاکستان کی فوج اپنے دشمنوں کو منہ توڑ جواب دیتی رہے گی ۔ ان کے اس بیان کے بعد ٹویٹر پر دونوں ممالک کے لوگوں کے درمیان جنگ کا ماحول پیدا ہوگیا ۔

      سویڈن کی Uppsala University میں پیس اینڈ کنفلکٹس ریسرچ کے پروفیسر اشوک سوین نے ٹویٹ کیا کہ ہندوستانی فوج کے جنرل کے مطابق وہ پاکستان کے کنٹرول والے کشمیر کو واپس لے سکتے ہیں ۔ وہیں پاکستان کے نئے فوجی سربراہ کہہ رہے ہیں کہ وہ ہندوستان کے کنٹرول والے کشمیر کا حصہ لیں گے، اس سب کے درمیان کیا کسی نے عام کشمیریوں سے کبھی پوچھا ہے کہ وہ کیا چاہتے ہیں؟ اس کے بعد ٹویٹر پر یوزرس کے درمیان کشمیر کو لے کر وار شروع ہوگئی ۔



       

      پاکستان کے کراچی کی رہنے والی ایکٹر ، یوٹیوبر، سماجی کارکن سحر شنواری نے ٹویٹ کیا کہ کاش ، پشاور سے لے کر کنیا کماری تک سارا پاکستان ہوتا، تو کتنا مزہ آتا ۔ اس پر جوابی حملہ کرتے ہوئے ٹیپو سلطان پارٹی کے بانی پروفیسر شیخ صادق نے لکھا: خواب دیکھنا بند کرو، انشا اللہ ایک دن آئے گا جب ہم پاکستان کی پارلیمنٹ پر ترنگا لہرائیں گے ۔ وہیں ایک یوزر نے پروفیسر اشوک سوین کے ٹویٹ پر جواب دیا کہ عام کشمیری اپنی خواہش ظاہر کرچکے ہیں ۔



       

       

      سندھودیش کے آفیشیل ٹویٹر ہینڈل کے ذریعہ اشوک سوین کو جواب دیا گیا کہ عام کشمیریوں کی خواہش پہلے ہی ڈاکیومنٹڈ ہے ۔ بس پاکستان اور وہاں کے لوگ اس کو ماننے کیلئے تیار نہیں ہیں ۔ اس میں آگے لگا گیا ہے کہ جموں و کشمیر کے لوگوں کی خواہش 26 اکتوبر 1947 کو دستاویزات میں درج کردی گئی ہے ۔ یہ دستاویز جموں و کشمیر کے مہاراجہ ہری سنگھ کے دستخط شدہ ہندوستان میں انضمام کے کاغذ ہیں ۔

      یہ بھی پڑھئے: Himachal Exit Polls : ہماچل میں بی جے پی آگے، کانگریس دے رہی ٹکر، اے اے پی سب سے پیچھے


      یہ بھی پڑھئے: Exit Polls: گجرات میں بی جے پی کو واضح اکثریت کا اندازہ، جانئے کانگریس اور AAP کا حال



      ٹیوٹ میں مزید لکھا گیا ہے کہ اس کے بعد بھی پاکستان 1947 سے اب تک لگاتار کشمیر پر قبضہ کرنے کی ناکام کوشش کررہا ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: