உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جے پور: 4 سال کی بچی سے آبروریزی کے بعد قتل، پولیس نے 24 گھنٹے کے اندر ملزم کو کیا گرفتار

    Jaipur Crime News: بچی سے آبروریزی کے بعد اس کا قتل معاملے کا ملزم پولیس سے بچنے کے لئے کھیت میں کھڑی فصلوںکے درمیان چھپا تھا۔ معصوم کی موت کے بعد ملزم کی گرفتاری سے متعلق لوگ مسلسل مظاہرہ کر رہے تھے۔

    Jaipur Crime News: بچی سے آبروریزی کے بعد اس کا قتل معاملے کا ملزم پولیس سے بچنے کے لئے کھیت میں کھڑی فصلوںکے درمیان چھپا تھا۔ معصوم کی موت کے بعد ملزم کی گرفتاری سے متعلق لوگ مسلسل مظاہرہ کر رہے تھے۔

    Jaipur Crime News: بچی سے آبروریزی کے بعد اس کا قتل معاملے کا ملزم پولیس سے بچنے کے لئے کھیت میں کھڑی فصلوںکے درمیان چھپا تھا۔ معصوم کی موت کے بعد ملزم کی گرفتاری سے متعلق لوگ مسلسل مظاہرہ کر رہے تھے۔

    • Share this:
      جے پور: نرینا میں 4 سال کی بچی کے ساتھ آبروریزی اور قتل (Rape And Murder) معاملے میں جے پور دیہات پولیس کو بڑی کامیابی حاصل ہوئی ہے۔ پولیس نے ملزم سریش بلائی کو گرفتار کرلیا ہے۔ جے پور دیہات کے تھانہ نرینا میں چار سال کی معصوم بچی کا اغوا کرکے آبروریزی اور قتل کا سنسنی خیز معاملہ سامنے آیا تھا، جس میں نرینا اور آس پاس علاقے کے لوگوں کے ذریعہ ملزم کی گرفتاری کا مطالبہ کو لے کر نرینا سی ایچ سی پر کل رات سے ہی احتجاجی مظاہرہ کیا جا رہا تھا۔ حادثہ کی سنگینی کو دیکھتے ہوئے جے پور دیہات کے ایس پی (Jaipur Rural SP) نے کئی ٹیموں کی تشکیل کرکے ملزم کی گرفتاری کی کوششیں تیز کردی تھیں۔ پولیس کو ملزم سریش بلائی کو 24 گھنٹے کے اندر گرفتار کرنے میں کامیابی حاصل کی ہے۔

      دراصل، 12 اگست کو بچی کے والد کے ذریعہ بچی کے اغوا کی نرینا تھانے میں رپورٹ درج کروائی گئی تھی۔ اس کے بعد تالاب میں تیرتی ہوئی بچی کی لاش ملنے پر علاقے میں سنسنی پھیل گئی تھی۔ ایسے میں گاوں والوں کے ذریعہ بھی ملزم کی گرفتاری کے لئے احتجاجی مظاہرہ کیا گیا تھا۔ مہلوک بچی کا پوسٹ مارٹم کروایا گیا تو اس میں آبروریزی کرکے قتل کرنے کا انکشاف ہوا تھا۔

      پولیس ٹیم کو کیسے ملی کامیابی

      معاملے کی سنجیدگی کو دیکھتے ہوئے ملزم کی گرفتاری کے لئے جے پور دیہات کے ایس پی نے پولیس افسران کی ٹیم تشکیل دی۔ پولیس کی ٹیموں نے سائبر تکنیکی اور پولیس کے روایتی طریقوں کا استعمال کرکے 24 گھنٹے کے اندر ملزم سریش کمار بلائی کو گرفتار کرلیا۔ اسے دودو کے لاپوڑیا گاوں کے کھیتوں میں لگی فصل کے بیچ سے گرفتار کیا گیا۔

      کئی پولیس اہلکاروں کی ٹیمیں کر رہی تھیں جانچ

      اس معاملے کے پردہ فاش کے لئے تین ایڈیشنل پولیس سپرنٹنڈنٹ، تین پولیس اور ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ، تقریباً 20 تھانوں کے تھانہ انچارج سمیت تقریباً 600 پولیس اہلکاروں کو لگایا گیا تھا۔ اس مہم میں کورونا بحران میں گاوں سطح پر چلائی گئی مہم میرا گاوں میری ذمہ داری کے تحت بنائے گئے واٹس اپ گروپ کا اہم کردار رہا۔ پہلے تو ٹیموں کے ذریعہ محنت کرکے ملزم کو نامزد کیا گیا۔ نامزد کرنے کے بعد پولیس ٹیمیں جب مسلسل ملزم کا پیچھا کر رہی تھیں تب ملزم بار بار چھپنے کے لئے مقام بدل رہا تھا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: