உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Anti-conversion Ordinance: کرناٹک میں تبدیلی مذہب مخالف قانون جلد ہوگا نافذ،آرڈیننس لانے کی تیاری

    کرناٹک کے وزیراعلیٰ بسواراج بومئی۔ (فائل فوٹو)

    کرناٹک کے وزیراعلیٰ بسواراج بومئی۔ (فائل فوٹو)

    Anti-conversion Ordinance: اس بل کی مسیحی برادری کے رہنماؤں سمیت بڑی تعداد میں لوگوں نے مخالفت کی۔ بل میں کہا گیا ہے کہ جو کوئی اپنا مذہب تبدیل کرنا چاہتا ہے اسے ضلع مجسٹریٹ یا ایڈیشنل ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ یا ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ کے اختیار کردہ افسر کو 30 دن پہلے ایک مقررہ فارم میں اس کی اطلاع دینی ہوگی۔

    • Share this:
      Anti-conversion Ordinance:بنگلورو: کرناٹک کی کابینہ نے جمعرات کو تبدیلی مذہب کے خلاف قانون کو نافذ کرنے کے لیے ایک آرڈیننس لانے کا فیصلہ کیا ہے۔ کرناٹک مذہبی حقوق کے تحفظ کا بل گزشتہ سال دسمبر میں کرناٹک قانون ساز اسمبلی میں پاس ہو چکا ہے، لیکن یہ بل ابھی تک قانون ساز کونسل میں زیر التوا ہے۔ حکمراں بی جے پی قانون ساز کونسل میں اکثریت میں نہیں ہے۔ قانون اور پارلیمانی امور کے وزیر جے سی مدھوسوامی نے کہا، "ہم نے کرناٹک آزادی مذہب کے حقوق کے تحفظ کا بل پاس کیا تھا، لیکن کچھ وجوہات کی وجہ سے اسے قانون ساز کونسل میں پاس نہیں کیا جا سکا، اس لیے کابینہ نے جمعرات کو ایک آرڈیننس لانے کا فیصلہ کیا ہے۔"

      کابینہ کے اجلاس کے بعد صحافیوں سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جو کچھ اسمبلی سے منظور ہو گا وہ آرڈیننس میں ہو گا۔ اسے آئندہ اجلاس میں کونسل کے سامنے پیش کیا جائے گا اور پاس کیا جائے گا۔ جب سیشن نہیں چل رہا ہے تو ہم (حکومت) آرڈیننس لا سکتے ہیں اور یہی راستہ ہم نے اختیار کیا ہے۔

      اسمبلی میں بل کی منظوری کے دوران وزیر داخلہ ارگا جننیندر نے کہا تھا کہ آٹھ ریاستوں نے ایسا قانون پاس کیا ہے یا ایسا قانون نافذ کر رہے ہیں اور اب کرناٹک نویں ریاست بن جائے گی۔ اسمبلی سے منظور ہونے والا یہ بل مذہب کی آزادی کے حق کا تحفظ کرتا ہے اور جھوٹے حقائق، جبر، زبردستی یا دھوکہ دہی کے ذریعے غیر قانونی تبدیلیوں کو روکتا ہے۔ اس میں قواعد کی خلاف ورزی پر تین سے پانچ سال تک قید اور 25 ہزار روپے جرمانے کا انتظام ہے۔ دوسری جانب نابالغوں، خواتین، درج فہرست ذاتوں/ درج فہرست قبائل کے لوگوں کے ساتھ ایسا کرنے پر تین سے دس سال تک قید اور 50 ہزار روپے جرمانہ ہو سکتا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      One Step Portal:علاج کے لئے ہندوستان آنے والوں کواب’ون اسٹیپ‘ سے ملے گی مکمل معلومات

      اس بل میں یہ بھی شق ہے کہ جن کا مذہب تبدیل کیا گیا ہے، ملزمان پانچ لاکھ روپے بطور معاوضہ دیں گے۔ اجتماعی تبدیلی کی صورت میں ملزم کو تین سے دس سال تک قید اور ایک لاکھ روپے تک جرمانہ ہو سکتا ہے۔ اس میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ غیر قانونی تبدیلی کے مقصد سے کی گئی شادی کو فیملی کورٹ کے ذریعے کالعدم قرار دیا جائے گا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Swathi Weapon Locating Radar :چین کے خلاف ہندوستانی فوج خرید رہی ہے ’سرچ رڈار‘SWATHI

      اس بل کی مسیحی برادری کے رہنماؤں سمیت بڑی تعداد میں لوگوں نے مخالفت کی۔ بل میں کہا گیا ہے کہ جو کوئی اپنا مذہب تبدیل کرنا چاہتا ہے اسے ضلع مجسٹریٹ یا ایڈیشنل ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ یا ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ کے اختیار کردہ افسر کو 30 دن پہلے ایک مقررہ فارم میں اس کی اطلاع دینی ہوگی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: