کشمیرپراعجازشاہ کابیان: عالمی برادری کوپاکستان سے زیادہ ہندوستان پرہے بھروسہ

کشمیرکے معاملے ہرمحاذ پرعمران خان منہ کی کھا رہے ہیں۔سفارتی سطح پرپاکستان الگ تھلگ پڑا چکا ہے اب عمران خان حکومت کے اندرسے بھی آوازبلندہورہی ہے۔

Sep 12, 2019 01:39 PM IST | Updated on: Sep 12, 2019 01:39 PM IST
کشمیرپراعجازشاہ کابیان: عالمی برادری کوپاکستان سے زیادہ ہندوستان پرہے بھروسہ

کشمیرپراعجازشاہ کابیان۔(تصویر:نیوز18 ہندی)۔

کشمیرکے معاملے ہرمحاذ پرعمران خان منہ کی کھا رہے ہیں۔سفارتی سطح پرپاکستان الگ تھلگ پڑا چکا ہے اب عمران خان حکومت کے اندرسے بھی آوازبلندہورہی ہے۔فواد چودھری کے بعد اب وفاقی وزیرداخلہ اعجاز شاہ نے حکومت کو آئینہ دکھایا ہے۔ایک ٹی وی مباحثے میں اعجازشاہ نے کہا کہ کشمیرپرہماری باتیں سنی نہیں جارہی ہیں،کیونکہ ہم پرکسی کو بھروسہ نہیں رہا۔ ہمیں اس مقام تک ہمارے حکمرانوں نے پہنچایا ہے۔

پاکستان، جوجموں و کشمیر کے مسئلہ پرپوری دنیا کے سامنے التجا کرتا نظرآرہا ہے،آخر کاراس نے شکست تسلیم کرلی ہے۔ عمران کی حکومت میں وزیرداخلہ بریگیڈیئراعجازاحمد شاہ نے اعتراف کیا ہے کہ اسلام آباد مسئلہ کشمیر کے حق میں دنیا کا مقابلہ کرنے کے قابل نہیں ہے۔ پوری دنیا اس مسئلے پرہندوستان کے ساتھ کھڑی ہے۔اعجازاحمد شاہ کا کہناہے کہ عمران خان حکومت عالمی برادری کو کشمیر کے بارے میں اپنے موقف کی متعلق جانکاری فراہم کرنے میں ناکام رہی ہے۔ شاہ یہاں نہیں رکے اور انہوں نے وزیراعظم عمران خان اور ان کی حکومت پرملک کے امیج کومتاثر کرنے کا الزام لگایا۔

Loading...

عالمی برادری پرہندوستان کا اثر

اعجازاحمد شاہ نے کہا کہ کشمیر کے معاملے میں ، عالمی برادری پاکستان پراعتماد نہیں کرتی ہے۔ انہوں نے کہا جب ہم (پاکستان) کہتے ہیں کہ ہندوستان نے کشمیر میں کرفیو نافذ کردیا ہے اور لوگوں کو دوائیں نہیں دی جارہی ہیں تو پھر دنیا ہماری باتوں پر یقین نہیں کرتی ہے۔ اسی کے ساتھ ساتھ ، اگر ہندوستان کچھ کہتا ہے تو ، دنیا اسے سنجیدگی سے لیتے ہوئے اس پراعتماد کرتی ہے۔ پاکستان کے وزیر داخلہ نے سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو اور سابق صدرپرویز مشرف سمیت عمران خان پربھی پاکستان کا شبیہ کو متاثرکرنے کا الزام لگایاہے۔

یو این ایچ آر سی پرہندوستان کی کامیابی

جنیوا میں یواین ایچ آر سی یعنی اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کے حالیہ اجلاس کے دوران، پاکستان کے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے دعویٰ کیا کہ ہندوستان نے آرٹیکل - 370 کو ہٹانے کے بعد جموں و کشمیر کے کئی سیاسی لیڈروں اوراہم شخصیات کو جیل بھیج دیا اور کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی کی جارہی ہے۔ پاکستان ان الزامات کے جواب میں، ہندوستان نے کہا کہ پاکستان دنیا کے سامنے کشمیر کےمتعلق من گھڑت کہانیاں بیان کررہا ہے ، جبکہ اس کی اپنی سرزمین دہشت گردوں کے لئے محفوظ ترین ٹھکانے ہے۔ دہشت گرد وہاں پھل پھولتے ہیں۔ پاکستان خودسرحدپارسے دہشت گردی کو فروغ دے رہاہے۔اعجازاحمد شاہ کا کہناہے کہ عمران حکومت کو وضاحت کرنا چاہیے کہ امریکہ، فرانس اور روس جیسے ممالک نے آرٹیکل 370 کو ہٹانے کے ہندوستان کے اقدام کی حمایت کیوں کی ہے۔

پاکستان نے کسی کا نام لیا

پاکستان نے جموں و کشمیر میں یو این ایچ آر سی میں انسانی حقوق کی صورتحال کے متعلق بتاتے ہوئے کہاکہ اسے اس معاملے پر 60 ممالک کی حمایت حاصل ہے۔ تاہم ، پاکستان نے کسی ملک کا نام نہیں لیا۔ یو این ایچ آر سی میں پاکستانی وفد کے ایک رکن نے بتایا کہ ان ممالک کی ایک فہرست ہندوستانی وفد کو پیش کی جائے گی۔ تاہم ، اس مسئلے سے وابستہ افراد کا کہنا ہے کہ پاکستان کو57 رکنی تنظیم آئی او سی اور چین کی حمایت حاصل ہے۔ تاہم ، انڈونیشیا جیسے بہت سے ممبران نے اپنے ہندوستانی ہم منصبوں کے ساتھ بات چیت کے دوران اس سے خود کودوررکھا۔

Loading...