உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Refund Rules: انڈین ریلوے میں رقم کی واپسی کے قوانین میں تبدیلی، ٹکٹوں کی منسوخی کے چارجز ہونگے مہنگے

    ان ٹکٹوں کی بکنگ کرتے وقت مسافر 5 فیصد جی ایس ٹی ادا کرتے ہیں۔

    ان ٹکٹوں کی بکنگ کرتے وقت مسافر 5 فیصد جی ایس ٹی ادا کرتے ہیں۔

    IRCTC Changes Refund Rules: سرکلر میں وضاحت کی گئی ہے کہ ٹرین ٹکٹ کی بکنگ ایک معاہدہ ہے جس میں خدمات فراہم کرنے والا گاہک کو خدمات فراہم کرنے کا وعدہ کرتا ہے۔ جب مسافر کی طرف سے معاہدے کی خلاف ورزی ہوتی ہے، تو ٹرین ٹکٹ کی منسوخی سے سروس فراہم کرنے والے کو ایک چھوٹی سی رقم کے ساتھ معاوضہ دیا جاتا ہے

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Hyderabad | Mumbai | Gujarat | Karnataka
    • Share this:
      IRCTC Refund Rules 2022: اگر آپ کو انڈین ریلوے کے ذریعہ سفر کرنا ہے اور اتفاق سے ریسرو ٹکٹوں کو منسوخ کرنا پڑے تو آپ کیا کریں گے؟ ظاہر سی بات ہے کہ اس کے لیے رقم کی واپسی یعنی ریفنڈ کے لیے اپلائی کیا جاتا ہے، لیکن اب تصدیق شدہ ٹرین ٹکٹوں کی منسوخی مہنگی ہو جائے گی کیونکہ اس پر بھی گڈز اینڈ سروسز ٹیکس (GST) عائد ہوگا۔ ایک سرکلر جاری کرتے ہوئے وزارت خزانہ کے ٹیکس ریسرچ یونٹ نے کہا کہ ٹکٹوں کی بکنگ ایک معاہدہ ہے، جس کے تحت سروس فراہم کرنے والا انڈین ریلوے کیٹرنگ اینڈ ٹورازم کارپوریشن (IRCTC) یا انڈین ریلوے (Indian Railways) کسٹمر کو خدمات فراہم کرنے کا وعدہ کرتا ہے۔

      وزارت ریلوے نے ایک سرکلر میں کہا ہے کہ 23 ستمبر 2017 کو جاری کردہ ہدایات کے مطابق ٹکٹوں کی منسوخی کی صورت میں کرایہ کی واپسی کے اصول کے مطابق واجب الادا رقم کی واپسی کی جائے گی، اس کے ساتھ ساتھ بکنگ کے وقت وصول کی جانے والی جی ایس ٹی کی کل رقم مکمل طور پر بھی واپس کی جاتی ہے۔

      تاہم کینسلیشن یا کلرکیج چارج ریفنڈ کے اصول کے مطابق لاگو ہوتا ہے اور کینسلیشن یا کلرکیج چارج پر جی ایس ٹی کی رقم ریلوے کے ذریعہ اب بھی برقرار ہے، جسے صارفین کو ادا کرنا ہوگا۔ یہ صرف اے اور فرسٹ کلاس میں لاگو ہوتا ہے۔ جی ایس ٹی وزارت خزانہ کی جانب سے جمع کیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ دیگر قواعد و ضوابط میں کوئی تبدیلی نہیں ہوگی۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      کینسلیشن پر جی ایس ٹی کیوں؟

      سرکلر میں وضاحت کی گئی ہے کہ ٹرین ٹکٹ کی بکنگ ایک معاہدہ ہے جس میں خدمات فراہم کرنے والا گاہک کو خدمات فراہم کرنے کا وعدہ کرتا ہے۔ جب مسافر کی طرف سے معاہدے کی خلاف ورزی ہوتی ہے، تو ٹرین ٹکٹ کی منسوخی سے سروس فراہم کرنے والے کو ایک چھوٹی سی رقم کے ساتھ معاوضہ دیا جاتا ہے، جو کینسلیشن چارج کے طور پر جمع کیا جاتا ہے۔ چونکہ کینسلیشن چارج معاہدے کی خلاف ورزی کے بجائے ادائیگی ہے، اس لیے اس پر بھی جی ایس ٹی لاگو ہوگی۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: