اپنا ضلع منتخب کریں۔

    سرحد تنازع کو لے کر احتجاج جاری، کرناٹک نے مہاراشٹر کیلئے بس خدمات روکیں، جانئے کیا ہے پورا معاملہ

    Youtube Video

    Maharashtra-Karnataka Border Dispute: کشیدگی کے پیش نظر شمال مغربی کرناٹک سڑک ٹرانسپورٹ نگم نے بیلگاوی ضلع کی سرحد سے متصل علاقوں میں کچھ بسوں میں توڑ پھوڑ اور سیاہی پوتے جانے کی خبریں آنے کے بعد بدھ کو مہاراشٹر کیلئے اپنی خدمات روک دی ہیں ۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Karnataka | Maharashtra
    • Share this:
      بیلگاوی (کرناٹک) : مہاراشٹر اور کرناٹک کے درمیان بیلگاوی کو لے کر سرحدی تنازع تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔ مہاراشٹر جہاں بیلگاوی کے اپنے خطہ میں انضمام کا مطالبہ کررہا ہے تو وہیں کرناٹک نے اس پر اپنے حق کا اعادہ کیا ہے ۔ اس کو لے کر دونوں ریاستوں میں احتجاج کا دور بھی جاری ہے ۔ اس کشیدگی کے پیش نظر شمال مغربی کرناٹک سڑک ٹرانسپورٹ نگم نے بیلگاوی ضلع کی سرحد سے متصل علاقوں میں کچھ بسوں میں توڑ پھوڑ اور سیاہی پوتے جانے کی خبریں آنے کے بعد بدھ کو مہاراشٹر کیلئے اپنی خدمات روک دی ہیں ۔

      شمال مغربی کرناٹک سڑک ٹرانسپورٹ نگرم کے ایک افسر نے کہا کہ ہم کشیدگی کی وجہ سے اپنی بسیں صرف نپانی (بیلگاوی ضلع میں) تک چلا رہے ہیں ۔ صبح سے کشیدگی برقرار ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ مہاراشٹر سے رانے بیننور آرہی کرناٹک ریاستی سڑک ٹرانسپورٹ نگم کی بس کو بھی نقصان پہنچایا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بس کے شیشے توڑے گئے ۔

      اس درمیان کرناٹک رکشا ویدکے نے بسوں میں توڑ پھوڑ اور سیاہی پوتے جانے کے بعد سرحدی علاقہ میں احتجاج کیا ۔ تنظیم کے کارکنان نے کہا کہ اگر بسوں کو نشانہ بنایا گیا تو وہ بھی ایسا ہی جواب دیں گے ۔

      سرحدی علاقہ میں کشیدگی پھر سے شروع ہونے کے پیش نظر دونوں ریاستوں کی پولیس نے سیکورٹی کے سخت انتظامات کئے ہیں ۔ بسوں میں اضافی سیکورٹی فورسیز دستیاب کرائی گئی ہے ۔ بیلگاوی میں احتجاج مہاراشٹر کے ساتھ جاری سرحدی تنازع کے درمیان ریاست کے دو وزرا کے منگل کو مجوزہ دورے کے پیش نظر ہوا تھا ۔

      یہ بھی پڑھئے: سدھو موسے والا قتل کیس: سنگر ببو مان اور منکیرت اولکھ سے ایس آئی ٹی نے کی پوچھ گچھ


      یہ بھی پڑھئے: ان 5 وجوہات نے اے اے پی کی طرف موڑ دیا مینڈیٹ، عوام کو کیجریوال سے اس لئے پیدا ہوئی امید


      دراصل شنبھو راج دیسائی اور چندرکانت پاٹل ، مہاراشٹر حامی تنظیم کے ذریعہ منعقدہ ایک پروگرام میں حصہ لینے کیلئے منگل کو شہر کا دورہ کرنے کا منصوبہ بنا رہے تھے ۔ دونوں وزرا کو مہاراشٹر کے وزیر اعلی ایکناتھ شندے نے بیلگاوی سے متعلق سرحدی تانزع کی پیروی کررہی قانونی ٹیم کے ساتھ کوآرڈینیشن کیلئے مقرر کیا گیا ہے ۔

      کنڑ حامی مظاہرین کے احتجاج کی وجہ سے دونوں وزرا نے اپنا دورہ ملتوی کردیا ۔ مہاراشٹر اس بنیاد پر بیلگاوی کے انضمام کی مانگ کررہا ہے کہ ضلع میں مراٹھی بولنے والوں کی کافی تعداد ہے ۔ حالانکہ کرناٹک سرکار مہاراشٹر کے ان دعووں کو خارج کررہی ہے ۔ پڑوسی ریاست نے ہائی کورٹ کا بھی رخ کیا ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: