உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    اشوک گہلوت کا وزیر اعلیٰ عہدہ سے ہٹنا طے، اگست میں ہی لکھی جاچکی ہے اسکرپٹ

    اشوک گہلوت کا وزیر اعلیٰ عہدہ سے ہٹنا طے

    اشوک گہلوت کا وزیر اعلیٰ عہدہ سے ہٹنا طے

    راجستھان (Rajasthan) کے وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت (Chief Minister Ashok Gehlot) سے متعلق تمام قیاس آرائیاں کی جارہی ہیں۔ کچھ کا کہنا ہے کہ گہلوت نے کانگریس صدر کا الیکشن نہیں لڑا، پھر تو وزیر اعلیٰ بنے رہ سکتے ہیں، تو وہیں کچھ کا کہنا ہے کہ حقیقت کھ اور ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Jaipur, India
    • Share this:
      جے پور: راجستھان (Rajasthan) کے وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت (Chief Minister Ashok Gehlot) سے متعلق تمام قیاس آرائیاں کی جارہی ہیں۔ کچھ کا کہنا ہے کہ گہلوت نے کانگریس صدر کا الیکشن نہیں لڑا، پھر تو وزیر اعلیٰ بنے رہ سکتے ہیں، تو وہیں کچھ کا کہنا ہے کہ حقیقت کھ اور ہے۔ راجستھان میں ہوئی بغاوت سے پہلے تک اشوک گہلوت گاندھی فیملی کے وفاداروں اور بھروسے مند کی فہرست میں سب سے اوپر تھے۔ اب پورا معاملہ بدل چکا ہے اور کانگریس اعلیٰ کمان کے فیصلے کا انتظار ہو رہا ہے۔ حالانکہ کانگریس صدر عہدے پر ملیکا ارجن کھڑگے کا نام طے ہونے اور سونیا گاندھی سے اشوک گہلوت کی ملاقات کے بعد تنظیمی جنرل سکریٹری کے سی وینو گوپال نے واضح طور پر کہا تھا کہ پارٹی اگلے دو دن میں راجستھان کے وزیر اعلیٰ کا فیصلہ کرلے گی، وہ وقت تو گزر چکا ہے۔

      ابھی تک یہ عام خیال تھا کہ اشوک گہلوت کو سونیا گاندھی، کانگریس صدر عہدے کا الیکشن لڑوانا چاہتی تھیں اور اس لئے راجستھان کے وزیر اعلیٰ عہدے سے استعفیٰ مانگا جا رہا تھا۔ کانگریس سے منسلک اعلیٰ ذرائع کے مطابق، اشوک گہلوت کو ہٹانے کی اسکرپٹ اگست میں ہی لکھی جاچکی تھی۔

      اگست میں یہ عام رائے بن چکی تھی کہ راجستھان میں اشوک گہلوت کی قیادت میں 2023 میں کانگریس حکومت کا دوبارہ آنا ناممکن سا لگ رہا ہے۔ کانگریس اعلیٰ کمان نے فیڈ بیک اور سروے سے یہ اندازہ لگایا تھا۔ یہ خیال تب اور مضبوط ہوئی جب راجستھان میں کرولی، جودھپور سمیت کچھ جگہ پر فرقہ وارانہ فسادات کے حادثات میں اضافہ ہوا اور گہلوت حکومت خوشنودی کے الزامات سے گھر گئی تھی۔

      ’جو گارنٹی دے رہا ہو اسے وزیر اعلیٰ بنا دیں‘

      وہیں، سچن پائلٹ، ہائی کمان کے سامنے اشوک گہلوت کی حکومت دوبارہ نہیں آپانے کے پرانے ٹریک ریکارڈ اور موجودہ حالات کی رپورٹ کی بنیاد پر دعویٰ مسلسل کر ہی رہے تھے کہ راجستھان میں اشوک گہلوت کی قیادت میں پھر سے کانگریس کی حکومت ممکن نہیں ہے۔ خود وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت نے دو دن پہلے کہا تھا کہ اگست میں ہی وہ پارٹی صدر سونیا گاندھی کو کہہ چکے تھے کہ راجستھان میں حکومت دوبارہ لانے کی جو گارنٹی دے رہا ہو، اسے وزیر اعلیٰ بنادیں۔ یعنی گہلوت جانتے تھے کہ راجستھان میں کانگریس حکومت کے حالات اتنے بگڑچکے ہیں کہ پائلٹ کو کمان سونپ دیں تب بھی حکومت کی واپسی آسان نہیں ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: