ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

سی اے اے ، این پی آر اور این آر سی کے معاملہ میں جیتن رام مانجھی نے کیا بڑا انکشاف ، کہی یہ بات

جیتن رام مانجھی نے دعویٰ کیا ہے کہ ان کی پارٹی اور مختلف دلت لیڈروں کی جانب سے لگاتار بیداری مہم چلائی جارہی ہے ۔ دھیرے دھیرے اب وہ اس سازش کو سمجھنے لگے ہیں ۔

  • Share this:
سی اے اے ، این پی آر اور این آر سی کے معاملہ میں جیتن رام مانجھی نے کیا بڑا انکشاف ، کہی یہ بات
سی اے اے ، این پی آر اور این آر سی کے معاملہ میں جیتن رام مانجھی نے کیا بڑا انکشاف ، کہی یہ بات

بہار کے سابق وزیر اعلیٰ جیتن رام مانجھی نے ایک بڑا انکشاف کیا ہے۔ مانجھی کے مطابق بہار کی دلت بستیوں میں ایک تنظیم کی جانب سے ہر پنچایت میں دو دو لوگوں کو پندرہ ہزار کی نوکری پر بحال کیا گیا ہے۔ وہ لوگ دلتوں کو گمراہ کرنے اور انہیں پیسہ دے کر سی اے اے ، این پی آر اور این آر سی کے خلاف جاری احتجاج کو روکنے کی سازش کررہے ہیں اور ایک تنظیم ان کی مدد کررہی ہے۔ کئی بستیوں میں وہ کامیاب بھی ہوئے ہیں ، لیکن اس قانون سے دلتوں کا سب سے بڑا نقصان ہونے والا ہے۔


جیتن رام مانجھی نے کہا کہ دلت لیڈروں کی جانب سے دلتوں کو سمجھانے اور اس قانون کے نقصانات بتانے کی مسلسل کوشش کی جارہی ہے ۔ مانجھی نے کہا کہ دلت کم پڑھے لکھے لوگ ہیں اور وہ جلدی کسی کے جھانسے میں آجاتے ہیں ۔ ایسے غریب اور ناخواندہ لوگوں کو ان کے حقوق کے ساتھ پہلے سے ہی حکومت کھلواڑ کرتی آئی ہے ، اب پیسہ کے دم پر انہیں سی اے اے کے احتجاج سے دور کرنے کی سازش کی جارہی ہے۔


جیتن رام مانجھی نے دعویٰ کیا ہے کہ ان کی پارٹی اور مختلف دلت لیڈروں کی جانب سے لگاتار بیداری مہم چلائی جارہی ہے ۔ دھیرے دھیرے اب وہ اس سازش کو سمجھنے لگے ہیں ۔ مانجھی نے کہا کہ سی اے اے ، این پی آر اور این آر سی قانون سے سب سے زیادہ نقصان دلتوں کو ہونے والا ہے۔ تقریبا 50 کروڑ لوگ اس کی زد میں آئیں گے ۔ مانجھی نے این پی آر کے تعلق سے دلتوں سے اپیل کی کہ وہ کسی بھی طرح کی جانکاری کسی کو بھی نہیں دیں ۔ مانجھی نے کہا کہ این پی آر کا بائیکاٹ کیا جائے گا ۔


24 اپریل سے بہار اسمبلی کا بجٹ اجلاس شروع ہورہا ہے ۔ مانجھی نے کہا کہ نتیش حکومت کو اسمبلی میں گھیرنے کی تیاری کی گئی ہے ۔ این پی آر پر نتیش کمار کو اپنا موقف واضح کرنا چاہئے ۔ نتیش کمار اس سلسلے میں گول مول جواب دے کر بہار کی غریب آبادی کے ساتھ مزاق کررہے ہیں ۔ بجٹ اجلاس میں اس مدّعا پر بھی حکومت کو جواب دینا ہوگا کہ کیا وہ این پی آر کرائیں گے یا این پی آر کے خلاف جائیں گے۔
First published: Feb 23, 2020 10:31 PM IST