உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    تکونیا تشدد: ایس آئی ٹی نے 5000 صفحات کی چارج شیٹ داخل کی، مرکزی وزیر کے بیٹے آشیش کو بنایا اہم ملزم

    یوپی کے لکھیم پور کھیری (Lakhimpur Kheri) ضلع میں  تین اکتوبر کو ہوئے تکونیا تشدد سانحہ (Tikunia Violence) معاملے میں پیر کو ایس آئی ٹی (SIT) نے سی جے ایم کورٹ میں چارج شیٹ دائر کی ہے۔ ایس آئی ٹی نے 5000 صفحات میں مرکزی وزیر مملکت اجے مشرا کے بیٹے آشیش مشرا کو اہم ملزم بتایا ہے۔

    یوپی کے لکھیم پور کھیری (Lakhimpur Kheri) ضلع میں تین اکتوبر کو ہوئے تکونیا تشدد سانحہ (Tikunia Violence) معاملے میں پیر کو ایس آئی ٹی (SIT) نے سی جے ایم کورٹ میں چارج شیٹ دائر کی ہے۔ ایس آئی ٹی نے 5000 صفحات میں مرکزی وزیر مملکت اجے مشرا کے بیٹے آشیش مشرا کو اہم ملزم بتایا ہے۔

    یوپی کے لکھیم پور کھیری (Lakhimpur Kheri) ضلع میں تین اکتوبر کو ہوئے تکونیا تشدد سانحہ (Tikunia Violence) معاملے میں پیر کو ایس آئی ٹی (SIT) نے سی جے ایم کورٹ میں چارج شیٹ دائر کی ہے۔ ایس آئی ٹی نے 5000 صفحات میں مرکزی وزیر مملکت اجے مشرا کے بیٹے آشیش مشرا کو اہم ملزم بتایا ہے۔

    • Share this:
      لکھیم پور کھیری: یوپی کے لکھیم پور کھیری (Lakhimpur Kheri) ضلع میں  تین اکتوبر کو ہوئے تکونیا تشدد سانحہ (Tikunia Violence) معاملے میں پیر کو ایس آئی ٹی (SIT) نے سی جے ایم کورٹ میں چارج شیٹ دائر کی ہے۔ ایس آئی ٹی نے 5000 صفحات میں مرکزی وزیر مملکت اجے مشرا کے بیٹے آشیش مشرا کو اہم ملزم بتایا ہے۔ جانچ کے دوران ایس آئی ٹی نے مرکزی وزیر کے قریبی ویریندر شکلا کا نام چارج شیٹ میں بڑھایا ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ ویریندر شکلا پر دفعہ 201 لگائی گئی ہے۔ پولیس کے مطابق، ویریندر شکلا پر ثبوت چھپانے کے الزام لگے ہیں۔ یہ جانکاری استغاثہ فریق کے وکیل ایس پی یادو نے دی۔ لکھیم پور کھیری تشدد معاملے میں پہلے 13 افراد ملزم بنائے گئے تھے، جو بڑھ کر 14 ہوگئے ہیں۔

      واضح رہے کہ تکونیا سانحہ میں مرکزی وزیر مملکت اجے مشرا کا بیٹا آشیش مشرا مونو سمیت 13 ملزم ضلع جیل میں بند ہے۔ آشیش مشرا کی گرفتاری بھلے ہی 10 اکتوبر کو ہوئی تھی، مگر اس سے پہلے سات اکتوبر کو آشیش مشرا کے قریبی لوکش اور آشیش پانڈے کو گرفتار کرلیا گیا تھا۔ دونوں کو آٹھ اکتوبر کو عدالتی تحویل میں جیل بھیجا گیا تھا۔ ملک کی سیاست کی سمت اور رفتار کو متاثر کرنے والے تکونیا سانحہ کے حادثہ میں مرکزی وزیر کا بیٹا ملزم ہے۔

      واضح رہے کہ تین اکتوبر کو ہوئے اس حادثہ میں چار کسانوں اور ایک مقامی صحافی سمیت آٹھ افراد کا قتل کیا گیا تھا۔ آشیش مشرا اور اس کے ساتھیوں پر الزام ہے کہ وہ فائرنگ کرتے ہوئے کسانوں کو اپنی گاڑی سے روندتے ہوئے نکل گیا۔ اس میں چار کی موت اور کئی شدید طور پر زخمی ہوگئے۔ اس کے بعد چار اکتوبر کو تکونیا تھانے میں آشیش مشرا سمیت کئی دیگر کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی تھی۔ حالانکہ بعد میں ایس آئی ٹی کی جانچ میں اس بات کا انکشاف ہوا کہ یہ ایک حادثہ نہیں بلکہ سوچی سمجھی سازش کے تحت قتل ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: