جیون سمواد: اندر سے ٹھوس بننے کی ضرورت

ہندوستان میں اگر لڑکی کا رنگ گہرا، سانولا ہے تو اس بات کی قیمت زیادہ جہیز کی شکل میں ادا کی جاتی ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ سبھی لوگ اس کے لئے تیار ہیں۔

Sep 10, 2019 03:52 PM IST | Updated on: Sep 10, 2019 03:56 PM IST
جیون سمواد: اندر سے ٹھوس بننے کی ضرورت

ہم باہری کشش پر اتنے زیادہ مسحور ہیں کہ اندر کی طرف ہمارا دھیان کم ہی جاتا ہے۔ ہم کہتے تو یہی رہتے ہیں کہ اصلی خوبصورتی تو دل کی ہوتی ہے۔ لیکن ہمارے رویے اس کی تصدیق نہیں کرتے۔ ہمارا سماج رنگ کے بھید سے گہرائی سے جڑا ہوا ہے۔ گورے رنگ کو اب پرکشش مانا جاتا ہے۔ سانولے، کالے رنگ کی جلد کو پسند کرنے والوں کی تعداد دھیرے دھیرے بڑھ رہی ہے، لیکن ابھی بھی وہ قابل احترام صورت حال سے پیچھے ہے۔ ہماری پہچان ایک ایسے سماج کے طور پر ہے جہاں ہم اپنی پہلی پسند رنگ کی بنیاد پر طئے کرتے ہیں۔

ہمارے مزاج کو سب سے زیادہ کریم بنانے والی کمپنیوں نے سمجھا ہے۔ کیسے اچانک جلد کا رنگ بدلنے کے داخلی شعور سے ایک بازار کھڑا ہو گیا۔ یہ اس لئے ہوا کیونکہ ہم اندر سے ٹھوس نہیں ہیں۔ ہماری سوچ اور رسم ورواج میں رنگ بھید بہت گہرا ہے۔

Loading...

ہندوستان میں اگر لڑکی کا رنگ گہرا، سانولا ہے تو اس بات کی قیمت زیادہ جہیز کی شکل میں ادا کی جاتی ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ سبھی لوگ اس کے لئے تیار ہیں۔ دولہے کے اہل خانہ کو لگتا ہے کہ یہ اس کا حق ہے۔ جب کہ دوسرا فریق اپنے احساس کمتری کے بوجھ سے دبا ہوا ہے۔

جن چیزوں پر ہم یقین نہیں کرتے، وہ صرف ہمارے چاہنے بھر سے نہیں مل جاتیں۔ رنگ بھید کی ہمارے یہاں سب سے بڑی وجہ یہی ہے۔ میری ایک اور بات سے آپ ممکن ہے کہ تھوڑے متفق ہوں لیکن یہ سچ ہے کہ ہم متعدد ایسے کنبوں سے متعارف ہیں جہاں کسے خاص بچے سے پیار کا بڑا سبب اس کا رنگ ہے۔

 یہ سب اس لئے ہے کیونکہ ہم اندر سے ٹھوس، گہرے نہیں ہیں۔  ہماری سوچ اتنی زیادہ باہری ہے کہ اندر کی باتیں اس میں آسانی سے سما نہیں پاتی ہیں۔ ہم کسی کو سمجھنے کی بجائے اس کی کشش پر زیادہ مسحور ہوتے ہیں۔

اس بات کو بہت آسانی سے آپ اپنے احباب کے عشقیہ تعلقات، شادی۔ بیاہ کی چرچا، سنیما میں اداکار۔ اداکارہ کے رنگوں کے انتخاب سے بھی سمجھ سکتے ہیں۔ سنیما ہمارے رویوں کو دیکھ کر شبیہیں گڑھتا ہے، اس کے بعد ہم اس کی شبیہ میں قید ہو کر زندگی کو گڑھنے لگتے ہیں۔

ہم نے شاید ہی کبھی اس پر غور کیا ہو کہ رنگ کی بنیاد پر کئے جانے والے تبصرے ، سننے والے کے دل پر کیسا اثر چھوڑتے ہیں۔ اس لئے زندگی کے تئیں نظریہ کو کہیں زیادہ لبرل بنانے اور دوسروں کے تئیں محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ یہ تبھی ممکن ہے جب ہم اندر سے خود کو ٹھوس بنائیں اور اپنے شعور کو انسانیت سے جوڑ پائیں۔

Email: dayashankarmishra2015@gmail.com

Address: Jeevan Sanvad (Dayashankar Mishr)

Network18

Express Trade Tower,3rd Floor, A Wing,

Sector 16, A, Film City, Noida (UP)

اپنے سوالات اور مشورے انباکس میں شئیر کریں۔

(https://twitter.com/dayashankarmi )(https://www.facebook.com/dayashankar.mishra.54 )

Loading...