ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

کولکاتہ میں مرزا غالب پر بین الاقوامی سیمینار کا انعقاد

غالب کی شاعری ان کے اپنے زمانے سے اگے کی تھی ، جس کا اظہار خود غالب نے بھی اپنی شاعری میں کیا ہے ۔

  • Share this:
کولکاتہ میں مرزا غالب پر بین الاقوامی سیمینار کا انعقاد
کولکاتہ میں مرزا غالب پر بین الاقوامی سیمینار کا انعقاد

مرزا غالب کی وفات کو ڈیڑھ سو سال گزر جانے کے بعد بھی ان کی شاعری و شخصیت کی معنویت کی اہمیت اپنی جگہ آج بھی برقرار ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ اس مرتبہ کولکاتہ کے دو مشہور ادارے اردو اکیڈمی و ایران سوساٸٹی مرزا غالب پر بین الاقوامی سیمینار کا اہتمام کررہے ہیں ۔ ایران سوساٸٹی میں منعقدہ قومی سیمینار میں مقررین نے غالب کی وفات کو ڈیڑھ سو سال مکمل ہونے کے بعد بھی ان کی شاعری کو ہر دور کی نٸی نسل کیلئے تحقیق و ان کے فلسفہ سے استفادہ حاصل کرنے کا ذریعہ بتایا ۔


غالب کی شاعری ان کے اپنے زمانے سے اگے کی تھی ، جس کا اظہار خود غالب نے بھی اپنی شاعری میں کیا ہے ۔ مقررین نے ان خیالات کا اظہار کیا ۔ سمینار میں عربی ، فارسی ، ہندی ، انگریزی و اردو سمیت پانچ زبانوں میں مقالے پڑھے گٸے ۔ سیمینار میں شامل کولکاتہ کے مولانا آزاد کالج کے پروفیسرعاصم شہنواز شبلی نے کہا کہ غالب اردو شاعری کا ایک بڑا نام ہے ، جن کی شاعری سے مختلف زبانوں کے شعرا نے استفادہ حاصل کیا ۔ غالب کی شاعری نے اردو زبان کے فروغ میں اہم کردار ادا کیا ہے ۔


سمینار میں شریک رشمی پانڈا  نے کہا کہ غالب نے کولکاتہ کا بھی سفر کیا تھا ۔ چانچہ کولکاتہ میں اردو زبان کے فروغ میں غالب کی شاعری نے اہم کردارادا کیا ہے ۔ یہ الگ بات ہے کہ اس وقت بنگال کے ادو شعرا نے غالب کی شاعری کی اتنی پذیراٸی نہیں کی جتنی وہ حقدار تھی ۔ تاہم بعد کے شعرا نے ان کے فلسفہ سے استفادہ کیا ۔ آئندہ 21 فروری سے ادو اکیڈمی بھی جشن غالب کا اہتمام کرنے جارہی ہے ۔

First published: Feb 15, 2020 10:13 PM IST