کشمیر میں سیکورٹی دستوں کو ملی بڑی کامیابی، مارا گیا ذاکر موسیٰ کا وارث

جموں وکشمیر کے پولیس ڈی جی پی دلباغ سنگھ نے بدھ کو پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ترال کے انکاؤنٹر میں تین ملٹینٹ مارے گئے۔ یہ تینوں ملٹینٹ ترال کے ہی رہنے والے تھے۔

Oct 23, 2019 03:14 PM IST | Updated on: Oct 23, 2019 03:16 PM IST
کشمیر میں سیکورٹی دستوں کو ملی بڑی کامیابی، مارا گیا ذاکر موسیٰ کا وارث

کشمیر میں سیکورٹی دستوں کو ملی بڑی کامیابی، مارا گیا ذاکر موسیٰ کا وارث

جموں وکشمیر میں منگل کو ترال سیکٹر میں ہوئے انکاؤنٹر میں ہندوستانی سلامتی دستوں کو بڑی کامیابی ہاتھ لگی ہے۔ جموں وکشمیر پولیس اور فوج کی طرف سے چلائے گئے آپریشن میں مارے گئے تین ملٹینٹوں میں سے ایک غزوتہ الہند کا سرغنہ حامد للہاری بھی شامل تھا۔ سال 2016 میں سرگرم ہوئے للہاری نے ذاکر موسیٰ کے بعد اس گروپ کی کمان اپنے ہاتھ میں لی تھی۔

جموں وکشمیر کے پولیس ڈی جی پی دلباغ سنگھ نے بدھ کو پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ترال کے انکاؤنٹر میں تین ملٹینٹ مارے گئے۔ یہ تینوں ملٹینٹ ترال کے ہی رہنے والے تھے۔ ڈی جی پی نے بتایا کہ ذاکر موسیٰ کے بعد غزوتہ الہند کا سرغنہ حامد للہاری کو بنایا گیا تھا۔ للہاری نے ہی نوید اور جنید کو بھی اپنی ملٹینٹ تنظیم میں شامل کر لیا تھا۔ یہ تینوں جیش کے لئے ہی کام کیا کرتے تھے۔

غور طلب ہے کہ جموں وکشمیر سے آرٹیکل 370 ہٹائے جانے کے بعد سے ہی پاکستان کی دہشت گرد تنظیمیں ہندوستان میں بڑا حملہ کرنے کی فراق میں ہیں۔ ہندوستان میں حملہ کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے جیش اور حزب المجاہدین کے دہشت گردوں نے کئی اور دہشت گرد تنظیموں کو اپنے ساتھ جوڑ لیا ہے۔ حالانکہ ہندوستانی سیکورٹی فورسیز کی مستعدی کے آگے ان کی ایک بھی نہیں چل رہی ہے۔

Loading...