کشمیری طالبہ نے کہا : 55 دنوں سے گھر نہیں کیا فون ، وزیر اعلی یوگی نے کہا : ہم کرائیں گے بات چیت

اتر پردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے ہفتہ کو علی گڑھ سمیت پوری ریاست سے آئے جموں و کشمیر کے طلبہ کے گروپ سے ملاقات کی ۔

Sep 28, 2019 06:39 PM IST | Updated on: Sep 28, 2019 06:39 PM IST
کشمیری طالبہ نے کہا : 55 دنوں سے گھر نہیں کیا فون ، وزیر اعلی یوگی نے کہا : ہم کرائیں گے بات چیت

کشمیری طالبہ نے کہا : 55 دنوں سے گھر نہیں کیا فون ، سی ایم یوگی نے کہا : ہم کرائیں گے بات

اتر پردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے ہفتہ کو علی گڑھ سمیت پوری ریاست سے آئے جموں و کشمیر کے طلبہ کے گروپ سے ملاقات کی ۔ وزیر اعلی کی رہائش گاہ پر ہوئی اس ملاقات کے بعد کشمیر طلبہ کافی خوش نظر آئے ۔ زیادہ تر طلبہ نے کہا کہ وزیر اعلی سے ملاقات کرکے انہیں نزدیک سے ملنے کا موقع ملا ۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ جو بھی پریشانیاں ہیں ، وہ حل کرنے میں وزیر اعلی یوگی پوری مدد کریں گے ۔

انہیں میں سے ایک طالبہ اقرا نے بتایا کہ گزشتہ 55 دنوں سے اس کی اپنے گھر کشمیر میں بات چیت نہیں ہوسکی ہے ، جس پر وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے کہا کہ سبھی طلبہ کے اہل خانہ سے بات چیت کا بندوبست کیا جائے گا ۔ یہی نہیں جلد ہی بات چیت کا یہ سلسلہ معمول پر آجائے گا ۔

Loading...

علاوہ ازیں وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے یقین دلایا کہ وہ ریاست میں جلد ہی ایسا سسٹم لانے والے ہیں ، جس سے یہاں رہنے والا ہر کشمیری طالب علم ایک دوسرے کے رابطہ میں رہ سکے گا ۔ اس دوران تقریبا 70 کشمیر طلبہ و طالبات کے لکھنو گھومنے کا بھی محکمہ سیاحت کی طرف سے انتظام کیا گیا تھا ۔

طلبہ کے ساتھ میٹنگ کے دوران وزیر اعلی یوگی نے کہا کہ ہماری ریاست بھلے ہی الگ ہے ، یہاں کی تہذیب و ثقافت الگ ہے ، لیکن آخر کار آپ سبھی ہمارے بچے ہیں ، مجھے خوشی ہے کہ آج جموں و کشمیر کے طلبہ کے ساتھ بات چیت شروع کررہا ہوں ۔ وزیر اعلی نے کہا کہ آپ سبھی اپنے مسائل کسی ہچکچاہٹ کے بغیر میرے سامنے پیش کرسکتے ہیں ، ہوسکتا ہے کہ آپ کی کچھ پریشانیاں ہوں ، لیکن آپ بلا جھجھک مجھے بتائیں ۔

وزیر اعلی نے کہا کہ کئی پریشانیاں صرف اسی وقت شروع ہوتی ہیں ، جب کوئی بات چیت نہیں ہوتی ہے ۔ گفتگو کے فقدان کی وجہ سے سنگین پریشانیاں جنم لے لیتی ہیں ۔ بات چیت سے کئی معاملات حل کئے جاسکتے ہیں اور چیزیں بہتر ہوتی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ہوسکتا ہے کہ آپ کے کئی مسائل ہوں ، جن پر ہم مرکزی حکومت کی توجہ مبذول کرواسکیں اور انہیں حل کرسکیں ۔ کچھ ایسی بھی پریشانیاں ہوسکتی ہیں ، جس کے بارے میں جموں و کشمیر انتظامیہ سے بات چیت کرکے اس کا حل نکالا جاسکتا ہو ۔

Loading...