ہوم » نیوز » جموں وکشمیر

جموں وکشمیر: لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے گفتگو میں اردو زبان کا استعمال کرنا شروع کر دیا

جموں وکشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے پریس کانفرنس کا آغاز بشیر بدر کے شعر: 'ہم بھی دریا ہیں ہمیں اپنا ہنر معلوم ہے۔۔۔جس طرف بھی چل پڑیں گے راستہ ہو جائے گا' جبکہ اختتام: 'بہت لمبا ہے سفر ابھی بہت دور جانا ہے۔۔۔۔ گر چلتے رہے تو پاس ہی منزل کا ٹھکانہ ہے' سے کیا۔

  • UNI
  • Last Updated: Sep 19, 2020 07:20 PM IST
  • Share this:
جموں وکشمیر: لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے گفتگو میں اردو زبان کا استعمال کرنا شروع کر دیا
جموں وکشمیر: لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے گفتگو میں اردو زبان کا استعمال کرنا شروع کر دیا

سری نگر: جموں و کشمیر یونین ٹریٹری کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے اپنے گفتگو میں  ہندی کے سخت الفاظ کے بجائے اردو زبان کے الفاظ کا استعمال کرنا شروع کیا ہے۔ لیفٹینںٹ گورنر نے ہفتہ کے روز یہاں راج بھون میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس کے دوران اپنے خطاب میں نہ صرف آسان ہندی زبان کا استعمال کیا بلکہ اپنے خطاب کا آغاز بھی اردو زبان کے ایک شعر سے کیا اور اختتام بھی اردو زبان کے ہی ایک شعر سے کیا۔ منوج سنہا نے پریس کانفرنس کا آغاز بشیر بدر کے شعر: 'ہم بھی دریا ہیں ہمیں اپنا ہنر معلوم ہے۔۔۔جس طرف بھی چل پڑیں گے راستہ ہو جائے گا' جبکہ اختتام: 'بہت لمبا ہے سفر ابھی بہت دور جانا ہے۔۔۔۔ گر چلتے رہے تو پاس ہی منزل کا ٹھکانہ ہے' سے کیا۔

لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے اپنے خطاب میں اردو زبان کے الفاظ کا بھی اچھا خاصا استعمال کیا، جس سے صحافیوں کو ان کا خطاب سمجھنے میں کوئی دقت در پیش نہیں آئی۔ قابل ذکر ہے کہ 14 ستمبر کو یہاں راج بھون میں ہی جب ایک نامہ نگار نے تجویز دی تھی کہ کشمیر جیسے خطے، جس میں لوگ اردو بہ آسانی سمجھ لیتے ہیں اور ہندی سے بالکل نابلد ہیں، میں ہندی زبان کے سخت الفاظ کا استعمال نہ کیا جائے، تو موصوف کا جواب تھا کہ وہ اردو سیکھنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا: 'میں اردو سیکھنے کی کوشش کر رہا ہوں۔ ہندی کے الفاظ کا استعمال کرنے پر میں معذرت چاہتا ہوں۔ زیادہ غلط اردو بولوں گا تو وہ بھی صحیح نہیں ہے'۔ مرکزی حکومت نے حال ہی میں جموں و کشمیر میں ہندی، ڈوگری، کشمیری اور انگریزی زبانوں کو بھی سرکاری زبان کا درجہ دیا۔ اس سے قبل اردو کو کم از کم 130 برس سے یہاں کی واحد سرکاری زبان ہونے کا اعزاز حاصل تھا۔



وہیں دوسری جانب جموں و کشمیرکے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے اس یونین ٹریٹری کی تباہ حال معیشت کی بحالی کے لئے 1350 کروڑ روپئے کے مالی پیکیج کا اعلان کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج جو ہم یہ اعلان کر رہے ہیں، اس پر مقررہ وقت کے اندر عمل درآمد ہونے کو یقینی بنایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ آتم نربھر بھارت ابھیان کے تحت جموں وکشمیر کے لئے جلد اس سے بھی بڑا اعلان ہونے والا ہے۔ انہوں نے ان باتوں کا اظہار ہفتہ کے روز راج بھون میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کے دوران کیا، جس کا انہوں نے آغاز بھی اردو زبان کے ایک شعر سے کیا اور اختتام بھی اردو زبان کے ایک شعر سے ہی کیا۔ انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر میں بلا کسی تفریق کے تجارتی شعبہ سے وابستہ تمام قرض داروں کو 6 ماہ تک سود میں 5 فیصد سبونشن دی جائے گی، جس پر 950 کروڑ روپئے خرچ ہوں گے اور اس سے لاکھوں بے روزگاروں کو روز گار بھی ملے گا۔ منوج سنہا نے کہا کہ یونین ٹریٹری میں ایک سال کے لئے بجلی اور پانی کی بلوں میں 50 فیصد رعایت دی جائے گی۔

Published by: Nisar Ahmad
First published: Sep 19, 2020 07:17 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading