உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کے سی آر ہوئے قومی- بھارت راشٹریہ سمیتی لانچ، نظریں 2024 عام انتخابات پر

    کے سی آر ہوئے قومی- بھارت راشٹریہ سمیتی لانچ، نظریں 2024 عام انتخابات پر

    کے سی آر ہوئے قومی- بھارت راشٹریہ سمیتی لانچ، نظریں 2024 عام انتخابات پر

    چندرشیکھر راو کی پارٹی کے تحت لڑا جانے والا پہلا الیکشن ممکنہ مونو گوڑے ضمنی الیکشن ہوگا، جو کہ 4 نومبر کو ہوسکتا ہے۔ پارٹی کے گجرات، مہاراشٹر، کرناٹک اور دہلی میں اسمبلی الیکشن لڑنے کا امکان ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Hyderabad, India
    • Share this:
      حیدرآباد: اتوار کے روز تلنگانہ کے روز اعلیٰ چندر شیکھر راو (کے سی آر) نے اپنے کابینہ معاونین اور پارٹی کے سبھی 33 ضلع صدور کے ساتھ لنچ میٹنگ کی تھی۔ اس دوران قومی پارٹی کے افتتاح کے روڈ میپ پر تبادلہ خیال کیا تھا۔ مختلف اسٹیجوں پر کئی بار کے سی آر نے دوہرایا تھا کہ ’بہت جلد، ایک قومی پارٹی کی تشکیل اور اس کی پالیسیوں کی تعمیر ہوگی‘۔ اب ان کا سیدھا مقابلہ بی جے پی سے ہے۔

      تلنگانہ کے وزیر اعلیٰ اور تلنگانہ راشٹریہ سمیتی (Telangana Rashtra Samiti) کے صدر چندر شیکھر راو وجے دشمی کے موقع پر یعنی آج اپنی قومی پارٹی کا اعلان کردیا ہے، جس کا نام ہے بھارت راشٹریہ سمیتی۔ مرکز میں بی جے پی کے سامنے مضبوط اپوزیشن کھڑا کرنے کے لئے کے سی آر لمبے وقت سے اس کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔

      چندر شیکھر راو کی پارٹی کے تحت لڑا جانے والا پہلا الیکشن ممکنہ منوگوڑے ضمنی الیکشن ہوگا، جو کہ 4 نومبر کو ہی ہوسکتا ہے۔ پارٹی کے گجرات، مہاراشٹر، کرناٹک اور دہلی میں اسمبلی انتخابات لڑنے کا امکان ہے۔ کے سی آر مبینہ طور پر 9 دسمبر کو دہلی میں ایک بڑی پارٹی ریلی کرنے کا منصوبہ بنا رہے ہیں۔ جب بی آر ایس کو آفیشیل طور پر تنظیموں اور اس کی حمایت کرنے والے لیڈران کی موجودگی میں لانچ کیا جائے گا۔

      کے سی آر نے پارٹی کے سینئر لیڈران سے کہا تھا کہ بھارت راشٹریہ سمیتی (بی آر ایس) قومی سطح پر بی جے پی کے متبادل کے طور پر ابھرے گا اور یہ 2024 میں دونوں کے درمیان سیدھی لڑائی ہوگی۔ پارٹی اپنے انتخابی نشان ایمبیسڈر کار اور اپنے گلابی رنگ کو برقرار رکھنا چاہتی ہے۔ کے سی آر کے قومی منصوبوں کا مذاق اڑاتے وزیر سیاحت جی کشن ریڈی نے کہا، ’پارٹیوں کے آنے اور ملوث ہونے میں کچھ بھی نیا نہیں ہے۔ کے سی آر نے ایک بار کہا تھا کہ ’سرنواش‘ آنے والا ہے اور یہ وہی ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: