உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Hijab Row: حجاب پر پابندی قرآن پر پابندی کے برابر، جمعہ اور رمضان میں ملے چھوٹ، ہائی کورٹ میں عرضی گزاروں کے وکیل نے کہا

    Hijab Row: حجاب پر پابندی قرآن پر پابندی کے برابر، جمعہ اور رمضان میں ملے چھوٹ، ہائی کورٹ میں عرضی گزاروں کے وکیل نے کہا

    Hijab Row: حجاب پر پابندی قرآن پر پابندی کے برابر، جمعہ اور رمضان میں ملے چھوٹ، ہائی کورٹ میں عرضی گزاروں کے وکیل نے کہا

    Karnataka Hijab Controversy: ایڈوکیٹ ونود کلکرنی نے کرناٹک ہائی کورٹ (Karnataka High Court) سے حجاب پر پابندی لگانے کو لے کر عبوری راحت دینے کا مطالبہ کیا ہے ۔ انہوں نے دلیل دی کہ حجاب پر پابندی لگانا قرآن پر پابندی لگانے کے برابر ہے ۔

    • Share this:
      بنگلورو : ایڈوکیٹ ونود کلکرنی نے کرناٹک ہائی کورٹ (Karnataka High Court)  سے حجاب پر پابندی لگانے کو لے کر عبوری راحت دینے کا مطالبہ کیا ہے ۔ انہوں نے دلیل دی کہ حجاب پر پابندی لگانا قرآن پر پابندی لگانے کے برابر ہے ۔ وکیل نے عدالت میں یہ بھی کہا کہ تعلیمی اداروں میں حجاب پہننے کو لے کر پیدا ہوئے تنازع سے طلبہ کی ذہنی صحت متاثر ہورہی ہے ۔

      کرناٹک ہائی کورٹ میں جمعرات کو مسلم طالبات اور دیگر تعلیمی اداروں میں حجاب پہننے پر پابندی  (Hijab in Educational Instantiation) لگانے سے عبوری راحت کا مطالبہ کرنے والی عرضیوں پر سماعت ہورہی تھی ۔ انڈیا ٹوڈے کے رپورٹ کے مطابق ایڈوکیٹ کلکرنی نے کہا کہ حجاب پر پابندی قرآن پر پابندی کے برابر ہے ۔ عدالت سے میری درخواست ہے کہ برائے کرم آج ایک حکم پاس کریں کہ جمعہ اور رمضان کے مہینے میں حجاب پہننے کی اجازت دی جائے ۔

      ایڈوکیٹ ونود کلکرنی نے عدالت سے یہ درخواست کی کہ طالبات کو کم سے کم جمعہ اور رمضان کے مقدس مہینے میں حجاب پہننے کی اجازت دی جائے ، کیونکہ اسلام میں جمعہ اور رمضان کی خاص اہمیت ہے ۔ سماعت کے پانچویں دن کرناٹک ہائی کورٹ نے ایک سماجی کارکن کی عرضی کو خارج کردیا اور کہا کہ ہم مطمئن نہیں ہیں کہ یہ مفاد عامہ کی عرضی کے قوانین کے مطابق دائر کی گئی ہے ، ہم جرمانہ لگائیں گے ۔

      اس درمیان جمعرات 17 فروری کو شیموگلہ میں ڈی وی ایس انڈیپنڈنٹ کالج کے گیٹ کے باہر حجاب اور برقع پہنے 40 سے زیادہ طالبات کو روک دیا گیا ۔ کالج انتطامیہ نے طالبات کو کلاسیز میں داخل ہونے سے پہلے اپنے مذہبی کپڑے اتارنے کیلئے کہا ۔ کرناٹک سرکار نے ان سبھی اسکولوں اور کالجوں کو پھر سے کھول دیا ہے جو حجاب کی حمایت اور حجاب کی مخالفت کے بعد بند ہوئے تھے ۔

      بتادیں کہ کسی بھی ناخوشگوار واقعہ کو روکنے کیلئے کرناٹک کے نو اضلاع میں دفعہ 144 لاگو کی گئی ہے ۔ ہائی کورٹ کی تجویز کے مطابق طلبہ اور طالبات کسی مذہبی ڈریس کے بغیر کلاسیز میں داخل ہوسکتے ہیں ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: