ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

Karnataka lockdown: کرناٹک میں 14 دن کا ’’لاک ڈاؤن‘‘ کیوں نافذ کیا گیا؟ کیا اجازت ہے اور کیا نہیں؟

وزیر اعلی بی ایس یدیورپا (B S Yediyurappa) نے کہا کہ ’’یہ وائرس ریاست بھر میں جارحانہ طور پر پھیل رہا ہے۔ یہ مہاراشٹر اور دہلی سے بھی بدتر ہے۔ آج سے 14 دن تک ریاست بھر میں جگہ جگہ سخت اقدامات کیے جائیں گے۔ صبح 6 بجے سے صبح 10 بجے کے درمیان ضروری سامان خریدنے کی اجازت ہوگی‘‘۔

  • Share this:
Karnataka lockdown: کرناٹک میں 14 دن کا ’’لاک ڈاؤن‘‘ کیوں نافذ کیا گیا؟ کیا اجازت ہے اور کیا نہیں؟
علامتی تصویر

کرناٹک حکومت نے 14 روزہ لاک ڈاؤن کا اعلان کیا ہے۔ جسے وزیر اعلی بی ایس یدیورپا (B S Yediyurappa) نے ریاست میں کووڈ۔19 کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے منگل کی رات سے شروع کریں گے۔ یدیورپا نے پیر کی سہ پہر کو کابینہ کے اجلاس کے بعد لاک ڈاؤن کا اعلان کیا۔ وزیر اعلی بی ایس یدیورپا (B S Yediyurappa) نے کہا کہ ’’یہ وائرس ریاست بھر میں جارحانہ طور پر پھیل رہا ہے۔ یہ مہاراشٹر اور دہلی سے بھی بدتر ہے۔ آج سے 14 دن تک ریاست بھر میں جگہ جگہ سخت اقدامات کیے جائیں گے۔ صبح 6 بجے سے صبح 10 بجے کے درمیان ضروری سامان خریدنے کی اجازت ہوگی“۔


انہوں نے صحافیوں کو بتایا کہ’’مینوفیکچرنگ سیکٹر اور ضروری خدمات جاری رہیں گی۔ انہوں نے واضح کیا کہ آمد و رفت کے لیے نقل و حمل کی خدمات نہیں چلیں گی ، لیکن سامان کی نقل و حرکت اور ضروری خدمات پر کوئی پابندی نہیں ہوگی‘‘۔


’’آپ کو ان پابندیوں پر عمل کرنا ہی ہوگا۔ ہم نے واضح طور پر بتایا ہے کہ ہم کون سے اقدامات کو نافذ کرنا چاہتے ہیں‘‘۔


کرناٹک نے ایک "بند" کا انتخاب کیوں کیا ہے؟

کرناٹک خاص طور پر دارالحکومت بنگلورو میں کورونا کے کیسوں میں مسلسل اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ جس سے صحت کی دیکھ بھال کے بنیادی ڈھانچے پر اثر پڑتا ہے اور مریضوں کو آکسیجن، وینٹیلیٹر اور آئی سی یو بیڈ حاصل کرنے یا اسپتال میں داخل ہونے کے لئے زیادہ انتظار کرنے پر مجبور کرنا پڑرہا ہے۔

حال ہی میں ، تکنیکی مشاورتی کمیٹی (ٹی اے سی) کے کچھ اراکین نے ایک میٹنگ کی اور حکومت کو مشورہ دیا کہ وہ ریاست میں دو ہفتوں تک لاک ڈاؤن شروع کرے۔

کیا کھلا اور کیا نہیں؟

ضروری اشیا فروخت کرنے والی دکانوں اور دیگر ضروری دکانوں کو صرف صبح 6 بجے سے صبح 10 بجے تک کھلے رہنے کی اجازت ہوگی۔

اسپتال اور فارمیسی کھلی رہیں گی۔

شراب کی دکانیں، ریستوراں اور ہوٹل کھلے رہ سکتے ہیں لیکن صرف پارسل کے لیے

زراعت اور باغبانی کا شعبہ
مینوفیکچرنگ سیکٹر
تعمیراتی شعبہ اور میڈیکل اور ضروری شعبے کام کرتے رہیں گے۔ لیکن گارمنٹس فیکٹریوں کو اجازت نہیں دی گئی ہے کیونکہ مزدور ایک دوسرے کے رابطہ میں آسکتے ہیں۔

کے ایس آر ٹی سی اور بی ایم ٹی سی سمیت ٹرانسپورٹ خدمات اس عرصے کے دوران نہیں چلیں گی، لیکن سامان کی نقل و حرکت اور ضروری خدمات پر کوئی پابندی نہیں ہے۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: Apr 27, 2021 05:41 PM IST