ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

ہندوستان میں کورونا وائرس کے بڑھتے خطرے سے اس طرح نمٹے گی حکومت ، بڑے پیمانے پر ٹیسٹ کی تیاری

ایڈوائزری میں کووڈ 19 کیلئے چار اپریل 2020 سے تیزی سے اینٹی باڈی پر مبنی خون کی جانچ کرنے کی ہدایت دی گئی ہے ۔

  • Share this:
ہندوستان میں کورونا وائرس کے بڑھتے خطرے سے اس طرح نمٹے گی حکومت ، بڑے پیمانے پر ٹیسٹ کی تیاری
ہندوستان میں کورونا وائرس کے بڑھتے خطرے سے اس طرح نمٹے گی حکومت ، بڑے پیمانے پر ٹیسٹ کی تیاری

حکومت نے بتایا ہے کہ اگر ہندوستان میں بڑے پیمانے پر کورونا وائرس کا پھیلاو ہوتا ہے تو اس سے کیسے نمٹے گی ۔ اس میں زیادہ معاملات والے کلسٹر اور بڑی سطح پر مہاجرین کے علاقے یا بیرون ممالک سے نکالے گئے لوگوں کے سینٹر جیسی جگہوں کیلئے حکمت عملی بتائی گئی ہے ۔ بڑے پیمانے پر کورونا وائرس کی پھیلاو سے نمٹنے کیلئے انڈین کاونسل آف میڈیکل ریسرچ کے ڈیپارٹمنٹ آف ہیلتھ ریسرچ کی جانب سے ایک ایڈوائزری جاری کی گئی ہے ۔ اس ایڈوائزری میں کووڈ 19 کیلئے چار اپریل 2020 سے تیزی سے اینٹی باڈی پر مبنی خون کی جانچ کرنے کی ہدایت دی گئی ہے ۔


جاری کی گئی ایڈوائزری میں کہا گیا ہے کہ یہاں پر انفلوئنزا جیسی بیماریوں کے معاملات کی جانچ طبی مراکز پر کی جائے گی ۔ کسی بھی طرح کے اضافہ پر نظر رکھی جائے گی اور اضافی جانچ کیلئے اس کو سرولانس افسر یا سی ایم او کی جانکاری میں لایا جائے گا ۔


جاری ایڈوائزی کے مطابق ہیلتھ سینٹر پر انفلوئنزا کی علامت والے سبھی لوگوں کی مسلسل اینٹی باڈی ٹیسٹ کیلئے نگرانی کی جائے گی ۔ ایسے میں اگر ان کا ٹیسٹ منفی آتا ہے اور ضرورت محسوس ہوتی ہے تو فوری طور پر آر ٹی ۔ پی سی آر کے ذریعہ گلے اور ناک سے سیمپل لے کر اس کی تصدیق کی جائے گی ۔


آر ٹی ۔ پی سی آر بھی نگیٹو آتا ہے تو اس کا مطلب ہوگا کہ انہیں کووڈ ۱۹ سے الگ انفلوئنزا ہوسکتا ہے ۔ اگر آر ٹی ۔ پی سی آر کا ٹیسٹ مثبت آتا ہے تو انہیں کووڈ 19 کا مصدقہ معاملہ مانا جائے گا اور پروٹوکول کے اعتبار سے قدم اٹھائے جائیں گے تاکہ انہیں الگ کیا جاسکے ، علاج کیا جاسکے اور ان کے رابطے میں آئے لوگوں کی شناخت کی جاسکے ۔ وہیں ۔ اگر انفلوئنزا کے مریضوں کا آر ٹی ۔ پی سی آر نہیں کیا جاتا ہے تو انہیں ہوم کوارنٹائن میں رکھا جائے گا اور پھر سے 10 دنوں کے بعد اینٹی باڈی ٹیسٹ کیا جائے گا ۔ جس میں اگر اینٹی باڈی ٹیسٹ نگیٹو آتا ہے تو کووڈ 19 سے الگ انفلوئنزا مانا جائے گا اور اگر ٹیسٹ مثبت آتا ہے تو ایسی صورت میں انفیکشن کا امکان ہوگا اور انہیں 10 دنوں کیلئے پھر سے الگ رکھا جائے گا ۔

اگر اینٹی باڈی ٹیسٹ کا نتیجہ مثبت آتا ہے تو طبی تجزیہ کے بعد اسپتال میں علاج کیلئے یا آئیسولیشن میں پروٹوکول کے تحت لے جایا جائے گا ۔ پروٹوکول کے مطابق ہی کارروائی کی جائے گی اور اس کے مطابق ہی رابطے میں آئے لوگوں کی شناخت کی جائے گی ۔ اگر بیماری سنگین حالت میں پہنچ جاتی ہے تو نزدیکی کووڈ 19 اسپتال میں بھیج دیا جائے گا ۔



انفلوئنزا جیسی بیماریوں کی علامت والے سبھی لوگوں کو 14 دن گھر میں کیا جائے گا کوارنٹائن

ایسے لوگوں کی شناخت کرنے کے بعد آئی ایل آئی کی علامت والے سبھی لوگوں کو احتیاطا اپنے گھروں میں 14 دنوں کیلئے کوارنٹائن کیا جائے گا ۔ بتادیں کہ ذرائع کے مطابق حکومت پہلے ہی پچاس لاکھ ریپڈ ٹیسٹ کٹ کیلئے آرڈر دے چکی ہے ۔
First published: Apr 04, 2020 11:53 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading