உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Republic Day: دہشت گردوں کی دراندازی کو لے کر بین الاقوامی سرحدوں پر جاری ہوا الرٹ، موسم کی پرواہ کیے بغیر گشت کررہے ہیں جوان

    یوم جمہوریہ کے پیش نظر بین الاقوامی سرحد پر فوج کا سخت پہرہ۔

    یوم جمہوریہ کے پیش نظر بین الاقوامی سرحد پر فوج کا سخت پہرہ۔

    بی ایس ایف کے آئی جی نے صحافیوں سے کہا، ’’ ایسی اطلاع ملی ہے کہ قوم مخالف عناصر مسائل پیدا کرسکتے ہیں، ہم نے سرحد پر اور اندرونی علاقوں میں (ان کے منصوبوں کو ناکام کرنے کے لئے) ’ہائی الرٹ‘ کردیا ہے۔‘‘

    • Share this:
      نئی دہلی:یوم جمہوریہ کے لئے ملک بھر میں سیکورٹی کی صورتحال سخت کی جارہی ہے۔ جموں کشمیر (Jammu-Kashmir) میں بھی سختی بڑھادی گئی ہے۔ یہاں آر ایس پورا کی بین الاقوامی سرحد پر سیکورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے ہیں۔ سیکورٹی صورتحال کے بارے میں جانکاری دیتے ہوئے سیکورٹی جوان نے بتایا کہ ہم موسم کی حالت کی پرواہ کیے بغیر سرحدوں پر گشت جاری رکھتے ہیں۔ 26 جنوری کو یوم جمہوریہ کے موقع پر سرحدوں پر الرٹ ہے۔

      دراصل، وادی میں دہشت گرد دراندازی کی فراق میں ہیں۔ یوم جمہوریہ اور یوم آزادی کے قریب آتے ہی یہ کوششیں مزید بڑھ جاتی ہیں جس کی وجہ سے سرحدوں کو الرٹ پر رکھ دیا جاتا ہے۔ وہیں بارڈر سیکورٹی فورس (BSF)، جموں کے انسپکٹر جنرل ڈی کے بورا نے پیر کے روز کہا کہ جموں اور کشمیر میں ہندوستان-پاکستان سرحد کے ساتھ فورس کے اہلکار یوم جمہوریہ کے موقع پر ملک دشمن عناصر کی طرف سے پریشانی پیدا کرنے کے خطرے کے پیش نظر ’ہائی الرٹ‘ پر ہیں۔

      ’سرحد پر دو ہفتہ کے لئے الرٹ‘
      انہوں نے بتایا کہ بی ایس ایف نے پہلے ہی سرحد پر دو ہفتوں کے سرگرمی بڑھادی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جموں سرحد میں بین الاقوامی سرحد (IB) پر سرنگ مخالف مہم شروع کردی گئی ہے۔ بورا نے کہا کہ بی ایس ایف دہشت گردوں کے ناپاک منصوبوں کو ناکام کرنے کے لئے فوج، CRPF اور پولیس کے ساتھ مشترکہ طور پر گشت کررہی ہے۔

      بی ایس ایف کے آئی جی نے صحافیوں سے کہا، ’’ ایسی اطلاع ملی ہے کہ قوم مخالف عناصر مسائل پیدا کرسکتے ہیں، ہم نے سرحد پر اور اندرونی علاقوں میں (ان کے منصوبوں کو ناکام کرنے کے لئے) ’ہائی الرٹ‘ کردیا ہے۔‘‘

      بورا نے کہا کہ خفیہ جانکاری سے واضح طور پر سرحد پار سے کچھ سرگرمیوں کے اندیشے کے طو رپر اشارہ کرتی ہے۔ انہوں نے کہا، ’’ہمیں دراندازی یا ہتھیاروں، گولہ بارود، دھماکوں مادوں کو ہمارے علاقے میں لائے جانے یا ان کی اسمگلنگ جیسی سرگرمیوں کی جانکاری ملی ہے، لیکن ہم ہائی الرٹ پر ہیں اور ہم کسی کو بھی ان ناپاک منصوبوں میں کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔‘‘
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: