உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کسان آندولن ختم ہونے کے بعد بھی کیوں نہیں کھولا جارہا دلی-میرٹھ ایکسپریس وے؟ راکیش ٹکیت ہیں وجہ۔۔۔

     ٹکیت نے پہلے اعلان کیا تھا کہ وہ 14 دسمبر کو یوپی گیٹ پر واپس آئیں گے اور اگلے دن باقی سبھی کسانوں کے ساتھ اپنے گاؤں کے لئے روانہ ہوجائیں گے۔ وہ کسان آندولن کو حمایت دینے والے تمام لوگوں کو ’شکریہ‘ ادا کرنے کے لئے فی الحال پنجاب اور ہریانہ کے دورے پر ہیں۔

    ٹکیت نے پہلے اعلان کیا تھا کہ وہ 14 دسمبر کو یوپی گیٹ پر واپس آئیں گے اور اگلے دن باقی سبھی کسانوں کے ساتھ اپنے گاؤں کے لئے روانہ ہوجائیں گے۔ وہ کسان آندولن کو حمایت دینے والے تمام لوگوں کو ’شکریہ‘ ادا کرنے کے لئے فی الحال پنجاب اور ہریانہ کے دورے پر ہیں۔

    ٹکیت نے پہلے اعلان کیا تھا کہ وہ 14 دسمبر کو یوپی گیٹ پر واپس آئیں گے اور اگلے دن باقی سبھی کسانوں کے ساتھ اپنے گاؤں کے لئے روانہ ہوجائیں گے۔ وہ کسان آندولن کو حمایت دینے والے تمام لوگوں کو ’شکریہ‘ ادا کرنے کے لئے فی الحال پنجاب اور ہریانہ کے دورے پر ہیں۔

    • Share this:
      غازی آباد: تین نئے زرعی قوانین (Farm Laws) کی واپسی کے ساتھ ہی پچھلے دیڑھ سال سے جاری کسان آندولن (Farmers Protest) اب ختم ہوچکا ہے۔ اس آندولن میں شامل تقریباً سبھی کسان اب اپنے گھر لوٹ چکے ہیں۔ حالانکہ اس کے باوجود دلی-میرٹھ ایکسپریس وے (Delhi-Meerut Expressway) اب تک پوری طرح نہیں کھل پایا ہے۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق، اس کی ایک وجہ بھارتیہ کسان یونین کے لیڈر راکیش ٹکیت(Rakesh Tikait) ہیں۔

      ٹائمس آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق، انڈین نیشنل ہائی وے اتھارٹی (NHAI) نے کہا ہے کہ وہ دلی پولیس کی جانب سے غازی پور سرحد پر بیریکیڈس ہٹانے کے بعد دلی۔میرٹھ ایکسپریس وے (DME) کے ایک حصے کو کھولنے کے لئے تیار ہیں۔ حالانکہ، پولیس نے واضح کیا ہے کہ جب سارے کسان ایکسپریس وے کو خالی کردیں گے تبھی وہ ان بیریکیڈس کو ہٹائیں گے۔

      دراصل یوپی گیٹ پر مظاہرہ کررہے زیادہ کسان تو گھر لوٹ چکے ہیں، لیکن اُن میں سے کچھ اب بھی این ایچ۔9 پر ڈی ایم ای فلائی اوور کے نیچے خیمے لگائے ہوئے ہیں۔ اُن کا کہنا ہے کہ وہ 15 دسمبر کو راکیت ٹکیت کے ساتھ ہی اس ہائی وے کو خالی کریں گے۔

      پنجاب۔ہریانہ کے دورے پر ہیں راکیش ٹکیت
      پچھلے ایک سال سے اس آندولن کی قیادت کررہے ٹکیت نے پہلے اعلان کیا تھا کہ وہ 14 دسمبر کو یوپی گیٹ پر واپس آئیں گے اور اگلے دن باقی سبھی کسانوں کے ساتھ اپنے گاؤں کے لئے روانہ ہوجائیں گے۔ وہ کسان آندولن کو حمایت دینے والے تمام لوگوں کو ’شکریہ‘ ادا کرنے کے لئے فی الحال پنجاب اور ہریانہ کے دورے پر ہیں۔

      کسان آندولن سے ایکسپریس وے کو نہیں ہوا زیادہ نقصان
      دلی۔میرٹھ ایکسپریس وے یعنی این ایچ۔9 پر واقع یوپی گیٹ کے پاس مرکزی اسٹیج اور زیادہ خیمے ہٹائے جانے کے بعد این ایچ اے آئی کی ایک ٹیم نے ہائی وے کے اس حصے کا معائنہ کیا اور پتہ لگایا کہ روڈ کو زیادہ نقصان نہیں ہوا ہے۔ این ایچ اے آئی کے ملازمین نے ارتھ موورس کی مدد سے وہاں جمع ہوئے کنکریٹ کے ملبے کو بھی صاف کردیا ہے۔

      حالانکہ این ایچ اے آئی ابھی ڈی ایم ای فلائی اوور کے نیچے کے حصے کی جانچ نہیں کرپائی ہے، کیونکہ وہاں کچھ ٹینٹس اب بھی موجود ہیں۔ اخبار کے مطابق، این ایچ اے آئی کے ایک سینئر عہدیدار رویندر کمار نے کہا، ’ایکسپریس وے کے بالکل درمیان میں قائم خیمہ اتوار شام تک ہٹادیا گیا تھا۔ حقیقت میں، زیادہ تر خیمے ہٹائے جاچکے ہیں۔ اس سے ہم پیر کو ایکسپریس وے کا معائنہ کرپائے۔ ہم نے پایا ہے کہ ڈی ایم ای کے اُس حصے کو زیادہ نقصان نہیں ہوا، جہاں خیمے لگائے گئے تھے۔ دلی پولیس کی جانب سے بیریکیڈس ہٹانے کے اگلے دن ہم اسے ٹریفک کے لئے کھول سکتے ہیں۔‘


      قومی، بین الاقوامی اور جموں وکشمیر کی تازہ ترین خبروں کےعلاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں ۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: