بابری مسجد معاملہ: عدالت سے انصاف کی امید، یوگی آدتیہ ناتھ کے بیان کی کوئی اہمیت نہیں: جماعت اسلامی

جماعت اسلامی ہند کا کہنا ہےکہ موجودہ حکومت ہرمحاذ پرناکام ثابت ہوئی ہے، وہ اصل مسائل کوحل نہیں کرسکی ہے، اس لئےاصل مسائل سےتوجہ ہٹانےاوراپنی ناکامیوں پرپردہ ڈالنےکے لئےاس طرح کے چیزوں کومنظرعام پرلاتی ہے۔

Oct 09, 2019 08:37 PM IST | Updated on: Oct 10, 2019 06:06 PM IST
بابری مسجد معاملہ: عدالت سے انصاف کی امید، یوگی آدتیہ ناتھ کے بیان کی کوئی اہمیت نہیں: جماعت اسلامی

جماعت اسلامی ہند کو بابری مسجد معاملے میں سپریم کورٹ سے انصاف ملنے کی امید۔

بابری مسجد- رام جنم بھومی قضیہ بات چیت سے حل نہ ہونےکے بعد معاملے کی سماعت سپریم کورٹ میں جاری ہے۔ عدالت کا فیصلہ اس سال کےآخرتک آنے کی امید ہے، لیکن اس دوران مختلف سیاسی لیڈران کےبیانات بھی سامنےآتے رہتے ہیں، اسی ضمن میں اترپردیش کےوزیراعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کا بیان بھی سامنےآیا ہے۔ انہوں نےاشاروں اشاروں میں کہا کہ آنےوالے وقت میں ہم لوگوں کو بہت اچھی خوشخبری سننےکو ملےگی۔ اس پرجماعت اسلامی ہند کا کہنا ہےکہ ہمیں دستورہند اورعدالت پرمکمل اعتماد ہے، کسی کےبیانات کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔ جماعت اسلامی ہند کےنائب صدرانجینئرمحمد سلیم کا کہنا ہےکہ عدالت میں بابری مسجد معاملےکی سماعت جاری ہے، اس میں یوگی آدتیہ ناتھ کے بیان کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔

انجینئرمحمد سلیم نےکہا کہ معاملہ عدالت میں ہےاور ہم مسلسل کہتے رہے ہیں کہ ہمیں عدالت کےفیصلے پر بھروسہ ہے، لیکن بعض لوگ دستورہند کے خلاف بیان بازی کرتے ہیں اور لوگوں کو گمراہ کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ ایسے میں ان لیڈروں کے خلاف عدالت کو از خود نوٹس لینا چاہئے۔ جماعت اسلامی ہند کےنائب صدرنےمزید کہا کہ موجودہ حکومت ہر محاذ پرناکام ثابت ہوئی ہے،  وہ اصل مسائل کوبھی نہیں حل کرسکی ہے، اس لئےاصل مسائل سےتوجہ ہٹانےاوراپنی ناکامیوں پرپردہ ڈالنےکےلئےاس طرح کے چیزوں کومنظرعام پر لاتی ہے۔

Loading...

واضح رہےکہ اترپردیش کے وزیراعلیٰ یوگی آدتیہ نے ہفتہ کے روزگورکھپورمیں بابری مسجد- رام مندرمعاملے کولےکربڑا بیان دیا تھا۔ انہوں نے سپریم کورٹ میں ہورہی سماعت پر اشاروں اشاروں میں کہا کہ ہم سب کو یقین ہےکہ بھگوان رام کی طاقت سےآنے والے وقت میں ہم لوگوں کو بہت اچھی خوشخبری سننےکومل سکتی ہے۔ وزیراعلیٰ یوگی کے بیان پر مسلم فریق اقبال انصاری نےکہا تھا کہ اجودھیا کوخوشخبری ضرورملے گی، لیکن عدالت ہمیشہ ثبوتوں کی بنیاد پر فیصلہ کرتا ہے۔ سپریم کورٹ جو بھی فیصلہ کرے گا، ہم اسے ماننے کوتیارہیں۔

Loading...