ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

بھارت بنداورجنترمنترپراحتجاج: تپن بوس کابڑابیان،کہا۔پاکستان ہمارادشمن نہیں

مسلم خواتین سمیت مظاہرین کی ایک بڑی تعداد جنتر منتر پہنچی ہے۔ شہریت ترمیمی قانون (CAA) این آر سی اور قومی آبادی رجسٹر (NPR) کے خلاف مظاہرے ہو رہے ہیں۔

  • Share this:
بھارت بنداورجنترمنترپراحتجاج: تپن بوس کابڑابیان،کہا۔پاکستان ہمارادشمن نہیں
بھارت بند اورجنتر منتر پر احتجاج: تپن بوس کا بڑا بیان، کہا۔پاکستان ہمارادشمن نہیں

شہریت ترمیمی قانون کے خلاف ملک بھر میں مظاہروں کا سلسلہ تھمنے کا نام نہیں لے رہاہے۔ادھر ، دہلی کے جنتر منتر پر سی اے اے اور این آر سی (CAA & NRC) کے خلاف احتجاج کرنے والے سماجی کارکن تپن بوس(Tapan Bose) کا بیان سامنے آیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمسایہ ملک پاکستان ہمارا دشمن نہیں ہے۔ دونوں ممالک کی فوجیں ایک جیسی ہیں۔تپن بوس نے کہا ، 'پاکستان کوئی دشمن ملک نہیں ، ہندوستان اور پاکستان کا حکمران طبقہ ایک جیسا ہے۔ ہماری فوج بھی ایک جیسی ہے ۔ان کی فوج اپنے لوگوں کو مارتی ہے اور ہماری فوج ہمارے لوگوں کو مارتی ہے ۔ان میں کوئی فرق نہیں ہے۔دیکھیں ویڈیو



مسلم خواتین سمیت مظاہرین کی ایک بڑی تعداد جنتر منتر پہنچی ہے۔ شہریت ترمیمی قانون (CAA) این آر سی اور قومی آبادی رجسٹر (NPR) کے خلاف مظاہرے ہو رہے ہیں۔یوپی کے فیروز آباد میں بھارت بند کے پوسٹر لگانے کے بعد انتظامیہ چوکس ہوگیاہے۔ مسلم اکثریتی علاقے میں آج صبح سے دکانیں بند رہی۔ تاہم پولیس نے متعدد مقامات سے بند کے پوسٹر ہٹا دیئے۔ اسی کے ساتھ ہی ، پولیس انتظامیہ سیکیورٹی کے پیش نظر چوکس ہے۔ حساس مقامات پر پولیس فورس تعینات کردیاگیاہے۔


بہوجن کرانتی مورچہ اور دیگر تنظیموں کے ذریعہ بلائے گئے بھارت بند کا جھارکھنڈ میں معمولی دیکھا گیاہے۔ چترا میں ، بائیں بازو کی تنظیموں نے بند کی حمایت میں مقامی کیسری چوک کو بلاک کردیا۔تاہم سڑک میں ٹریفک جام ہونے کے بعد پولیس نے احتجاجیوں کو گرفتار کرلیاہے۔

شہریت ترمیمی قانون اوراین آرسی (CAA & NRC)کے خلاف احتجاج کے دوران بہوجن کرانتی مورچہ کے ارکان نے ممبئی میں کنجرمرگ اسٹیشن پر ریلوے ٹریک پرریل روکو احتجاج کیا۔ اس کے ساتھ ہی مظاہرین نے کچھ مقامی ٹرینوں کو بھی روک دیا ہے۔ جس کی وجہ سے عام لوگوں کو کافی پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ صبح آفس جانے والے لوگوں کو کافی پریشانی کا سامناہوا۔ متعدد جگہوں پر مظاہرین اورپولیس کے درمیان جھڑپیں ہوتی رہی ہیں۔
First published: Jan 29, 2020 02:59 PM IST