உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Hijab Row: کرناٹک میں ہائی اسکول 14 فروری سے کھلیں گے، کالج میں کلاسیز بعد میں ہوں گی بحال

    Hijab Row: کرناٹک میں ہائی اسکول 14 فروری سے کھلیں گے، کالج میں کلاسیز بعد میں ہوں گی بحال (AP Photo)

    Hijab Row: کرناٹک میں ہائی اسکول 14 فروری سے کھلیں گے، کالج میں کلاسیز بعد میں ہوں گی بحال (AP Photo)

    حجاب تنازع (Hijab Row) پر ہائی کورٹ (Karnataka High Court) ک کی ہدایات کے بعد کرناٹک سرکار نے جمعرات کو 14 فروری سے دسویں جماعت تک کے طلبہ کیلئے ہائی اسکولوں اور اس کے بعد کالجوں اور ڈگری کالجوں میں کلاسیز شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : حجاب تنازع (Hijab Row)  پر ہائی کورٹ (Karnataka High Court) ک کی ہدایات کے بعد کرناٹک سرکار نے جمعرات کو 14 فروری سے دسویں جماعت تک کے طلبہ کیلئے ہائی اسکولوں اور اس کے بعد کالجوں اور ڈگری کالجوں میں کلاسیز شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ وہیں دوسری طرف کرناٹک ہائی کورٹ نے میڈیا کو ہدایت دی ہے کہ وہ حتمی فیصلہ آنے تک کسی بھی طرح کا تبصرہ نہ کریں ۔ اس معاملہ کی سماعت 14 فروری کو ہوگی ۔

      معاملہ کی سماعت کرتے ہوئے ہائی کورٹ نے ہوئے کہا کہ جب تک اس معاملہ میں عدالت کوئی فیصلہ نہیں سناتی ہے ، تب تک طلبہ حجاب پہننے کی ضد نہ کریں ۔ عدالت نے کہا کہ اگلی سماعت تک طلبہ مذہبی ڈریس نہیں پہنیں گے ۔ معاملہ کی سماعت کے دوران عرضی گزار کی جانب سے پیش سنجے ہیگڑے نے کہا کہ کرناٹک ایجوکیشن ایکٹ میں یونیفارم سے متعلق کوئی خاص بندوبست نہیں ہے ۔ معاملہ کی سماعت کرتے ہوئے کرناٹک ہائی کورٹ نے کہا کہ ہم اس معاملہ پر غور کررہے ہیں کہ کیا حجاب پہننا بنیادی حقوق کے تحت آتا ہے ۔ کرناٹک ہائی کورٹ میں اس معاملہ پر اب پیر کو سماعت ہوگی ۔

      قابل ذکر ہے کہ ہائی کورٹ کے جسٹس دیکشت کی سنگل بنچ نے بدھ کو اس معاملہ کو چیف جسٹس ریتو راج اوستھی کو بھیج دیا ۔ ساتھ ہی جج نے کہا تھا کہ چیف جسٹس اس معاملہ کو دیکھنے کے لئے ایک بڑی بینچ تشکیل دینے کا فیصلہ کر سکتے ہیں۔

      وہیں دوسری طرف حجاب کیس کے حوالے سے سپریم کورٹ میں بھی جمعرات کو سماعت ہوئی۔ اس دوران سپریم کورٹ نے کہا کہ ابھی ہم اس معاملہ میں کیوں کودیں ، ہائی کورٹ کو پہلے فیصلہ کرنے دیں۔ اس معاملہ میں وکیل کپل سبل نے سپریم کورٹ میں سماعت کیلئے عرضی داخل کی تھی۔ ان کی دلیل تھی کہ یہ معاملہ اب پورے ملک میں پھیل رہا ہے۔ امتحانات ہونے والے ہیں۔ ایسے میں اس معاملے کی سپریم کورٹ میں سماعت ہونی چاہئے ، جس پر سپریم کورٹ نے کہا کہ ابھی ہائی کورٹ کو اس معاملہ کی سماعت کرنے دیجئے ، ہم دیکھیں گے کہ ہم آگے کیا کر سکتے ہیں ۔ سپریم کورٹ نے اس معاملے میں مزید سماعت کی تاریخ دینے سے بھی انکار کر دیا ہے۔

      خیال رہے کہ ریاست کے اڈوپی ضلع کے سرکاری کالجوں میں پڑھنے والی کچھ مسلم لڑکیوں نے حجاب کے ساتھ کلاسوں میں داخلے پر پابندی کے خلاف درخواست دائر کی ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: