جسٹس شرد اروند بوبڈے نے آج ملک کے 47ویں چیف جسٹس کی حیثیت سے لیا حلف

صدرجمہوریہ رام ناتھ کووند نے راشٹرپتی بھون کے تاریخی دربارہال میں منعقدہ حلف برداری تقریب میں جسٹس شرد اروند بوبڈے کو عہدے اور رازداری کا حلف دلوایا

Nov 18, 2019 09:32 AM IST | Updated on: Nov 18, 2019 10:10 AM IST
جسٹس شرد اروند بوبڈے نے آج ملک کے 47ویں چیف جسٹس کی حیثیت سے لیا حلف

جسٹس شرد اروند بوبڈے نے آج ملک کے 47ویں چیف جسٹس کی حیثیت سے عہدے کا حلف لیاہے۔(تصویر:نیوز18)۔

سپریم کورٹ کےسب سے سینئرجسٹس شرد اروند بوبڈے نے آج ملک کے 47ویں چیف جسٹس کی حیثیت سے عہدے کا حلف لیاہے۔ صدرجمہوریہ رام ناتھ کووند نے راشٹرپتی بھون کے تاریخی دربارہال میں منعقدہ حلف برداری تقریب میں جسٹس شرد اروند بوبڈے کو عہدے اور رازداری کا حلف دلوایا۔ 63 سالہ جسٹس بوبڈے نے سبکدوش جج چیف جسٹس رنجن گوگوئی کی جگہ لی ہے جو آج ریٹائر ہوگئے۔ جسٹس بوبڈے 17 مہینے تک سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کے عہدے پر فائز رہیں گے اور23 پریل 2021 کوریٹائرہوں گے۔ ان کا تعلق مہاراشٹر کے وکیل خاندان سے ہے۔ ان کے والد اروند شری نواس بوبڈے بھی مشہور وکیل تھے 24 اپریل 1956 کو مہاراشٹر کے ناگپور میں پیدا ہونے والے جسٹس بوبڈے نے ناگپور یونیورسٹی سے آرٹ اورقانون میں گریجویشن کیا تھا۔

 

سال 1978 میں مہاراشٹربارکونسل میں انہوں نے بطور وکیل اپنا نام رجسٹرڈ کرایا۔ بامبے ہائی کورٹ کی ناگپور بینچ میں 21 سال تک اپنی خدمات انجام دینے والے جسٹس بوبڈے سال 1998 میں سینئر وکیل بن گئے۔ وہ 29 مارچ 2000 میں بامبے ہائی کورٹ کے ایڈیشنل جسٹس مقررکئے گئے۔ وہ 16 اکتوبر 2012 کو مدھیہ پردیش ہائی کورٹ کے چیف جسٹس بنائے گئے، تقریبا چھ ماہ کے اندر ہی انہیں 12 اپریل 2013 کو سپریم کورٹ کے جسٹس کے طورپرعہدہ سنبھالا۔جسٹس بوبڈے نے کئی تاریخی فیصلوں میں اہم کرداراداکیا ہے۔ حال ہی میں ایودھیا کے متنازعہ مقام پررام مندربنانے کا راستہ صاف کرنے والی آئینی بنچ کے بھی وہ رکن رہے ہیں۔ وہ رازداری کے بنیادی حقوق کے سلسلے میں اگست 2017 میں فیصلے دینےوالی 9 رکنی آئینی بنچ کے رکن بھی رہے ہیں۔ اس بنچ کی صدارت اس وقت کے چیف جسٹس جے ایس کھیہر نے کی تھی۔

Loading...