உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Kangana Ranaut Controversy : ممبئی پولیس کے سامنے آج کنگنا رناوت کو ہونا ہے پیش، سکھ طبقے کے خلاف دیا تھا بیان

    شکایت کی بنیاد پر،کھار پولیس نے کنگنا کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعہ 295 اے کے تحت معاملہ درج کیا ہے جو کسی بھی طبقے کے لوگوں کی مذہبی جذبات کو اُس کے مذہب یا مذہبی عقیدے کی توہین کرنے کے ارادے سے جان بوجھ کر اور افسوناک کاموں سے متعلق ہے۔

    شکایت کی بنیاد پر،کھار پولیس نے کنگنا کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعہ 295 اے کے تحت معاملہ درج کیا ہے جو کسی بھی طبقے کے لوگوں کی مذہبی جذبات کو اُس کے مذہب یا مذہبی عقیدے کی توہین کرنے کے ارادے سے جان بوجھ کر اور افسوناک کاموں سے متعلق ہے۔

    شکایت کی بنیاد پر،کھار پولیس نے کنگنا کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعہ 295 اے کے تحت معاملہ درج کیا ہے جو کسی بھی طبقے کے لوگوں کی مذہبی جذبات کو اُس کے مذہب یا مذہبی عقیدے کی توہین کرنے کے ارادے سے جان بوجھ کر اور افسوناک کاموں سے متعلق ہے۔

    • Share this:
      ممبئی:کنگنا رناوت (Kangana Ranaut)کو آج ممبئی پولیس کے سامنے پیش ہونا ہوگا۔ دراصل، کنگنا رناوت نے کسانوں کی مخالفت کو لے کر انسٹاگرام پر پوسٹ کیا تھا جس وجہ سے ایکٹریس کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی تھی۔ اسی کیس میں آج کنگنا کو پولیس کے سامنے پیش ہونا ہے۔

      کنگنا کے خلاف کھار پولیس اسٹیشن میں سکھ کمیونٹی کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے کے الزام میں ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ یہ ایف آئی آر 23 نومبرکو امرجیت سندھو نام کے ایک شخص نے دلی سکھ گرودوارہ مینجمنٹ کمیٹی (DSGMC) اور شیرومنی اکالی دل (SAD) کے لیڈروں سمیت یہ ایف آئی آر درج کی تھی۔

      شکایت کی بنیاد پر،کھار پولیس نے کنگنا کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعہ 295 اے کے تحت معاملہ درج کیا ہے جو کسی بھی طبقے کے لوگوں کی مذہبی جذبات کو اُس کے مذہب یا مذہبی عقیدے کی توہین کرنے کے ارادے سے جان بوجھ کر اور افسوناک کاموں سے متعلق ہے۔

      اس معاملے میں کنگنا بامبے ہائی کورٹ تک پہنچ گئی تھیں۔ انہوں نے اپیل کی تھی کہ اس ایف آئی آر کو مسترد کردیا جائے۔ 13 دسمبر کو سماعت کے دوران عدالت نے پھر کنگنا کو ممبئی پولیس کے سامنے پیش ہونے کو کہا تھا جس کو ایکٹریس نے مان لیا تھا۔

      25 جنوری کو اگلی سماعت
      کنگنا کے اس بات کو ماننے ے بعد اس کی اگلی سماعت 25 جنوری کو رکھی گئی ہے۔ مہاراشٹر حکومت نے بھی عدالت سے کہا تھا کہ تب تک ایکٹریس کے خلاف کوئی تعزیری کارروائی نہیں کی گئی۔

      کیا ہے معاملہ
      دراصل، جب حکومت نے تین زرعی قوانین کو واپس لیا تھا تب کنگنا نے اس پر اپنا ری ایکشن دیتے ہوئے ایک پوسٹ کیا تھا۔ اس دوران ایکٹریس نے سکھ طبقے کے خلاف ریمارک پاس کیا تھا۔ کنگنا نے کچھ ایسے الفاظ استعمال کیے تھے جس سے سکھ طبقے کو ٹھیس پہنچی۔

      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: