ہوم » نیوز » وطن نامہ

جموں وکشمیر: اہل خانہ کو نہیں دی جارہی ہے لاش، دہشت گردوں کی تدفین خود کررہے ہیں پولیس اہلکار

جموں وکشمیر (Jammu-Kashmir) کے سوپور میں جیش محمد کے دہشت گرد (Terrorist) سجاد نواب کے آخری رسوم میں سینکڑوں کی تعداد میں لوگ پہنچ گئے تھے۔

  • Share this:
جموں وکشمیر: اہل خانہ کو نہیں دی جارہی ہے لاش، دہشت گردوں کی تدفین خود کررہے ہیں پولیس اہلکار
دہشت گردوں کی تدفین خود کررہے ہیں پولیس اہلکار

نئی دہلی: جموں وکشمیر (Jammu-Kashmir) کی پولیس نے فیصلہ کیا ہےکہ مارے گئے دہشت گردوں (Slain Terrorists) کی لاش کو ان کے اہل خانہ کو نہیں دی جائے گی۔ نیوز 18 کو مصدقہ ذرائع کےحوالے سے اطلاع ملی ہے کہ ایسا اس لئے کیا گیا ہےکیونکہ ان کے آخری رسوم میں بڑی تعداد میں لوگ پہنچ رہے تھےجبکہ پورے ملک میں ان دونوں کورونا وائرس کے سبب بھیڑ جمع ہونے پر پابندی ہے۔ اب خود پولیس کے افسران لاشوں کو دفن کررہے ہیں۔


انتظامیہ کی نگرانی میں آخری رسوم


ذرائع کے مطابق لاشوں کی آخری رسوم مجسٹریٹ کی نگرانی میں مقامی انتظامیہ کی طرف سے کی جارہی ہے۔ جموں وکشمیر پولیس کے ایک سینئر افسر نے کہا، ’اہل خانہ کی موجودگی میں تمام مذہبی رسم ورواج کے ساتھ آخری رسوم ادا کی جاتی ہے۔ اس کے علاوہ ڈی این اے کے سیمپل بھی محفوظ رکھے جاتے ہیں’۔ پولیس افسرنے پارلیمنٹ حملے کے قصوروار افضل گرو کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ وہ قانونی طور پر اہل خانہ کو باڈی دینے کے لئے پابند نہیں ہیں۔ جیسا کہ افضل گرو کو پھانسی دینےکے بعد دہلی کے تہاڑ جیل میں دفن کردیا گیا تھا۔


جموں وکشمیر : گزشتہ روز پولیس اہلکار کو اغوا کرنے والے دو دہشت گردوں کو سیکورٹی فورسیز نے مار گرایا تھا جبکہ پولیس جوان کو بچالیا گیا۔
جموں وکشمیر : گزشتہ روز پولیس اہلکار کو اغوا کرنے والے دو دہشت گردوں کو سیکورٹی فورسیز نے مار گرایا تھا جبکہ پولیس جوان کو بچالیا گیا۔


صرف اہل خانہ کو اجازت

پولیس نے کہا کہ کشمیر علاقے کے القاعدہ انصار غزوۃ الہند سے منسلک 4 مبینہ دہشت گردوں کو 22 اپریل کو ایک سرکاری قبرستان میں دفن کردیا گیا۔ دستاویز میں واضح طورپر لکھا ہے کہ شوپیاں ضلع کے طارق احمد بھٹ اور پلوامہ کے رہنے والے بشارت شاہ اور وکیل احمد ڈار کے اہل خانہ نے آخری رسوم میں شرکت کی۔ حالانکہ شمالی کشمری کے بارہمولہ ضلع کے مارے گئے مبینہ جہادی عزیر احمد بھٹ کی فیملی آخری رسوم میں شال نہیں ہوسکی۔

سینکڑوں کی تعداد میں لوگ جمع ہوئے

کشمیر کی حکومت محتاط ہوگئی ہے۔ دراصل اسی ماہ سوپور میں جیش محمد کے دہشت گرد سجاد نواب کے آخری رسوم میں سینکڑوں کی تعداد میں لوگ پہنچ گئے تھے۔ اس کے علاوہ کلگام کے اروانی میں حزب المجاہدین کے محمد اشرف ملک کو دفن کرنے کے لئے بھاری بھیڑ جمع ہوئی تھی۔ جموں وکشمیر سے آرٹیکل 370 ہٹائے جانے کے بعد یہ پہلا موقع تھا جب اتنی بڑی تعداد میں لوگ جمع ہوئے تھے۔
First published: Apr 25, 2020 12:32 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading