اپنا ضلع منتخب کریں۔

    Hijab Row: کرناٹک حکومت کا فیصلہ، امتحانات چھوڑنےوالےطلباکیلئےدوبارہ امتحانات نہیں ہوں گے!

    Youtube Video

    کئی مسلم طالبات نے تعلیمی اداروں میں کلاس رومز کے اندر حجاب پہننے پر پابندی کے درمیان امتحانات کا بائیکاٹ کیا، جس میں یونیفارم کے حصے کے طور پر سر پر اسکارف کی اجازت نہیں تھی۔ کرناٹک حکومت کے اعلان کے بعد گویا ایسے میں طالبات کے پاس اختیار ہے کہ حجاب سے متعلق مظاہروں میں شریک ہو یا امتحانات دیں۔

    • Share this:
      کرناٹک کے وزیر تعلیم بی سی ناگیش نے کہا ہے کہ حجاب پر پابندی (hijab ban) کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے پری یونیورسٹی کے طلبا جو بارہویں ویں جماعت کے امتحانات سے محروم رہے انہیں دوبارہ امتحان دینے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے کرناٹک کے پرائمری اور سیکنڈری ایجوکیشن کے وزیر بی سی ناگیش نے طلبا کو بارہویں جماعت کے امتحانات میں شرکت کا دوسرا موقع دینے کے آپشن کو مسترد کردیا ہے۔

      کئی مسلم طالبات نے تعلیمی اداروں میں کلاس رومز کے اندر حجاب پہننے پر پابندی کے درمیان امتحانات کا بائیکاٹ کیا، جس میں یونیفارم کے حصے کے طور پر سر پر اسکارف کی اجازت نہیں تھی۔ کرناٹک حکومت کے اعلان کے بعد گویا ایسے میں طالبات کے پاس اختیار ہے کہ حجاب سے متعلق مظاہروں میں شریک ہو یا امتحانات دیں۔

      وزیر نے کہا کہ غیر حاضروں کو دوبارہ امتحان کا اختیار نہیں دیا جاتا ہے اور یہ اصول اس سال بھی لاگو ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ طلبا ضمنی امتحانات میں شرکت کا انتخاب کر سکتے ہیں اور یہ کہ حکومت امتحانات سے غیر حاضر رہنے والے طلبا کے لیے کوئی رعایت نہیں کر سکتی کیونکہ وہ حجاب پر پابندی کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔ وزیر نے مزید کہا کہ اگر اب آپشن دیا جاتا ہے تو یہ ایک بری مثال قائم کر سکتا ہے اور دیگر طلبا مختلف وجوہات کی بنا پر دوبارہ امتحانات کا وقت مانگ سکتے ہیں۔

      مزید پڑھیں: Hijab Row: آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نے کیا بڑا اعلان، حجاب معاملہ پر بورڈ بھی سپریم کورٹ سے ہوگا رجوع

      بہت سے مسلم طلبا کرناٹک ہائی کورٹ (Karnataka High Court) کے اس حکم کے بعد امتحانات کا بائیکاٹ جاری رکھے ہوئے ہیں کہ حجاب اسلام کے تحت لازمی عمل نہیں ہے اور اگر حکومت اسکولوں اور کالجوں میں ڈریس کوڈ یا یونیفارم کو لازمی قرار دیتی ہے تو طلبا اعتراض نہیں کر سکتے۔

      مزید پڑھیں: Hijab Row: حجاب معاملہ پر سپریم کورٹ کا فوری سماعت سے انکار، ہولی کے بعد ہوگی سماعت

      میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے اڈوپی ضلع کے درخواست گزار جنہوں نے عدالت سے رجوع کیا تھا، کہا کہ وہ حجاب پہنے بغیر کالج نہیں جائیں گے۔ وہ اس وقت غیر حاضر تھے جب پری یونیورسٹی کی دوسری کلاسز کی تیاری کے امتحانات چل رہے تھے۔ اُڈپی کے بی جے پی ایم ایل اے رگھوپتی بھٹ نے ان سے بغیر حجاب کے کلاسز میں شرکت کی درخواست کی تھی اور یقین دلایا تھا کہ اسکول انتظامیہ ان کے لیے کھوئی ہوئی کلاسوں کی ادائیگی کا انتظام کرے گی۔ تاہم لڑکیوں نے اس پیشکش کو ٹھکرا دیا ہے۔ یہ وزیر پری یونیورسٹی کالج کے صدر بھی ہیں۔

      دریں اثنا سپریم کورٹ میں ہائی کورٹ کے حکم کے خلاف اپیل کرنے والی تین درخواستیں دائر کی گئی ہیں۔ ہائی کورٹ نے کہا کہ وہ ہولی کی تعطیلات کے بعد درخواستوں کی سماعت پر غور کرے گی۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: