ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

جمعیۃ علماء قیدیوں کوضمانت دینے کےلئے سپریم کورٹ میں دائر کرے گی درخواست

کورونا کی وبا کی ہولناکیوں کے پیش نظر، جمعیۃ علماء ہند کی جیلوں میں قید قیدیوں، جن کی سزا 7 سال سےکم ہے اورجو ان کے زیرکفالت ہیں، کی مشروط ضمانت کے لئےمعزز سپریم کورٹ میں درخواست دائرکریں گے۔

  • Share this:
جمعیۃ علماء قیدیوں کوضمانت دینے کےلئے سپریم کورٹ میں دائر کرے گی درخواست
کورونا کی وبا کی ہولناکیوں کے پیش نظر، جمعیۃ علماء ہند کی جیلوں میں قید قیدیوں، جن کی سزا 7 سال سےکم ہے اورجو ان کے زیرکفالت ہیں، کی مشروط ضمانت کے لئےمعزز سپریم کورٹ میں درخواست دائرکریں گے۔

نئی دہلی: کورونا کی وبا کی ہولناکیوں کے پیش نظر، جمعیۃ علماء ہند کی جیلوں میں قید قیدیوں، جن کی سزا 7 سال سے کم ہے اورجو ان کے زیرکفالت ہیں، کی مشروط ضمانت کےلئے معزز سپریم کورٹ میں درخواست دائرکریں گے۔جمعیۃ کی جانب سے پیرکو سپریم کورٹ کے ایڈوکیٹ آن ریکارڈ ایڈوکیٹ اعجاز مقبول عرضی دائرکریں گے۔ اس سلسلے میں، جمعیۃ کے سربراہ مولانا ارشد مدنی نےکہا کہ 16 مارچ کو سپریم کورٹ نے سوموٹو نوٹس لیا تھا کہ تمام ریاستی حکومتیں جیل میں قیدیوں کی ضمانت پر ایک کمیٹی تشکیل دیں تاکہ انہیں انسانی ہمدردی کی بنیاد پرضمانت دی جاسکے۔ تاہم، ابھی تک کسی بھی ریاستی حکومت نے اس معاملے پر کوئی پہل نہیں کی ہے۔


مولانا ارشد مدنی نےکہا کہ چونکہ محکمہ صحت نے ہدایت کی ہےکہ کورونا کی وبا کو روکنےکے لئے سوشل ڈیسٹنسنگ ہی واحد موثرحل ہے اور جیسا کہ ہم جانتے ہیں کہ ملک کی جیل اپنی موجودہ صلاحیت سےکئی گنا زیادہ قیدیوں کا بوجھ اٹھا رہی ہے، لہذا معاشرتی دوری کی پیروی کرنا ناممکن ہے۔ انہوں نےکہا کہ جیلوں کے اس خوفناک سچائی کے پیش نظر، سپریم کورٹ نے اس مسئلےکو مدنظر رکھتے ہوئے ریاستی حکومتوں کو اس معاملے پر ایک ہائی پاورکمیٹی تشکیل دینےکی تجویز دی تھی، لیکن افسوس کہ ابھی تک کسی بھی ریاستی حکومت نے کوئی اقدام نہیں اٹھایا ہے۔


مولانا ارشد مدنی نےکہا کہ چونکہ محکمہ صحت نے ہدایت کی ہےکہ کورونا کی وبا کو روکنےکے لئے سوشل ڈیسٹنسنگ ہی واحد موثرحل ہے۔ فائل فوٹو
مولانا ارشد مدنی نےکہا کہ چونکہ محکمہ صحت نے ہدایت کی ہےکہ کورونا کی وبا کو روکنےکے لئے سوشل ڈیسٹنسنگ ہی واحد موثرحل ہے۔ فائل فوٹو


ممبئی کے مشہور  آرتھرروڈ جیل کا حوالہ دیتے ہوئے، اس میں کہا گیا ہے کہ ملزم اور جیل عملے کی کورونا مثبت رپورٹ کے بعد ملزمان کےکنبہ کے افراد بے چین ہوگئے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق، آرتھر روڈ جیل میں قیدیوں اور عملےکی کورونا کی تعداد 103 ہے، جنہیں علاج کےلئے ممبئی کے مختلف اسپتالوں میں رکھا گیا ہے۔ انہوں نےکہا کہ اس وقت آتھر روڈ جیل میں 800 ملزمان کی گنجائش کے ساتھ 2600 ملزمان قید ہیں، لہٰذا معاشرتی دوری کا تصور کرنا بے معنی ہے۔

مولانا ارشد مدنی نےکہا کہ مارچ کے مہینے میں ہی، سپریم کورٹ نےخود ہی فیصلہ لیا تھا اور ملک کی مختلف جیلوں سے ملزمان کی رہائی کے سلسلے میں انتظامات کرنےکا حکم دیا تھا، لیکن اب تک مہاراشٹر میں صرف 576 ملزمان کی رہائی کا عمل شروع ہوا جبکہ ہائی پاورکمیٹی 11000 ملزمین کی رہائی کی سفارش کی تھی۔  انہوں نےکہا کہ جیل انتظامیہ نے سپریم کورٹ کے اس حکم کی نافرمانی کی، جس کی شکایت سپریم کورٹ میں کی جائےگی۔
First published: May 09, 2020 10:09 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading