ہوم » نیوز » وسطی ہندوستان

ْJunior Doctors Strike End in MP :جونیئرڈاکٹروں نے ہڑتال ختم کرنےکاکیااعلان،وزیرطبی تعلیم سے بات چیت کامیاب

وزیر برائے میڈیکل ایجوکیشن وشواس سارنگ نے جونیئر ڈاکٹروں کے ذریعہ ہڑتال ختم کرنے پر اپنی خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ مجھے خوشی ہے کہ ہائی کورٹ اور حکومت کی بات کو جونیئرڈاکٹروں نے تسلیم کیا ہے ۔

  • Share this:
ْJunior Doctors Strike End in MP :جونیئرڈاکٹروں نے ہڑتال ختم کرنےکاکیااعلان،وزیرطبی تعلیم سے بات چیت کامیاب
جونیئر ڈاکٹروں کی ہڑتال ختم

مدھیہ پردیش میں جونیئرڈاکٹروں کی 6 نکاتی مانگوں کو لیکر جاری ہڑتال وزیر برائے میڈیکل ایجوکیشن وشواس سارنگ سے ملاقات کے بعد ختم کردی گئی ہے۔ وزیر برائے میڈیکل ایجوکیشن وشواس سارنگ نے جونیئر ڈاکٹروں کے ذریعہ ہڑتال ختم کرنے پر اپنی خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ مجھے خوشی ہے کہ ہائی کورٹ اور حکومت کی بات کو جونیئرڈاکٹروں نے تسلیم کیا ہے ۔24 فیصد کی جگہ 70فیصد اسٹائیپنڈ کی رقم میں اضافہ کرنے کی رضا مندی ہوئی ۔ جونیئر ڈاکٹروں کی فلاح کو لیکر وقت وقت پر حکومت اور ایسوسی ایشن کے بیچ بات ہوتی رہے گی۔


واضح رہے کہ مدھیہ پردیش میں جونیڈر ڈاکٹروں کے ذریعہ چھ نکاتی مانگوں کو لیکر اکتیس مئی کو ہڑتا شروع کی گئی تھی اور ان کی ہڑتال کو جبلپور ہائی کورٹ کے ذریعہ تین مئی کو اپنے فیصلہ میں نہ صرف غیر قانونی بتایا گیا تھا بلکہ جونیئر ڈاکٹروں سے ہڑتال ختم کر کے چوبیس گھنٹے میں ڈیوٹی پر واپس جانے کی بھی ہدایت دی گئی تھی ۔ آج جبلپور ہائی کورٹ میں جونیڈر ڈاکٹروں کی ہژتال اور توہین عدالت کو لیکر سماعت بھی ہونا تھی ۔مزید تفصیلات کے لئے چلتے ہیں بھوپال جہاں ہمارے نما’ئندے مہتاب عالم راست طور پر جڑے ہوئے ہیں۔


وزیرطبی تعلیم سے جونیئر ڈاکٹروں کی بات چیت کامیاب
وزیرطبی تعلیم سے جونیئر ڈاکٹروں کی بات چیت کامیاب


مدھیہ پردیش میں جونیئر ڈاکٹروں نے حکومت کے سخت موقف سے ناراض ہوکر اجتماعی استعفی دیدیا ہے۔ چھ نکاتی مانگوں کو لیکر جونیئر ڈاکٹروں کی چار روز سے ہڑتال جاری تھی ۔ جونیئر ڈاکٹروں کی ہڑتال پر مفاد عامہ کے تحت دائرکی گئی عرضی پر سماعت کرتے ہوئے جب جبلپور ہائی کورٹ نے جونیئر ڈاکٹروں کی ہڑتال کو غیر واجب قرار دیا تو حکومت نے بھی ہڑتال کو لیکر اپنے موقف کو اور سخت کیا اور جونیئر ڈاکٹروں سے ہڑتال ختم کرکے کام پر واپس آنے کی جہاں اپیل کی تھی ۔

واضح رہے کہ مدھیہ پردیش میں جونیئر ڈاکٹر اپنے 6نکاتی مطالبات کو لیکر گزشتہ تین سالوں سے وقت وقت پر احتجاج کرتے رہے ہیں ۔جونیئر ڈاکٹروں نے اپنے مطالبات کو لیکر 29 مئی کو حکومت کو میمورنڈم پیش کیاتھا اور مطالبات پورے نہیں ہونے پر 31 مئی سے ایمرجنسی سروس اور یکم جون سے کووڈ مریضوں کا علاج بند کر ہڑتال شروع کرنے کا اعلان کیا تھا۔ حکومت کے ذریعہ اس بیچ جونیئرڈاکٹروں کے مطالبات کو لیکر کئی زبانی اعلان تو کیاگیا لیکن تحریری طور پر کچھ نہیں کیاگیا تھا۔ جبکہ جونیئر ڈاکٹر حکومت سے مطالبات کو لیکر تحریری طور پر لکھ کر دینے کا مطالبہ کرتے رہے تھے۔

اسی بیچ جونیئر ڈاکٹروں کی ہڑتال کے خلاف سماجی کارکن شیلیندر سنگھ کے ذریعہ جبلپور ہائی کورٹ میں مفاد عامہ کے تحت عرضی دائر کی گئی جس پر سماعت کرتے ہوئے جبلپور ہائی کورٹ نے ہڑتال کو غیر واجب قرار دیا بلکہ جونیئر ڈاکٹروں کی سرزنش کرتے ہوئے انہیں 24 گھنٹے کے اندر کام پر لوٹنےکی ہدایت دی تھی۔ ہائی کورٹ کی سرزنش کے بعد حکومت نے اپنا سخت موقف اختیار کرتے ہوئے جونیئر ڈاکٹروں کو کام پر واپس لوٹنے کی ہدایت دیتے ہوئے جب ان کے خلاف ایسما کے تحت کاروائی کرنے کی دھمکی دی تو جونیئر ڈاکٹروں کا غصہ بھڑک گیا اور انہوں نے اجتماعی استعفی پیش کرتےہوئے اپنے حقوق کو لیکر ہڑتال جاری رکھنے کا اعلان کیاتھا۔
Published by: Mirzaghani Baig
First published: Jun 07, 2021 01:07 PM IST