உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    طالبان ، القاعدہ اور دہشت گرد گروپ LeT, JeM کے درمیان تعلقات باعث تشویش، UNSCمیں ہندوستان کا بیان

    طالبان ، القاعدہ اور دہشت گرد گروپ LeT, JeM کے درمیان تعلقات باعث تشویش، UNSCمیں ہندوستان کا بیان

    طالبان ، القاعدہ اور دہشت گرد گروپ LeT, JeM کے درمیان تعلقات باعث تشویش، UNSCمیں ہندوستان کا بیان

    اقوام متحدہ سیکورٹی کونسل کی دہشت گردی مخالف کمیٹی کے صدر سفارت کار ٹی ایس ترو مورتی نے طالبان ، القاعدہ اور پاکستان میں موجود دہشت گرد گروپوں جیسے لشکر طیبہ اور جیش محمد کے درمیان تعلقات پر تشویش کا اظہار کیا ۔

    • Share this:
      نئی دہلی : افغانستان میں طالبان کا قبضہ ہونے کے بعد دنیا بھر میں یہاں دہشت گرد گروپ پنپنے کو لے کر تشویش پائی جارہی ہے ۔ اس درمیان پیر کو اقوام متحدہ سیکورٹی کونسل کی دہشت گردی مخالف کمیٹی کے صدر سفارت کار ٹی ایس ترو مورتی نے طالبان ، القاعدہ اور پاکستان میں موجود دہشت گرد گروپوں جیسے لشکر طیبہ اور جیش محمد کے درمیان تعلقات پر تشویش کا اظہار کیا ۔ ٹی ایس ترو مورتی نے کہا کہ سیکورٹی کونسل کی جانب ممنوعہ طالبان ، القاعدہ اور دہشت گرد اداروں کے درمیان کے تعلقات جیسے لشکر طیبہ اور جیش محمد تشویش کا ایک ذریعہ ہیں اور اس لئے سنگین تشویش پائی جارہی ہے کہ افغانستان القاعدہ اور علاقہ کے کئی دہشت گرد گروپوں کیلئے ایک محفوظ پناہ گاہ بن سکتا ہے ۔

      انہوں نے کہا کہ افغانستان میں طالبان کے اقتدار میں آنے سے خطہ کے باہر خاص طور پر افریقہ کے کچھ حصوں میں ایک پیچیدہ سیکورٹی خطرہ پیدا ہوگیا ہے ، جہاں دہشت گرد گروپ طالبان کی مثال کا استعمال کرنے کی کوشش کرسکتے ہیں ۔ ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ انفارمیشن کا غلط استعمال اور کمیونیکیشن ٹیکنالوجی دہشت گردانہ اہداف کے لئے بڑھ رہے ہیں ، جس میں آرٹیفیشیل انٹلی جنس ، روبوٹکس ، ڈیپ فیک اور بلاک چین جیسی نئی ٹکنالوجی شامل ہیں ۔

      خیال رہے کہ حال ہی میں ہندوستان نے پڑوسی ملک پاکستان کا بالواسطہ تذکرہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ دہشت گرد تنظیموں نے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر دی جانے والی چھوٹ کا پورا فائدہ اٹھا کر اقوام متحدہ سیکورٹی کونسل کے پابندی کے نظام کا مذاق بنایا ہے اور پڑوس میں ممنوعہ دہشت گرد تنظیموں نے پابندیوں سے خود کو بچانے کیلئے انسانی حقوق کی تنظیموں کے طور پر خود کو پیش کیا ہے ۔

      ٹی ایس ترو مورتی نے کہا تھا کہ یہ ضروری ہے کہ پابندیاں جائز انسانی ضروریات میں رکاوٹ نہ بنیں۔ تاہم یہ بھی ضروری ہے کہ انسانی ہمدردی کی بنیاد پر چھوٹ مہیا کراتے وقت خاص طور پر دہشت گردوں کو پناہ گاہ مہیا کرانے والے مقامات کے حوالے سے پوری احتیاط برتی جائے۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: