உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

     اتراکھنڈ کی دلت ماں سنیتا دیوی کو نوکری سے کیا گیا بے دخل، کیجریوال حکومت نے نوکری دینے کا اعلان کیا

    اتراکھنڈ حکومت نے کھانا پکانے والی دلت ماں کو نوکری سے نکال دیا ہے۔ اب کیجریوال حکومت نے کھانا پکانے والی ماں کو نوکری دینے کا اعلان کیا ہے۔ دہلی حکومت کے کابینہ وزیر اور عام آدمی پارٹی کے سینئر لیڈر راجیندر پال گوتم نے آج ایک پریس کانفرنس کے ذریعے اتراکھنڈ کے سرکاری اسکول میں اچھوت کے معاملے پر بی جے پی کے وزیر اعلی پشکر سنگھ دھامی کی حکومت کو گھیرا ہے۔

    اتراکھنڈ حکومت نے کھانا پکانے والی دلت ماں کو نوکری سے نکال دیا ہے۔ اب کیجریوال حکومت نے کھانا پکانے والی ماں کو نوکری دینے کا اعلان کیا ہے۔ دہلی حکومت کے کابینہ وزیر اور عام آدمی پارٹی کے سینئر لیڈر راجیندر پال گوتم نے آج ایک پریس کانفرنس کے ذریعے اتراکھنڈ کے سرکاری اسکول میں اچھوت کے معاملے پر بی جے پی کے وزیر اعلی پشکر سنگھ دھامی کی حکومت کو گھیرا ہے۔

    اتراکھنڈ حکومت نے کھانا پکانے والی دلت ماں کو نوکری سے نکال دیا ہے۔ اب کیجریوال حکومت نے کھانا پکانے والی ماں کو نوکری دینے کا اعلان کیا ہے۔ دہلی حکومت کے کابینہ وزیر اور عام آدمی پارٹی کے سینئر لیڈر راجیندر پال گوتم نے آج ایک پریس کانفرنس کے ذریعے اتراکھنڈ کے سرکاری اسکول میں اچھوت کے معاملے پر بی جے پی کے وزیر اعلی پشکر سنگھ دھامی کی حکومت کو گھیرا ہے۔

    • Share this:
    دہرہ دون: اتراکھنڈ حکومت نے کھانا پکانے والی دلت ماں کو نوکری سے نکال دیا ہے۔ اب کیجریوال حکومت نے کھانا پکانے والی ماں کو نوکری دینے کا اعلان کیا ہے۔ دہلی حکومت کے کابینہ وزیر اور عام آدمی پارٹی کے سینئر لیڈر راجیندر پال گوتم نے آج ایک پریس کانفرنس کے ذریعے اتراکھنڈ کے سرکاری اسکول میں اچھوت کے معاملے پر بی جے پی کے وزیر اعلی پشکر سنگھ دھامی کی حکومت کو گھیرا ہے۔ حال ہی میں یہ خبر آئی تھی کہ اتراکھنڈ کے چمپاوت کے ایک سرکاری اسکول میں اونچی ذات کے طلباء نے دلت بھوجن ماتا کے ذریعہ تیار کردہ مڈ ڈے میل کھانے سے انکار کردیا۔ اس کے فوراً بعد اسکول کی انتظامی کمیٹی نے کھانا پکانے والی دلت ماں سنیتا دیوی جی کو کام سے نکال دیا۔ ان کی برطرفی کی وجہ یہ بتائی گئی کہ ان کی تقرری غلط کی گئی تھی۔

    راجیندر پال گوتم نے کہا کہ اسکول کے حکام نے بچوں کو سمجھانے کے بجائے دلت خاتون کو نوکری سے نکال دیا۔ نفرت پھیلانے والوں کی حوصلہ افزائی نہ کی جائے۔ سنیتا کو نوکری سے ہٹانے کا مطلب ذات پرستی کو فروغ دینا تھا۔والدین کا کہنا تھا کہ اسکول میں عام زمرے کے طلبہ کی اکثریت ہے۔  اس لیے بھوجن ماتا کی تقرری بھی اسی طبقے سے ہونی چاہیے۔ والدین چاہتے ہیں کہ کسی جنرل کیٹیگری کی خاتون کو فوڈ مدر مقرر کیا جائے۔

     راجیندر پال گوتم نے کہا کہ اسکول کے حکام نے بچوں کو سمجھانے کے بجائے دلت خاتون کو نوکری سے نکال دیا۔

    راجیندر پال گوتم نے کہا کہ اسکول کے حکام نے بچوں کو سمجھانے کے بجائے دلت خاتون کو نوکری سے نکال دیا۔


    کیجریوال حکومت میں راجیندر پال گوتم نے کہا کہ میں بتانا چاہتا ہوں کہ اس ملک میں برتنوں، عمارتوں، سڑکوں، جوتوں، کپڑوں سے لے کر مندروں کے اندر بھگوان کی مورتی بنانے تک کا کام صرف پسماندہ ذات والے ہی کرتے ہیں۔ تو اگر ایسی سوچ رکھنے والے لوگ کسی دلت عورت کا پکا ہوا کھانا کھانے سے انکار کر دیں تو کیا وہ اپنے کپڑے، جوتے یا گھر میں رہنا بھی چھوڑ دیں گے؟ ایسا ملک ترقی نہیں کر سکتا۔

    اس کے ساتھ ہی راجیندر پال گوتم نے اتراکھنڈ حکومت پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ اتراکھنڈ کے وزیر اعلیٰ پشکر سنگھ دھامی لوگوں کو انصاف فراہم کرنے کے قابل نہیں ہیں۔ بی جے پی صرف مذہب اور ذات پات کی سیاست کرتی ہے، سماج کو تقسیم کرنے کی سیاست کرتی ہے۔ اسی وقت وزیر راجیندر پال گوتم نے اعلان کیا کہ دہلی حکومت سنیتا جی کو بھوجن ماتا کے طور پر مقرر کرے گی۔ دہلی کی خواتین اور بچوں کی ترقی کی وزیر ہونے کے ناطے میں سنیتا کو دہلی آنے کی دعوت دیتا ہوں اور دہلی حکومت انہیں کھانا پکانے کا کام دے گی۔
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: