کملیش تیواری قتل معاملہ: سوشل میڈیا پراشتعال انگیز پوسٹوں کا سیلاب، 72 گھنٹوں میں 32 ایف آئی آردرج

کملیش تیواری قتل کے بعد سے ہی سوشل میڈیا میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی خراب کرنے والی پوسٹوں کی سیلاب سا آگیا تھا۔

Oct 22, 2019 09:42 PM IST | Updated on: Oct 22, 2019 09:48 PM IST
کملیش تیواری قتل معاملہ: سوشل میڈیا پراشتعال انگیز پوسٹوں کا سیلاب، 72 گھنٹوں میں 32 ایف آئی آردرج

کملیش تیواری: فائل فوٹو

اترپردیش کی راجدھانی لکھنؤمیں 18 اکتوبرکوہوئےکملیش تیواری قتل کے بعد سے ہی سوشل میڈیا میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی خراب کرنے والے اشتعال انگیزپوسٹوں کا سیلاب آگیا تھا۔ ڈی جی پی ہیڈ کوارٹرنےاس پرنظرڈالی اورہیڈ کوارٹرسمیت سبھی اضلاع کی سوشل میڈیا مانیٹرنگ سیل کوایسی پوسٹوں پرکارروائی کا حکم دیا تھا۔ خود ڈی جی پی اوپی سنگھ نےکہا تھا کہ ماحول خراب کرنے والے پوسٹوں پرراسوکا تک کی کارروائی کی جائے گی۔ جبکہ یوپی پولیس کے آئی جی لاء اینڈ آرڈرپروین کمارنے بتایا کہ گزشتہ 72 گھنٹوں میں 32 ایف آئی آردرج ہوئی ہیں۔

یہاں ہوئی پولیس کی کارروائی

Loading...

اترپردیش کےآئی جی لاء اینڈ آرڈرپروین کمارکے مطابق اس قتل کےبعد سے گزشتہ 72 گھنٹوں میں 32 ایف آئی آردرج ہوئی ہیں۔ جبکہ 178 سوشل میڈیا اکاؤنٹس یا پھرپیج کو بلاک کروایا گیا۔ کانپورشہراوراوریا میں 3-3 اورڈی جی پی ہیڈ کوارٹرکی مانیٹرنگ سیل نے 4 ایف آئی آردرج کرائی ہیں۔ آئی جی لاء اینڈ آرڈرنے بتایا کہ ڈی جی پی ہیڈ کوارٹرکی سوشل میڈیا مانیٹرنگ سیل مسلسل اشتعال انگیزپوسٹوں کی نگرانی کررہی ہے۔

ملزمین کی تلاش جاری

کملیش تیواری قتل معاملے میں فراردونوں ملزمین کی سرگرمی سے تلاش کی جارہی ہے۔ اس درمیان قاتلوں کی تبدیل ہونے والی لوکیشن سےان کی نیت اورپولیس کی جانچ ملک کے ایک بڑے حصے سے نیپال کی طرف جارہی ہے۔ نیپال پہنچنےکا منصوبہ ہی ایجنسیوں کے کان کھڑے کررہی ہے کیونکہ نیپال سے ہی پڑوسی ملک اوردنیا کے بڑے حصے میں جانے کے راستے کھلتے ہیں۔

Loading...