உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک: حجاب پہن کر کلاس کرنا چاہتی تھیں 24 طالبات، کالج نے لگا دی 7 دنوں کی پابندی

    Karnataka Students Hijab: کالج انتظامیہ نے طالبات کو یہ بھی بتایا ہے کہ جو لوگ حجاب پہن کر کلاسیز اٹینڈ کرنا چاہتے ہیں، وہ ٹرانسفر سرٹیفکیٹ لے سکتے ہیں۔

    Karnataka Students Hijab: کالج انتظامیہ نے طالبات کو یہ بھی بتایا ہے کہ جو لوگ حجاب پہن کر کلاسیز اٹینڈ کرنا چاہتے ہیں، وہ ٹرانسفر سرٹیفکیٹ لے سکتے ہیں۔

    Karnataka Students Hijab: کالج انتظامیہ نے طالبات کو یہ بھی بتایا ہے کہ جو لوگ حجاب پہن کر کلاسیز اٹینڈ کرنا چاہتے ہیں، وہ ٹرانسفر سرٹیفکیٹ لے سکتے ہیں۔

    • Share this:
      جنوب کنڑ (کرناٹک): کرناٹک کے جنوب کنڑ ضلع کے ایک کالج میں پڑھنے والی  24 طالبات کو حجاب پہننے کے سبب کلاس میں جانے سے 7 دنوں کی پابندی کی مدت کے لئے پابندی لگا دی گئی ہے۔ پوتور تالک میں اپّنگڈی ڈگری کالج کے افسران کی طالبات کے ذریعہ حجاب اتارے بغیر کلاسز میں شامل ہونے سے انکار کرنے کے بعد یہ فیصلہ لیا گیا۔

      منگل کا حادثہ ایسے وقت میں پیش آیا ہے، جب کرناٹک حکومت نے اسکولوں اور کالجوں کے لئے گائڈ لائن جاری کئے ہیں، جس میں کلاسیز میں حجاب پہننے کے لئے کوئی جگہ دیئے بغیر طالبات کے لئے وردی لازمی کردی گئی ہے۔ حالانکہ بیشتر طالبات کلاسیز میں جانا پسند کر رہے ہیں، لیکن ایک طبقے نے انہیں حجاب پہن کر کلاسیز میں جانے کی اجازت دینے پر زور دیا ہے۔

      ’حجاب پہن کر کلاسیز کرنا چاہتے ہیں تو ٹرانسفر سرٹیفکیٹ لے سکتے ہیں‘

      اقلیتی برادری سے متعلق کئی طالبات نے دیگر کالجوں میں شامل ہونے کے لئے تعلیمی اداروں سے ٹرانسفر سرٹیفکیٹ کے لئے درخواست دی ہے، جہاں حجاب کی اجازت ہے۔ کالج انتظامیہ نے طالبات کو یہ بھی بتایا ہے کہ جو لوگ حجاب پہن کر کلاس شامل کرنا چاہتے ہیں، وہ ٹرانسفر سرٹیفکیٹ حاصل کرسکتے ہیں۔

       

       

      حجاب اسلام کا لازمی مذہبی جزو نہیں: کرناٹک ہائی کورٹ

      اڈپّی پری یونیورسٹی گرلس کالج کی چھ طالبات کی مخالفت کے طور پر شروع ہوا۔ حجاب بحران گزشتہ ایک سال میں کرناٹک میں ایک بڑی صورتحال بن گئی ہے۔ واضح رہے کہ کرناٹک ہائی کورٹ نے اس سال مارچ میں فیصلہ دیا تھا کہ حجاب اسلام کا لازمی مذہبی جزو نہیں ہے۔

       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: